برسات کے موسم میں بھٹکل سے کاراور تک نیشنل ہائی وے توسیعی منصوبے سے عوام کو پریشانی کا اندیشہ

Source: S.O. News Service | By I.G. Bhatkali | Published on 15th May 2019, 5:28 PM | ساحلی خبریں |

بھٹکل 15/مئی (ایس او نیوز) بھٹکل سے کاروار ماجالی تک نیشنل ہائی وے 66 کا توسیعی کام جس انداز سے چل رہا ہے اس سے عوام کے اندرکافی بے چینی پائی جاتی ہے۔ عوا م کا کہنا ہے کہ ٹھیکے دار کمپنی آئی آر بی کو تعمیری کام صحیح ڈھنگ سے انجام دینا چاہیے اور اس بات کا خیال رکھنا چاہیے کہ مانسون شروع ہونے کے بعد عام لوگوں کو اور سڑک پر سفر کرنے والوں کو پریشانیوں کا سامنا کرنے کی نوبت نہ آئے۔

ہائی وے کی بدتر حالت:    فی الحال تعمیری کام کی جو صورتحال ہے اس کے مطابق ٹھیکے دار کمپنی کی طرف سے کہیں پہاڑ وں کی کھدائی ہورہی ہے اور کہیں بیچ سڑک پر بڑے بڑے گڈھے پڑے ہوئے ہیں۔ کہیں مٹی اور پتھروں کے ڈھیر لگے ہیں۔ مختلف مقامات پر سڑک کو موڑنے کے بورڈ لگے ہوئے ہیں اور یہ بورڈ چند دنوں میں دوسرے مقام پر منتقل کیے جاتے ہیں۔اس سے موٹر گاڑیاں چلانے والوں کو سخت دشواریوں کا سامنا کرنا پڑتا ہے اور برسات کے موسم میں بڑے حادثات ہونے کے امکانا ت بہت زیادہ ہوگئے ہیں۔عوام کا کہنا ہے کہ ایسے میں اگر کوئی بڑا حادثہ ہوجاتا ہے تو پھر اس کے لئے ٹھیکیدار کمپنی ہی پوری طرح ذمہ دار ہوگی۔

 ہوناور میں کٹے ہوئے پہاڑ سے خطرہ:    برسات کا موسم شروع ہونے میں ابھی کچھ ہی دن باقی ہیں، او رایسے میں ٹھیکے دار کمپنی آئی آر بی نے  ہوناور کے چرچ کے قریب ایک پہاڑ کو کاٹنے کا م شروع کردیا ہے۔گزشتہ سا ل برسات کی وجہ سے کٹے ہوئے پہاڑ سے زمین کھسکنے کا واقعہ یہاں پیش آ چکا ہے۔ جس کو مزید بڑھنے سے روکنے کے لئے لوہے کی سلاخیں اور جالیوں کا استعمال کرتے ہوئے بڑی بھاری مشینوں کے ذریعے کانکریٹ کی دیوار کھڑی کردی گئی تھی۔ لیکن اب سوال یہ ہے کہ برسات کے موسم میں اگر سو فٹ بلندی سے پہاڑی کی زمین کھسکنے لگے گی تو اسے روکنے کا کیا انتظام ممکن ہوگا۔یہاں پر ٹھیکے دار کمپنی نے اپنے لئے جتنا ضروری ہے اتنا حصہ پہاڑ کا کاٹ لیا ہے۔ لیکن پہاڑ کی  چوٹی پر موجود دو بڑے بڑے تودوں کو یوں ہی چھوڑدیا ہے۔کمپنی کی یہ بے پروائی برسات کے موسم میں بڑے جان لیواحادثے کا سبب بن سکتی ہے۔

احتیاطی تدبیر ضروری ہے:    خیال رہے کہ گزشتہ سال ڈپٹی کمشنر نے ٹھیکیدارکمپنی کو مانسون کے موسم میں احتیاطی تدابیر اختیار کرنے کے احکامات جاری کردئے تھے۔ اس کے باوجود من چاہے انداز میں پہاڑیوں کی کھدائی کرنے کی وجہ سے کمٹہ میں پہاڑی تودہ گرنے اور جانی نقصان ہونے کا واقعہ پیش آیا تھا۔حالانکہ برسات کے موسم میں تعمیری کام روک دیا جاتاہے، لیکن مٹی کے ڈھیر، تعمیراتی سامان، گڈھے اور بغیر اشارتی بورڈ کے سڑک پر موجود موڑ خطرناک ثابت ہوسکتے ہیں۔اس لئے اس مرتبہ بھی ضلع انتظامیہ کو وقت سے پہلے اس پر دھیان دینا ہوگا۔ٹھیکے دار کمپنی کے ملازمین، انجینئرز اور افسران اس موسم میں موقع پر موجود نہیں رہتے۔ آج بھی نیشنل ہائی وے اتھاریٹی کے طرف سے کوئی بھی انجینئر تعمیراتی صورتحال کا جائزہ لینے کے لئے کسی بھی مقام پر نظر نہیں آتا۔ ضرورت اس بات کی ہے کہ جہاں جہاں پہاڑوں کو توڑنے اور کھدائی کا کام ہوا ہے ان مقامات کا بھرپور جائزہ لیا جائے اور کسی بھی ناخوشگوار حادثے سے بچنے کے لئے ضروری اقدامات کیے جائیں۔

ایک نظر اس پر بھی

بھٹکل کے قریب منکی ریلوے پٹری پر پائی گئی نامعلوم شخص کی ٹکڑوں میں بکھری ہوئی نعش؛ تیز رفتار ٹرین کی زد میں آکر ہلاک ہونے کا شبہ

پڑوسی تعلقہ ہوناور کے منکی  پولس اسٹیشن کے عقب میں واقع ریلوے پٹری پر ایک نامعلوم شخص کی  تکڑوں میں بکھری ہوئی نعش پائی گئی ہے جس کے تعلق سے پولس کو  شبہ ہے کہ  رات کے کسی پہر میں   یہ شخص غالباً  ریلوے پٹری کراس کررہا ہوگا جس  کے دوران تیز رفتار ٹرین کی زد میں آکر ہلاک ہوگیا ...

سولیا: پہاڑی مہم جو ٹیم کا ایک رکن ہوگیا لاپتہ۔قریبی جنگلات میں جاری ہے تلاشی مہم 

بنگلورو کی ایک کمپنی کے ملازمین کی ٹیم سبرامنیا میں واقع پہاڑی ’کمارا پروتا‘ کو سر کرنے کی مہم پر نکلی تھی۔ لیکن واپسی کے وقت ٹیم کا ایک رکن جنگلات میں اچانک لاپتہ ہوگیا ہے، جس کی شناخت سنتوش (25سال) کے طور پر کی گئی ہے۔

منڈگوڈ میں بیک وقت کئی گھروں میں چوری کی وارداتیں۔ لاکھوں روپے نقد اور زیورات چور اڑالے گئے

منڈگوڈ کے چیگلّی گرام میں ایک ہی رات میں کئی گھروں میں چوری کی وارداتیں دئے جانے کی اطلاع موصول ہوئی ہے۔ بتایا جاتا ہے کہ گزشتہ رات تین بجے کے قریب گاؤں کی مختلف گلیوں میں واقع6 گھروں کے اندر چوروں نے گھسنے اور لوٹ مچانے کی کوشش کی جس میں سے دو گھروں میں انہیں کامیابی ملی اور وہ ...

کاروار: پرائیویٹ اسکولوں میں بھی اسکاؤٹس اینڈ گائڈس کی شاخیں لازماً قائم ہوں: ڈاکٹر ہریش کمار

موجودہ حالات میں بچوں کے درمیان انسانی اقدار کی پرورش کرنا بہت ضروری ہے۔ اس سلسلےمیں پرائیویٹ اسکولوں میں بھی لازماً اسکاؤٹس اینڈ گائڈس کی شاخ کا قیام عمل میں لاکر مختلف سرگرمیوں کو انجام دینے کی اترکنڑا ڈپٹی کمشنر ڈاکٹر ہریش کمار نے ہدایات جاری کیں۔

کاروار میں ’سوچھ رتھ ‘موبائیل سواری کا اجراء: ضلع کو پاکیزہ بنانا ہم سب کی ذمہ داری ہے: جئے شری موگیر

اترکنڑا ضلع کو ’پاکیزہ ضلع‘ کی حیثیت سے ترقی دینا ہم سب کی ذمہ داری ہے۔ ضلع کو ریاست کا پہلا گندگی سے پاک ضلع بنانے کے لئے ہم سب کو کام کرنا ہے۔ اترکنڑا ضلع پنچایت کی صدر جئے شری موگیر نے ان خیالات کا اظہار کیا۔