این ڈی اے کو اقتدار سے بے دخل ہونے کے لیے 100 وجوہات موجود، صرف مہنگائی کی وجہ سے ہی کیا جانا چاہیے بے دخل: چدمبرم

Source: S.O. News Service | Published on 11th October 2021, 11:06 PM | ملکی خبریں |

نئی دہلی،11؍اکتوبر(ایس او نیوز؍ایجنسی) سابق مرکزی وزیر مالیات پی چدمبرم نے پیر کے روز اپنے ایک بیان میں کہا کہ مرکز میں برسراقتدار این ڈی اے حکومت کی ناکامیاں بے شمار ہیں اور 100 اسباب ایسے ہیں جس کی وجہ سے اسے اقتدار سے بے دخل ہو جانا چاہیے۔ چدمبرم نے اپنی بات کو آگے بڑھاتے ہوئے یہاں تک کہہ دیا کہ صرف مہنگائی بھی ایسی وجہ ہے جس کے لیے مرکزی حکومت کو اقتدار سے بے دخل کر دیا جانا چاہیے۔ شمالی گوا کے منڈریم اسمبلی حلقہ میں کانگریس پارٹی کی میٹنگ میں چدمبرم نے ان خیالات کا اظہار کیا۔ انھوں نے یہ بھی کہا کہ ایک بچہ بھی ایندھن کی قیمتوں میں اضافہ اور ضروری اشیاء و روز مرہ کے سامانوں کی قیمتوں میں تیز اضافہ کے بیچ رشتہ کو سمجھانے میں اہل ہوگا۔

چدمبرم کا کہنا ہے کہ ’’اگر آپ صرف ایندھن کے لیے 1000 روپے کی ادائیگی کرتے ہیں، تو آپ کیا خرید سکتے ہیں، کھا سکتے ہیں، پکا سکتے ہیں۔ اس حکومت کو 100 وجوہات کی بنا پر چلے جانا چاہیے، بلکہ صرف مہنگائی پر ہی اس حکومت کو چلے جانا چاہیے۔‘‘

سابق مرکزی وزیر مالیات ریاست میں کئی میٹنگوں کو خطاب کرنے کے لیے گوا میں تھے۔ چدمبرم کو 2022 کے ریاستی اسمبلی انتخابات کے لیے آل انڈیا کانگریس کمیٹی کے سینئر مشیر انچارج کی شکل میں مقرر کیا گیا ہے۔ چدمبرم نے یہ بھی کہا کہ مرکزی حکومت کو ڈیزل اور پٹرول کی بڑھتی قیمتوں کی پروا نہیں ہے، کیونکہ وزیر اعظم نریندر مودی کو ’پیسے کی زبردست بھوک‘ ہے۔

چدمبرم نے کہا کہ ’’قیمتیں کیوں بڑھ رہی ہیں؟ قیمتیں اس لیے بڑھ رہی ہیں کیونکہ پٹرول کی قیمتیں ہر دن بڑھ رہی ہیں، ڈیزل کی قیمتیں ہر دن بڑھ رہی ہیں۔ آج لگاتار ساتواں دن ہے کہ قیمتیں بڑھی ہیں۔ کیوں کہ مسٹر مودی کو پیسے کی بہت بھوک ہے۔ مرکزی حکومت پٹرول، ڈیزل پر ٹیکسز سے 3.50 لاکھ کروڑ روپے کماتی ہے۔‘‘

چدمبرم نے یہ بھی کہا کہ ’’وہ آپ کے پسینے، خون اور آپ کے غموں پر چل رہے ہیں۔ مرکزی حکومت صرف اس لیے چل رہی ہے، کیونکہ آپ خود کو نچوڑ رہے ہیں اور ٹیکس دے رہے ہیں۔ یہاں تک کہ ایک بچے کو بھی پتہ چل جائے گا کہ پٹرول اور ڈیزل کی قیمتیں بڑھتی ہیں، تو ہر چیز کی قیمتیں بڑھ جائیں گی۔ ٹرانسپورٹیشن لاگت بڑھ جاتی ہے۔ کوئلہ کے پروڈکشن کی لاگت بڑھتی ہے۔ ہر لاگت بڑھے گی۔‘‘

ایک نظر اس پر بھی

کانگریس نے پیگاسس کیس پرعدالت کے فیصلے کاخیرمقدم کیا

کانگریس نے بدھ کو سپریم کورٹ کے مبینہ پیگاسس جاسوسی کیس کی تحقیقات کے لیے تین رکنی کمیٹی قائم کرنے کے فیصلے کا خیرمقدم کرتے ہوئے کہاہے کہ’ستیہ میو جیتے۔‘‘پارٹی کے چیف ترجمان رندیپ سرجے والانے ٹویٹ کیاہے کہ بزدل فاشسٹوں کی آخری پناہ گاہ مبینہ قوم پرستی ہے۔

بی جے پی رکن اسمبلی کرشنا کلیانی بھی ترنمول کانگریس میں شامل

 بنگال بی جے پی کو دھکچے لگنے کا سلسلہ جاری ہے۔ اب رائے گنج سے بی جے پی کے ممبر اسمبلی کرشنا کلیانی جنہوں نے یکم اکتوبر کو بی جے پی چھوڑ دی تھی نے قیاس آرائیوں کے مطابق آج پارٹی کے سکریٹری جنرل پارتھو چٹرجی کی موجودگی میں ترنمول کانگریس میں شامل ہوگئے۔

ہندوتوا وادی مظاہرین کے ہاتھوں تریپورہ کی 16 مساجد میں توڑ پھوڑ، 3 مساجد نذر آتش

شمال مشرقی ریاست تریپورہ میں حالات دن بدن شدت اختیار کرتے جا رہے ہیں۔ بنگلہ دیش میں ہندوؤں کے خلاف ہوئے تشدد کی مذمت میں کئی دنوں سے ریاست بھر میں مظاہرے اور ریلیاں جاری تھیں، لیکن یہ ریلیاں شدت اختیار کر گئیں اور ریاست کے مسلمانوں کے خلاف متشدد ہوگئیں۔

وزیراعلی ملازمتیں فراہم کریں یا مستعفی ہوجائیں: وائی ایس شرمیلا

 وائی ایس آر تلنگانہ پارٹی کی سربراہ وائی ایس شرمیلا نے کہا ہے کہ ہر گھر کو ایک ملازمت یا نہیں تو بے روزگاری کا الاونس فراہم کرنے ولے وزیراعلی کے چندرشیکھرراو کے وعدہ پر یقین کرتے ہوئے عوام نے ان کو اقتدار حوالے کیا، تاہم موجودہ صورتحال یہ ہوگئی ہے کہ ریاست میں بے روزگاری میں ...

پیگاسس معاملہ پر مرکز کو سپریم کورٹ سے جھٹکا! تفتیشی کمیٹی کا قیام

پیگاسس معاملہ میں سپریم کورٹ نے مرکزی حکومت کو جھٹکا دیتے ہوئے کہا کہ پیگاسس معاملہ کی جانچ ہوگی، عدالت نے جانچ کے لئے ماہرین کی ایک کمیٹی بھی تشکیل دے دی ہے۔ عدالت عظمیٰ نے کہا کہ اس معاملہ میں مرکز کا رخ واضح نہیں اور رازداری کی خلاف ورزی کی تحقیقات ہونی چاہئے۔