کٹھوعہ سانحہ:  عدالتی  فیصلے کا عمرعبداللہ، محبوبہ نے کیا خیر مقدم 

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 10th June 2019, 10:26 PM | ملکی خبریں |

سرینگر10جون (ایس او نیوز/آئی این ایس انڈیا) جموں و کشمیر کے سابق وزرائے اعلی عمر عبداللہ اور محبوبہ مفتی نے کٹھوعہ سانحہ کے ضمن میں آئے عدالتی فیصلہ کا پیر کو خیر مقدم کیا۔ عبداللہ نے ٹویٹ کیا کہ شکریہ! مجرم قانون کے تحت سب سے سخت سزا کے مستحق ہیں۔ اور ان سیاسی رہنماؤں جنہوں نے ملزمان کا دفاع کیا،  متاثرہ کی توہین کی اور قانونی نظام کو خطرہ پہنچایا، ان کے لیے مذمت کے لفظ کافی نہیں ہے۔ محبوبہ مفتی نے ٹوئٹ کیا کہ فیصلے کا خیر مقدم کرتی ہوں۔ گھناؤنے جرائم پر سیاست بند کرنے کا وقت آ گیا ہے، جہاں آٹھ سالہ بچی کو منشیات دے کر اس کے ساتھ بار بار عصمت دری کی گئی ور پھر اسے موت کے گھاٹ اتار دیا گیا، یقینا ہم عدلیہ سے اسی طرح کے انصاف کے منتظر تھے۔ ہمیں امید ہے کہ عدالتی نظام میں خامیوں کا فائدہ نہیں اٹھایا جائے گا اور قصورواروں کو سخت سزا ملے گی۔لیڈر بنے شاہ فیصل نے بھی فیصلے کا خیر مقدم کرتے ہوئے جموں و کشمیر پولیس کی جانب سے کی گئی کارروائی کی تعریف کی۔ غور طلب ہے کہ جموں و کشمیر کے کٹھوعہ ضلع کے رسانا علاقے میں خانہ بدوش برادری کی آٹھ سال کی ایک بچی کی عصمت دری کے بعد قتل کر دیا گیا تھا۔ پٹھان کوٹ عدالت نے آج کیس کے سات ملزمان میں سے چھ کو مورد الزام ٹھہرایا اور ایک کو بری کر دیا۔

ایک نظر اس پر بھی

ایڈی یورپا کو پارٹی ہائی کمان کی تنبیہ۔ وزارتی قلمدان تقسیم کرو یا پھر اسمبلی تحلیل کرو

عتبر ذرائع سے ملنے والی خبر کے مطابق بی جے پی ہائی کمان نے وزیراعلیٰ کرناٹکا ایڈی یورپا کو تنبیہ کرتے ہوئے کہا ہے کہ وزارتی قملدانوں سے متعلق الجھن اور وزارت سے محروم اراکین اسمبلی کے خلفشار کو جلد سے جلد دور کرلیں ورنہ پھر اسمبلی کو تحلیل کرتے ہوئے از سرِ نو انتخابات کا سامنا ...

چار فرضی صحافیوں کو پولیس نے کیا گرفتار

گوتم بدھ نگر ضلع تھانہ بیٹا کے پولیس نے چار افراد کو گرفتار کیا جن پر الزام ہے کہ وہ صحافی ہونے کا دعوی کرکے غیر قانونی وصولی کرتے تھے اور اپنے مفاد کے لئے انتظامی حکام پر دباؤ بناتے تھے۔