لوگ ہوا-پانی سے مر رہے ہیں، پھانسی کی کیا ضرورت! نربھیا معاملہ کے قصوروار کی دلیل

Source: S.O. News Service | Published on 10th December 2019, 8:56 PM | ملکی خبریں |

نئی دہلی،10/دسمبر(ایس او نیوز/یو این آئی) راجدھانی دہلی کے نربھیا اجتماعی آبروریزی سانحہ کے مجرم اکشے نے سپریم کورٹ میں منگل کو نظر ثانی کی عرضی داخل کی۔ اکشے نے اپنے وکیل اے پی سنگھ نے ذریعے نظر ثانی عرضی داخل کی ہے۔ سزائے موت پانے والے اکشے نے نظرثانی کی درخواست میں کہا ہے کہ دہلی کے لوگ ہوا اور پانی کی آلودگی سے مر رہے ہیں، تو اسے پھانسی کیوں دی جا رہی ہے؟

اکشے کمار نے مزید کہا وید، پوران اور اُپ نشد میں ہزاروں سالوں تک جینے کا ذکر ہے، مذہبی کتابوں کے مطابق لوگ ستیوگ میں ہزاروں سال زندہ رہتے تھے لیکن اب کلجگ میں تو لوگ 50-60 سال میں خود ہی مر جاتے ہیں ایسے میں کسی کو پھانسی پر چڑھانے کی کیا ضرورت ہے!

ادھر، اکشے کے وکیل اے پی سنگھ نے عدالت کے احاطے میں میڈیا سے بات چیت میں کہا، ’’اکشے غریب اور کمزور طبقے سے ہے اور اس کی طرف سے نظرثانی درخواست دائر کرنے میں ہوئی تاخیر کو موضوع نہیں بنایا جانا چاہئے‘‘۔

اے پی سنگھ نے کہا کہ ان کی کوشش بے گناہ کو بچانے کی ہے اور درخواست میں کئی حقائق پیش کئے گئے ہیں۔ غور طلب ہے کہ سپریم کورٹ نو جولائی 2018 کو ونے، پون اور مکیش کی نظر ثانی کی عرضیاں مسترد کر چکا ہے، لیکن اکشے نے ابھی تک نظر ثانی کی عرضی داخل نہیں کی تھی۔ اے پی سنگھ دیگر مجرمان پون اور ونے کے بھی وکیل ہیں۔

غور طلب ہے کہ 16 دسمبر 2012 کو نربھیا کو اجتماعی آبروریزی کے بعد سنگین حالت میں پھینک دیا گیا تھا۔ کئی دنوں کے علاج کے بعد انہیں ايرلفٹ کرکے سنگاپور کے ملکہ الزبتھ ہسپتال میں داخل کرایا گیا تھا، لیکن اس کو بچایا نہ جا سکا اور انہوں نے وہیں دم توڑ دیا تھا۔

اس صورت میں چھ ملزم پکڑے گئے تھے، جس سے ایک نابالغ تھا اور اسے بچہ اصلاح گھر بھیج دیا گیا تھا، جہاں سے اس نے اپنی سزا پوری کر لی تھی، جبکہ ایک ملزم نے خود کشی کر لی تھی۔ باقی چاروں کو نچلی عدالت نے پھانسی کی سزا سنائی تھی، جسے دہلی ہائی کورٹ اور سپریم کورٹ نے برقرار رکھا تھا۔

ایک نظر اس پر بھی

ملک میں کورونا سے 95542 افراد ہلاک، متاثرین کی تعداد 60.74 لاکھ

 ملک میں گزشتہ 24 گھنٹے کے دوران متاثرہ افراد کے 82 ہزار سے زیادہ نئے معاملے سامنے آنے سے متاثرین کی تعداد 60.74 لاکھ سے تجاوز کر چکی ہے جبکہ کورونا کے انفیکشن سے 74 ہزار سے زائد افراد صحت مند ہوچکے ہیں جس کے نتیجے میں صحت مند افراد کی تعداد 50.16 لاکھ ہوگئی ہے۔

بہار اسمبلی انتخابات میں ٹکٹ کے لئے بی جے پی کے دفتر میں ہنگامہ

بہار اسمبلی انتخابات کی تاریخوں کے اعلان کے بعد سے ٹکٹ کے دعویداروں کی سرگرمیاں اس قدر بڑھ گئی ہیں کہ ان کے حامی کارکنان ہنگامہ آرائی اور ہاتھاپائی کرنے تک آمادہ ہیں اور کل ایسا ہی نظارہ بھارتیہ جنتا پارٹی (بی جے پی) کے ریاستی دفتر میں دیکھا گیا۔

بالاسبرامنیم اس ملک کے موسیقی اورلسانی ثقافت کی ایک عمدہ مثال تھے: سونیا گاندھی

کانگریس  کی  چیئرپرسن سونیا گاندھی نے موسیقی کی دنیا کی ایک عظیم ہستی بالاسبرامنیم کے انتقال پراپنے گہرے رنج  وغم  کا اظہار کرتےہوئے کہا ہے کہ وہ ملک کی  موسیقی اور لسانی  ثقافت کے عمدہ مثال تھے اور ان کے نہیں رہنے  سے آرٹ اور کلچرل کی دنیا پھیکی پڑگئی ہے۔