ضلع شمالی کینرا میں بڑھ رہی ہے گردے کی بیماری میں مبتلا مریضوں کی تعداد

Source: S.O. News Service | Published on 11th September 2019, 12:41 PM | ساحلی خبریں | اسپیشل رپورٹس |

کاروار 11/ستمبر(ایس او نیوز) ایک عرصے سے ضلع شمالی کینرا میں ایچ آئی وی اور کینسر کے مریضوں کی تعداد بہت زیادہ ہوا کرتی تھی۔ لیکن آج کل گردے کے امراض اور اس سے گردے فیل ہوجانے کے واقعات میں بڑی تیز رفتاری سے اضافہ ہورہا ہے۔اس مرض کی سنگینی کا اندازہ اس بات سے لگایا جاسکتا ہے کہ اس وقت گردوں کی ناکامی کی وجہ سے ضلع کے مختلف اسپتالوں میں روزانہ تقریباً220افراد ڈایالیسس کروارہے ہیں۔

  کم عمر بچے اور نوجوان بھی:    اس سے قبل وبائی امراض کی وجہ سے لوگوں کی ہلاکتوں کی شرح کافی زیادہ تھی۔ لیکن اب ایسا محسوس ہورہا ہے کہ گردے کی بیماری نے دیگر بیماریوں کو پیچھے چھوڑ دیا ہے۔تشویشناک بات یہ بھی ہے کہ گردے ناکام ہوجانے کے معاملات چھوٹے اور کم عمر بچوں میں بھی بڑھتے جارہے ہیں۔20سے30سال کے نوجوان بھی بڑی تعداد میں گردے ناکام ہوکر اسپتالوں میں آرہے ہیں۔گزشتہ چند مہینوں میں ہی ضلع میں پانچ چھ نوجوان گردے ناکام ہونے کی وجہ سے موت کا شکار ہوگئے ہیں۔

روزانہ 150سے زیادہ مریض:    بعض ذرائع سے ملنے والے اعداد و شمار کے مطابق صرف سرکاری اسپتالوں میں روزانہ 150سے زائدمریض ڈایالیسس کے لئے آتے ہیں۔ ذرا متوسط اور مالی حیثیت سے مستحکم افراد ضلع میں موجود اور ضلع سے باہر والے پرائیویٹ اسپتالوں میں ڈایالیسس کرواتے ہیں۔ اس طرح اب گردے کے امراض اور گردے ناکام ہونے کا مرض ایک ہلاکت خیز صورت اختیار کرگیا ہے۔

 ضلع ہیلتھ آفیسر ڈاکٹر اشوک کمار جی این نے بتایاکہ ضلع شمالی کینرا کے ہر تعلقہ اسپتال میں 3ڈایالیسس یونٹس موجود ہیں۔ ان تعلقہ اسپتالوں میں  روزانہ 120مریض ڈایالیسس کی سہولت سے استفادہ کررہے ہیں۔کمٹہ تعلقہ میں گردہ ناکام ہونے کے مریضوں کی تعداد زیادہ پائی گئی ہے۔ اس لئے وہاں کے تعلقہ اسپتال میں اضافی ڈایالیسس یونٹ کا مطالبہ حکومت سے کیا گیا ہے۔انہوں نے اس بات کی بھی تصدیق کی ہے کہ آج کل ضلع میں گردے ناکام ہونے والے مریضوں کی تعداد میں اضافہ ہوگیا ہے۔

مرض بڑھنے کے اسباب:    طبی سطح پر تحقیقاتی مطالعہ اس بات کی طرف اشارہ کرتا ہے کہ جدید دور کے تقاضے، ذہنی اور سماجی دباؤ، گھریلو تناؤ، بدلتا ہواطرز زندگی، کھانے پینے کے طور طریقے، غذامیں ملاوٹ، فاسٹ فوڈ میں اجین موٹو اور کیمیکل کا استعما ل، نوجوانوں میں بڑھتی شراب نوشی اورگٹکا دوسرے اقسام کی نشہ بازی،دیگر بیماریوں کے علاج میں غیر ضروری طورپر ہائی ڈوز والی دواؤں کا استعمال، ذیابیطس کی بیماری وغیرہ سے گردے صحیح طور پر کام نہ کرنے اور پھر دیکھتے ہی دیکھتے بڑی تعداد میں گردے پوری طرح فیل ہوجانے کے معاملات پیش آرہے ہیں۔اور ایک بار ڈایالیسس شروع ہونے کے بعد مریض بہت دنوں تک زندہ رہنے کی توقعات بالکل کم ہوتی جارہی ہیں۔

ایک نظر اس پر بھی

بھٹکل کے قریب منکی ریلوے پٹری پر پائی گئی نامعلوم شخص کی ٹکڑوں میں بکھری ہوئی نعش؛ تیز رفتار ٹرین کی زد میں آکر ہلاک ہونے کا شبہ

پڑوسی تعلقہ ہوناور کے منکی  پولس اسٹیشن کے عقب میں واقع ریلوے پٹری پر ایک نامعلوم شخص کی  تکڑوں میں بکھری ہوئی نعش پائی گئی ہے جس کے تعلق سے پولس کو  شبہ ہے کہ  رات کے کسی پہر میں   یہ شخص غالباً  ریلوے پٹری کراس کررہا ہوگا جس  کے دوران تیز رفتار ٹرین کی زد میں آکر ہلاک ہوگیا ...

سولیا: پہاڑی مہم جو ٹیم کا ایک رکن ہوگیا لاپتہ۔قریبی جنگلات میں جاری ہے تلاشی مہم 

بنگلورو کی ایک کمپنی کے ملازمین کی ٹیم سبرامنیا میں واقع پہاڑی ’کمارا پروتا‘ کو سر کرنے کی مہم پر نکلی تھی۔ لیکن واپسی کے وقت ٹیم کا ایک رکن جنگلات میں اچانک لاپتہ ہوگیا ہے، جس کی شناخت سنتوش (25سال) کے طور پر کی گئی ہے۔

منڈگوڈ میں بیک وقت کئی گھروں میں چوری کی وارداتیں۔ لاکھوں روپے نقد اور زیورات چور اڑالے گئے

منڈگوڈ کے چیگلّی گرام میں ایک ہی رات میں کئی گھروں میں چوری کی وارداتیں دئے جانے کی اطلاع موصول ہوئی ہے۔ بتایا جاتا ہے کہ گزشتہ رات تین بجے کے قریب گاؤں کی مختلف گلیوں میں واقع6 گھروں کے اندر چوروں نے گھسنے اور لوٹ مچانے کی کوشش کی جس میں سے دو گھروں میں انہیں کامیابی ملی اور وہ ...

کاروار: پرائیویٹ اسکولوں میں بھی اسکاؤٹس اینڈ گائڈس کی شاخیں لازماً قائم ہوں: ڈاکٹر ہریش کمار

موجودہ حالات میں بچوں کے درمیان انسانی اقدار کی پرورش کرنا بہت ضروری ہے۔ اس سلسلےمیں پرائیویٹ اسکولوں میں بھی لازماً اسکاؤٹس اینڈ گائڈس کی شاخ کا قیام عمل میں لاکر مختلف سرگرمیوں کو انجام دینے کی اترکنڑا ڈپٹی کمشنر ڈاکٹر ہریش کمار نے ہدایات جاری کیں۔

کاروار میں ’سوچھ رتھ ‘موبائیل سواری کا اجراء: ضلع کو پاکیزہ بنانا ہم سب کی ذمہ داری ہے: جئے شری موگیر

اترکنڑا ضلع کو ’پاکیزہ ضلع‘ کی حیثیت سے ترقی دینا ہم سب کی ذمہ داری ہے۔ ضلع کو ریاست کا پہلا گندگی سے پاک ضلع بنانے کے لئے ہم سب کو کام کرنا ہے۔ اترکنڑا ضلع پنچایت کی صدر جئے شری موگیر نے ان خیالات کا اظہار کیا۔

ملکی معیشت  کے برے اثرات سے ہر شعبہ کنگال؛ بھٹکل میں بھی سونا اور رئیل اسٹیٹ زوال پذیر؛ کیا کہتے ہیں جانکار ؟

ملک میں نوٹ بندی  اور جی ایس ٹی کی وجہ سے ملکی معیشت پر سنگین اثرات مرتب ہونےکے متعلق ماہرین نے بہت پہلے سے چوکنا کردیا  تھا۔ اب اس کے نتائج بھی  ظاہر ہونے لگے ہیں۔ رواں سال کے دوچار مہینوں سے جو خبریں آرہی ہیں، اُس سے اندازہ لگایا جاسکتا ہے کہ ہمارے  ملک میں روزگاروں کا بےروز ...

بارش کے بعد بھٹکل کی قومی شاہراہ : گڑھوں کا دربار، سواریوں کے لئے پریشانی؛ گڑھوں سے بچنے کی کوشش میں حادثات کے خدشات

لوگ فورلین قومی شاہراہ  کی تعمیر کو لے کر  خوشی میں جھوم رہے ہیں لیکن شہر میں شاہراہ کا کام ابھی تک  شروع نہیں ہوا ہے، اُس پرستم یہ ہے کہ سواریوں کو پرانی سڑک پر واقع گڑھوں میں سے گرتے پڑتے گزرنے کے حالات پیدا ہوگئے ہیں۔ لوگ جب گڈھوں سے بچنے کی کوشش میں اپنی سواریوں کو دوسری طرف ...

کیا ملک میں جمہوریت کی بقا کے لئے ایسے ہی غداروں کی ضرورت تو نہیں ؟ آز: مدثراحمد (ایڈیٹر، روزنامہ آج کاانقلاب،شیموگہ)

جب سے ملک میں بی جے پی اقتدار پر آئی ہے  ہر طرح کی آزادی پر پابندیاں لگائی جارہی ہیں۔بولنے کاحق،لکھنے کاحق،تنقید کرنے کا حق یہ سب اب ملک مخالف سرگرمیوں میں شمار ہونے لگے ہیں اور جو لوگ ان حقوق کا استعمال کرنے کی کوشش کررہے ہیں انہیں ملک میں غدار کہا جارہا ہے۔ملک کے موجودہ ...

بھٹکل اور اطراف میں برسات کے ساتھ ساتھ چل رہا ہے مچھروں کا عذاب؛ کیا ذمہ داران مچھروں پر قابو پانے کے لئے اقدامات کریں گے ؟

اگست کے مہینے سے مسلسل برس رہی موسلادھار بارش نے جہاں ایک طرف عام زندگی کو بری طرح متاثر کیا ہے، وہیں پر جگہ جگہ پائے جانے والے گڈھوں، تالابوں اور نالوں میں پانی جمع ہونے کی وجہ سے مچھروں کی افزائش میں بھی ہوا ہے۔ اور مچھروں کے کاٹے سے پھیلنے والی بیماریوں نے لوگوں کے لئے عذاب ...

بھٹکل میں کبھی عرب تاجروں کی بندرگاہ رہی شرابی ندی کی حالت اب ہوگئی ہے ایک گندے نالے سے بھی بدتر؛ کیا تنظیم اور کونسلرس اس طرف توجہ دیں گے ؟ ؟

بھٹکل تعلقہ کی شرابی ندی اب جو ایک گندے نالے سے بھی بدتر حالت میں آگئی ہے اس کے پیچھے صدیوں پرانی تاریخ ہے۔  کیونکہ اس ندی کے کنارے پرکبھی سمندری راستے سے آنے والے عرب تاجروں کے قافلے اترا کرتے تھے۔لیکن کچرے، پتھر اورمٹی کے ڈھیر کے علاوہ اور ندی میں گندے پانی نکاسی کی وجہ سے آج ...