راجستھان میں پہلی بار آئے گی تکنیکی تعلیمی پالیسی

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 23rd July 2019, 11:56 AM | ملکی خبریں |

جے پور، 23/جولائی (ایس او نیوز/آئی این ایس انڈیا) راجستھان حکومت تکنیکی تعلیم کی بڑھتی ہوئی اہمیت کو ذہن میں رکھتے ہوئے پہلی بار تکنیکی تعلیمی پالیسی بنانے پر غور کر رہی ہے۔ انہوں نے کہا کہ اس پالیسی میں کا معیار اور ہدایات وغیرہ شامل کئے جائیں گے۔ تکنیکی تعلیم کے وزیر مملکت سبھاش گرگ نے پیر کو اسمبلی میں وقفہ ئ سوال میں اس کی اطلاع دی۔انہوں نے کہا کہ فی الحال تکنیکی تعلیم کے لیے کالج کھولنے کے سلسلے میں کوئی معیار مقرر نہیں ہے۔ انہوں نے کہا کہ یونیورسٹی اور تکنیکی یونیورسٹیوں کے لئے معیار مقرر کیا گیا ہے۔ انہوں نے کہا یونیورسٹی کا معیار اور معیار کو اختیار کرنے کو یقینی بنانا ہے اور حکومت صرف این او سی دیتی ہے۔ گرگ نے یہ بھی بتایا کہ سرکاری اور نجی تکنیکی کالجوں میں لی جا رہی فیس میں فی الحال زیادہ فرق نہیں ہے۔ انہوں نے بتایا کہ فی الحال سرکاری کالجوں میں 60 ہزار اور نجی کالجوں میں 70 ہزار فیس لی جا رہی ہے۔ اس سے پہلے ممبر اسمبلی کے سوال کے جواب میں گرگ نے بتایا کہ سرکاری شعبہ میں نیا انجینئرنگ کالج کھولنے کے لئے ریاستی حکومت کے کوئی کا معیار مقرر نہیں ہے۔ سرکاری شعبہ میں نیا انجینئرنگ کالج کھولنے کا فیصلہ، علاقائی ضروریات کی تشخیص کرتے ہوئے مالی وسائل کی دستیابی پر کیا جاتا ہے۔

ایک نظر اس پر بھی

سی اے اے کیخلاف قرار دادیں ’’دستوری اعتبار سے بھیانک غلطی‘‘ ، کوئی طاقت کشمیری پنڈتوں کو کشمیر واپس جانے سے نہیں روک سکتی ؛ منگلورو میں ریالی سے راجناتھ سنگھ کا خطاب

وزیر دفاع راجناتھ سنگھ نے آج اپوزیشن پارٹیوں کو ہدف تنقید بناتے ہوئےاُن سے خواہش کی ہے کہ یہ پارٹیاں ‘ جہاں اُن کی اکثریت ہے، ریاستی اسمبلیوں میں سی اے اے کیخلاف قرار دادیں منظور کرتے ہوئے ’’دستوری اعتبار سے بھیانک غلطی ‘‘ نہ کریں۔ راجنا تھ سنگھ نے اپوزیشن پارٹیوں کو مشورہ ...

معیشت میں بہتری کے لیے ’مرہم‘ نہیں، سخت اقدامات کی ضرورت: کانگریس

کانگریس نے کہا ہے کہ لوگوں کی آمدنی اور خریدنے کی اہلیت کم ہونے کے ساتھ ہی صنعتی پیداوار، براہ راست ٹیکس، درآمدات۔برآمدات وغیرہ میں کمی کی وجہ سے معیشت بری صورت حال سے دوچار ہے اور بہتر ی کے لئے لیپا پوتی کرنے کے بجائے اب طویل مدتی سخت اقدام کرنے کی ضرورت ہے۔