کرناٹکا میں  ٹریفک پولیس کا کارنامہ۔پرانے کیس پر بھی نیا جرمانہ 

Source: S.O. News Service | Published on 12th September 2019, 2:57 PM | ریاستی خبریں | ان خبروں کو پڑھنا مت بھولئے |

بنگلورو12/ستمبر (ایس او نیوز) مرکزی حکومت کی جانب سے ٹریفک قوانین میں تبدیلی کرکے بھاری جرمانہ لگانے کی پولیس کو اجازت دئے جانے کے بعد عوام ایک اور مصیبت کا شکار ہوگئے ہیں۔ ان کے سامنے ایک سوال یہ بھی کھڑا ہوگیا ہے کہ جس موٹر گاڑی والے پر قوانین کی خلاف ورزی کا معاملہ کرناٹکا میں 3ستمبر کو نئے قوانین لاگو کرنے سے پہلے درج کیا گیا ہے، اس کے پاس سے پرانے قانون کے مطابق جرمانہ وصول کیا جائے گا یا پھر نیا جرمانہ اسے بھرنا ہوگا۔    

کیونکہ عوام کی طر ف سے شکایات سننے میں آرہی ہیں کہ نئے قانون پر عمل کرنے کے جوش میں ٹریفک پولیس کی طرف سے پرانے معاملات پر بھی نئے قوانین کے مطابق جرمانہ وصول کیا جارہا ہے۔اس ضمن میں اعلیٰ پولیس افسران کا کہنا ہے کہ اگر معاملہ پرانا ہے تو پھر اس پر جرمانہ پرانے قانون کے حساب سے لیا جانا چاہیے اور صرف تازہ معاملات میں ہی  نئے قوانین کااطلاق ہوگا۔

شہروں کے اندر شراب کے نشے میں گاڑی چلانے، حد سے زیادہ تیز رفتار ی او ربے پروائی سے ڈرائیونگ کرنے، سگنل جمپ کرنے بغیر ہیلمیٹ کے دو پہیہ گاڑی چلانے، ڈرائیونگ کے وقت موبائل فون کے استعمال، دو پہیہ گاڑیوں پر تین سواریوں کو لے جانے جیسی قانونی خلاف ورزیوں کے مناظر سی سی ٹی وی کیمروں اور پولیس کے پی ٹی وی آر میں قید ہوجاتے ہیں اور پھر ٹریفک کنڑول مرکز سے نشاندہی کے بعد گاڑی مالکان کو نوٹس بھیج دی جاتی ہے۔اس میں ہفتوں کی تاخیر بھی ہوجاتی ہے۔

اب ایک طرف قانونی خلاف ورزیوں کے پرانے معاملات کے نوٹس ڈاک کی معرفت لوگوں کو آج کل مل رہے ہیں تو دوسری طرف کچھ لوگوں نے نوٹس ملنے کے بعد بھی جرمانہ بھرنے میں تاخیر کردی ہے۔ اور اب جب اپنا معاملہ ختم کرنے کے لئے وہ متعلقہ پولیس اسٹیشن پہنچتے ہیں یا پھر کسی تازہ میں پھنس جاتے ہیں تو پولیس کے پاس موجود ریکارڈ(پی ڈی اے) کی وجہ سے پرانا معاملہ بھی سامنے آجاتاہے۔ ایسی صورت میں پولیس والے نیا جرمانہ وصول کررہے ہیں۔جس کی وجہ سے موٹر سواروں کے در د سرمیں مزیداضافہ ہوگیا ہے۔

ایک نظر اس پر بھی

سولیا: پہاڑی مہم جو ٹیم کا ایک رکن ہوگیا لاپتہ۔قریبی جنگلات میں جاری ہے تلاشی مہم 

بنگلورو کی ایک کمپنی کے ملازمین کی ٹیم سبرامنیا میں واقع پہاڑی ’کمارا پروتا‘ کو سر کرنے کی مہم پر نکلی تھی۔ لیکن واپسی کے وقت ٹیم کا ایک رکن جنگلات میں اچانک لاپتہ ہوگیا ہے، جس کی شناخت سنتوش (25سال) کے طور پر کی گئی ہے۔

سیلاب متاثرین سے وزیر اعظم کو کوئی ہمدردی نہیں منڈیا میں منعقدہ پرتیبھا پرسکار کے جلسہ سے سابق وزیر اعلیٰ سدارامیا کا خطاب

ملک کے وزیر اعظم کو سیلاب متاثرین سے کوئی ہمدردی نہیں ہے۔ پچھلے ایک سو سال سے کبھی نہ دیکھا گیا سیلاب ریاست میں آیا ہے اور ہزاروں افراد کی زندگی تباہ ہوچکی ہے۔

آئی ایم اے فراڈ کیس کا ایک نیا موڑ، قدآور شخصیات راڈر پر، منصور خان نے سابق وزیر دیش پانڈے پر 5/کروڑ روپئے طلب کرنے کا الزام لگایا 

آئی ایم اے فراڈ کیس دن بدن نیا زاویہ اختیار کرتا جارہا ہے، اس کیس کے کلیدی ملزم اور آئی ایم اے کے سربراہ منصور خان نے دعویٰ کیا ہے کہ سابق ریاستی وزیر اور سینئر کانگریس لیڈر آر وی دیش پانڈے نے آئی ایم اے کو 600کروڑ روپئے کا قرضہ حاصل کرنے کے لئے نو آبجیکشن سرٹی فکیٹ (این او سی) جاری ...

سولیا: پہاڑی مہم جو ٹیم کا ایک رکن ہوگیا لاپتہ۔قریبی جنگلات میں جاری ہے تلاشی مہم 

بنگلورو کی ایک کمپنی کے ملازمین کی ٹیم سبرامنیا میں واقع پہاڑی ’کمارا پروتا‘ کو سر کرنے کی مہم پر نکلی تھی۔ لیکن واپسی کے وقت ٹیم کا ایک رکن جنگلات میں اچانک لاپتہ ہوگیا ہے، جس کی شناخت سنتوش (25سال) کے طور پر کی گئی ہے۔

 ای۔ ٹکٹ میں جعلسازی کے ذریعے منگلورو ایئر پورٹ پر غیر مجاز شخص کا داخلہ۔ ملزم گرفتار

بینہ طور پر ای۔ ٹکٹ میں جعلسازی کرتے ہوئے اپنا نام داخل کرکے منگلورو انٹرنیشنل ایئر پورٹ کے اندر ایک غیر مجاز شخص کے داخل ہونے کا معاملہ سامنے آیا ہے جس کے بعد سنٹرل انڈسٹریل سیکیوریٹی فورس کے افسران نے مذکورہ شخص کو حراست لے کر پولیس کے حوالے کردیا ہے۔