کرناٹکا میں  ٹریفک پولیس کا کارنامہ۔پرانے کیس پر بھی نیا جرمانہ 

Source: S.O. News Service | Published on 12th September 2019, 2:57 PM | ریاستی خبریں | ان خبروں کو پڑھنا مت بھولئے |

بنگلورو12/ستمبر (ایس او نیوز) مرکزی حکومت کی جانب سے ٹریفک قوانین میں تبدیلی کرکے بھاری جرمانہ لگانے کی پولیس کو اجازت دئے جانے کے بعد عوام ایک اور مصیبت کا شکار ہوگئے ہیں۔ ان کے سامنے ایک سوال یہ بھی کھڑا ہوگیا ہے کہ جس موٹر گاڑی والے پر قوانین کی خلاف ورزی کا معاملہ کرناٹکا میں 3ستمبر کو نئے قوانین لاگو کرنے سے پہلے درج کیا گیا ہے، اس کے پاس سے پرانے قانون کے مطابق جرمانہ وصول کیا جائے گا یا پھر نیا جرمانہ اسے بھرنا ہوگا۔    

کیونکہ عوام کی طر ف سے شکایات سننے میں آرہی ہیں کہ نئے قانون پر عمل کرنے کے جوش میں ٹریفک پولیس کی طرف سے پرانے معاملات پر بھی نئے قوانین کے مطابق جرمانہ وصول کیا جارہا ہے۔اس ضمن میں اعلیٰ پولیس افسران کا کہنا ہے کہ اگر معاملہ پرانا ہے تو پھر اس پر جرمانہ پرانے قانون کے حساب سے لیا جانا چاہیے اور صرف تازہ معاملات میں ہی  نئے قوانین کااطلاق ہوگا۔

شہروں کے اندر شراب کے نشے میں گاڑی چلانے، حد سے زیادہ تیز رفتار ی او ربے پروائی سے ڈرائیونگ کرنے، سگنل جمپ کرنے بغیر ہیلمیٹ کے دو پہیہ گاڑی چلانے، ڈرائیونگ کے وقت موبائل فون کے استعمال، دو پہیہ گاڑیوں پر تین سواریوں کو لے جانے جیسی قانونی خلاف ورزیوں کے مناظر سی سی ٹی وی کیمروں اور پولیس کے پی ٹی وی آر میں قید ہوجاتے ہیں اور پھر ٹریفک کنڑول مرکز سے نشاندہی کے بعد گاڑی مالکان کو نوٹس بھیج دی جاتی ہے۔اس میں ہفتوں کی تاخیر بھی ہوجاتی ہے۔

اب ایک طرف قانونی خلاف ورزیوں کے پرانے معاملات کے نوٹس ڈاک کی معرفت لوگوں کو آج کل مل رہے ہیں تو دوسری طرف کچھ لوگوں نے نوٹس ملنے کے بعد بھی جرمانہ بھرنے میں تاخیر کردی ہے۔ اور اب جب اپنا معاملہ ختم کرنے کے لئے وہ متعلقہ پولیس اسٹیشن پہنچتے ہیں یا پھر کسی تازہ میں پھنس جاتے ہیں تو پولیس کے پاس موجود ریکارڈ(پی ڈی اے) کی وجہ سے پرانا معاملہ بھی سامنے آجاتاہے۔ ایسی صورت میں پولیس والے نیا جرمانہ وصول کررہے ہیں۔جس کی وجہ سے موٹر سواروں کے در د سرمیں مزیداضافہ ہوگیا ہے۔

ایک نظر اس پر بھی

کورونا پرقابو پانے کے لئے بیدر میں خدمات انجام دینے والے ڈاکٹر محمد سہیل کے جذبے کو لوگ کررہے ہیں سلام

یدر شہر میں 10افراد کی کورونا وائرس سے متاثر ہونے کی تصدیق کے بعد بیدر شہر کو مکمل طورپر لاک ڈاؤن کردیا گیا ہے مگر اس دوران بیدر کے ایک ڈاکٹر محمد سہیل حسین انچارج قدیم سرکاری دواخانہ بیدر نے انسانی جذبہ ہمدردی سے سر شا رہوکر اپنے طبی عملہ کے ساتھ دن رات COVID-19 کورونا وائرس جیسے ...

منگلوروکے ایک دیہات میں لگا نیا پوسٹرہندو بیوپاریو! ہمارے گاؤں میں آکر تجارت کرو:منفی پروپگنڈا کرنے والوں کومنھ توڑ جواب

کورونا وائرس کی وباء کو مسلمانوں کی سازش قرار دینے اور ان کے سماجی بائیکاٹ کرنے کی جو لہر چل پڑی ہے اور مختلف مقامات پر مسلمانوں کے داخلے اور آمد ورفت پر پابندی کے جو پوسٹرس، بیانرس اور آڈیو مسیج عام ہورہے ہیں اس سے سماج میں ایک عجیب تشویش پیدا ہوگئی ہے۔

ایمرجنسی معاملات میں کیرالہ کے مریضوں کا علاج مینگلور کے ڈیرلکٹہ اسپتال میں کرنےجنوبی کینرا ڈپٹی کمشنرکی رضامندی

کورونا وائرس کی وبا ء پھیلنے کے بعد کرناٹکا نے کیرا لہ کے ساتھ لگنے والی تمام سرحدیں بند کردی تھیں، جس کی وجہ سے مینگلور سے لگے کیرالہ کے سرحدی علاقہ  کاسرگوڈ اور اطراف سے علاج کے لئے منگلورو آنے والے مریض بری طرح متاثر ہوگئے تھے۔پھر یہ تنازعہ سپریم کورٹ تک جا پہنچا تھا۔ اور ...

منڈیا کے گاؤں والوں نے کرنسی نوٹوں کو دھویا، مسلمانوں سے کرنسی لئے جانے کی بنا پر نوٹوں کو دھونے کی خبریں

ریاست کرناٹک  کے دیہی علاقوں میں کورونا وائرس کی وباء تا حال نہیں پہنچی مگر اس کے تعلق سے سماجی کلنک یہاں اپنی موجودگی کا احساس دلارہا ہے۔ کیمرے میں قید ایک واقعہ میں منڈیا کے کئی گاؤں والے کورونا وائرس کے خوف سے کرنسی نوٹوں کو دھوتے ہوئے نظر آرہے ہیں، جس کے تعلق سے بتایا جارہا ...

جن اضلاع میں کورونا نہیں وہاں لاک ڈاؤن میں رعایت کا امکان؛ 11/اپریل کو وزیر اعظم مودی کی ویڈیو کانفرنس کے بعد ریاستی حکومت کی طرف سے اعلان متوقع 

وزیر اعلیٰ بی ایس ایڈی یورپا نے اشارہ دیا ہے کہ مرکزی حکومت کی طرف سے منظوری ملنے کی صورت میں ان اضلاع میں لاک ڈاؤن ختم کیا جاسکتا ہے جہاں کورونا وائرس کے واقعات بہت کم ہیں یا نہیں ہیں۔ 

بیدر میں مسجد کے مؤذن کی بے رحمی سے پٹائی؛ شدید زخمی مؤذن اسپتال میں داخل، حملہ آور اسسٹنٹ سب انسپکٹر معطل 

ایسے وقت میں جب کرناٹک میں کورونا وائر س کی روک تھام کے لیے لاک ڈاؤن جاری ہے، اس دوران ریاست کے مختلف حصوں میں فرقہ پرستوں کی جانب سے مسلمانوں پر حملوں کی وارداتیں پیش آرہی ہیں۔