بارش کے بعد بھٹکل کی قومی شاہراہ : گڑھوں کا دربار، سواریوں کے لئے پریشانی؛ گڑھوں سے بچنے کی کوشش میں حادثات کے خدشات

Source: S.O. News Service | By Abu Aisha | Published on 15th September 2019, 9:27 PM | ساحلی خبریں | اسپیشل رپورٹس |

بھٹکل:15؍ستمبر(ایس اؤ نیوز) لوگ فورلین قومی شاہراہ  کی تعمیر کو لے کر  خوشی میں جھوم رہے ہیں لیکن شہر میں شاہراہ کا کام ابھی تک  شروع نہیں ہوا ہے، اُس پرستم یہ ہے کہ سواریوں کو پرانی سڑک پر واقع گڑھوں میں سے گرتے پڑتے گزرنے کے حالات پیدا ہوگئے ہیں۔ لوگ جب گڈھوں سے بچنے کی کوشش میں اپنی سواریوں کو دوسری طرف گھماتے ہیں تو پیچھے سے یا آگے سے دوسری سواری کے ذریعے ٹکر مارنے کا خدشہ پیدا ہوجاتا ہے۔

سواریوں اور سواروں کی حفاظت کے پیش نظر  ساحلی پٹی کے دیگر تعلقہ جات کی طرح بھٹکل میں بھی فورلین شاہراہ کی تعمیر کے منصوبہ پر عمل آوری کو دس برس ہونے کو ہیں ، لیکن تعلقہ کے منکولی کے چند جگہوں کے علاوہ  بھٹکل شہر میں فورلین کی تعمیر کاکام ابھی  تک شروع  نہیں ہواہے۔ پچھلے 5برسوں  پہلے شروع کیا گیا شاہراہ کےلئے  نشان زدہ  کام ابھی تک ویسا ہی پڑا   ہے۔ تعمیری کام شروع ہونا تو دور کی بات ، شہری سطح میں شاہراہ کی لمبائی اور چوڑائی بھی ابھی تک طئے نہیں ہو پارہی ہے۔ فورلین  کی تعمیر کے بہانے پرانی قومی شاہراہ کو یوں ہی چھوڑ دیا گیا ہے جس کے نتیجے میں پرانی شاہراہ پر بچھا تارکول نکل کر سڑک کی حالت خستہ ہوگئی ہے۔ جہاں دیکھووہاں گڑھوں کا دربار ہے ، جو سواریوں کے لئے خطرہ بنتا جارہا ہے۔ گڑھے وہ بھی کیسے ؟ بھٹکل سرکاری بس اسٹانڈ کے دونوں گیٹ پر موجود گڑھوں کو دیکھ لیجئے پتہ چلے گا کہ نظا م کس ابتر حالت کو پہنچ گیا ہے۔ تھوڑی سی بار ش پر بھی یہ دونوں گڑھے تالاب نما  شکل اختیار کرلیتے ہیں اور زیادہ بار ش ہوگئی تو سڑک ہے یا تالاب ہے پتہ نہیں چلتا۔گڑھوں سے بچنے کی دھن میں سامنے سے آنے والی سواری سے ٹکرانے کا خوف اور  سڑک پرپھسلنے کا ڈرموجود رہتاہے۔ اس سلسلے میں جب افسران سے گفتگو کریں تو افسران فورلین کی تعمیر کابہانہ گھڑ لیتے ہیں ۔ کلی طورپر شاہراہ ناسور بنتی جارہی ہے۔

 تنگنگنڈی کراس سے منکولی کراس  کے درمیان والی شاہراہ تعلقہ کی سطح پر بہت اہمیت رکھتی ہے۔ متعلقہ علاقے کی شاہراہ پر صرف ہائی وے کی سواریاں ہی نہیں بلکہ شہر کے عوام بھی بھاگ دوڑ کرتے رہتےہیں اورا سی شاہراہ پر اسکولی بچوں کی سواریاں بھی گذرتی  ہیں۔ شاہراہ کی گنجانی اور مسلسل بارش کی وجہ سے تینگنگنڈی سے لے کر منکولی کراس  تک کی شاہراہ پر تارکول نکلتی جارہی ہے، جھلی ، چھوٹے چھوٹے پتھر بکھرے ہوئے ہیں، تھوڑی سی دھوپ اور ہوا چلی تو ماحول گدلا ہو جاتا ہے۔ بارش کی وجہ سے شاہراہ پر جہاں تہاں پانی جمع ہوجاتاہے۔ مان لیں کہ بارش کے بعد شاہراہ کی تعمیر کا کام شروع ہوجاتاہے تب بھی واضح تصویر ابھرنےکے لئے سال دو سال لگنا طئے لگتا ہے۔ ایسے میں عوام  سوال کررہے ہیں  کہ کیا تب تک عوام کو اسی  کچی اور خستہ حال سرک پر ہی بھاگ دوڑ کرنا ہوگا یا  سڑک کی مرمت کی طرف بھی کسی کا دھیان جائے گا ؟  اس تعلق سے عوام یہ بھی سوال اُٹھارہے ہیں کہ شاہراہ تعمیر کرنے والے  ٹھکیدار بڑے لوگ ہونےکی وجہ سے افسران بھی سر نیچے کرکے چلنے لگیں گے تو عوام کا کیا ہوگا؟  عوام اس بات کا مطالبہ کررہے ہیں کہ اس سلسلے میں افسران سڑک کی مرمت کی طرف حتمی فیصلہ لیں یا پھر  فورلائین تعمیر کا کام جلد سے جلد شروع کیا جائے۔

معاملے کو لےکر ساحل آن لائن نے  جب بھٹکل اسسٹنٹ کمشنر ساجد ملا سے سوال کیا تو انہوں نے وضاحت کرتےہوئے کہاکہ یہ سحیح ہے کہ قومی شاہراہ پر گڑھے ہونے کی وجہ سے سواریوں کے لئے تکلیف ہورہی ہے۔انہوں نے  اس تعلق سے یقین دلایا کہ وہ  شاہراہ کے ٹھیکداروں سے ضروری اقدامات کرنے کے لئے فوری ہدایات جاری کریں گے۔

ایک نظر اس پر بھی

بھٹکل کا اکیالسواں کورونا سے متاثرہ نوجوان بھی آج کارواراسپتال سے ہوا ڈسچارج؛ کاروار، کمٹہ اور ہوناور سے بھی پانچ لوگ ہوئے رخصت

بھٹکل کا اکیالسواں  کورونا سے متاٖثرہ نوجوان بھی آج   پیر کو کاروار کے کمس اسپتال سے ڈسچارج ہوگیا، جس کے ساتھ ہی کورونا سے متاثرہ بھٹکل کے سبھی لوگ  صحت مند ہوکر اسپتال سے ڈسچارج ہوگئے  اور عافیت کے ساتھ اپنے اپنے گھر پہنچ گئے۔

بھٹکل میں لاک ڈاون میں چھوٹ مگر کنٹیمنٹ زون میں آنے کی وجہ سے عدالت میں صرف ای فائلنگ کی سہولت

گذشتہ ماہ ایک ساتھ بھٹکل میں کورونا کے 30 معاملات سامنے آنے کے بعد بھٹکل کو کنٹیمنٹ زون کے زمرے میں رکھا گیا تھا، مگر اب بھٹکل میں لاک ڈاون میں چھوٹ دی گئی ہے اور دکانوں اور دیگر کاروباری اداروں کو صبح آٹھ بجے سے دوپہر دو بجے تک کھولنے کی اجازت دی گئی ہے، جس کے ساتھ ہی پورے شہر ...

کاروار ریلوے اسٹیشن سے مغربی بنگال کے لئے 967 مزدور وطن روانہ

لاک ڈاؤن کی وجہ سے اترکنڑا ضلع کے مختلف مقامات پر پھنسے ہوئے مغربی بنگال کے 967مہاجر مزدوروں کو اترکنڑا ضلع انتظامیہ نے خصوصی ٹرین کا انتظام کرتے ہوئے پیر کو ریلوے اسٹیشن پر انہیں الوداع کہا۔ ضلع انتظامیہ نے مزدوروں کو ان کے شہر پہنچانے کے لئے ’شرمک ایکسپرس ‘ ٹرین کا انتظام ...

سرکاری حکم نامے کے بعد نوکری کھونے کے خطرہ کے پیش نظرمینگلور میں ہوم گارڈ س نے دیا دھرنا

سرکاری حکم نامے سے مصیبت میں پھنسے ہوم گارڈ س نے سیکڑوں کی تعدا میں جمع ہوکر میری ہیل کے ہوم گارڈ دفتر کے سامنے دھرنا دیتے ہوئے سرکاری حکم نامے پر  سخت  اعتراض جتاتےہوئے حکم نامے کو واپس لینے کا مطالبہ کیا۔

اُڈپی اور دکشن کنڑا اضلاع میں خانگی بسوں کی خدمات آج سے شروع ؛ کرایوں میں اضافہ کا اعلان، 10 روپئے اقل ترین کرایہ

اُڈپی اور دکشن کنڑا اضلاع میں یکم جون سے بس خدمات بحال ہوگئی جو خانگی آپریٹرس چلاتے ہیں۔ کرایوں میں 15 فیصد اضافہ کیا گیا ہے۔ کنارا بس اسوسی ایشن صدر راج ورما بلال نے یہ بات  کہی ۔ 

اللہ یہ کیسی عید، پروردگار ایسی عید پھر کبھی نہ آئے۔۔۔۔ از:ظفر آغا

اللہ، یہ کیسی عید آئی پروردگار! نہ مسجد میں نماز، نہ بازار میں خریداری، نہ چاند رات کی بے چینی، نہ وہ گلے ملنا اور نہ ہی وہ گلے مل کر عطر سے معطر ہو جانا... کچھ بھی تو نہیں۔ گھروں میں بند، سیوئیاں بھی بے مزہ۔ وہ شام کی دعوتیں، وہ گھر گھر جا کر عید ملنا، سب خواب ہو گیا۔ ارے رمضان بھی ...

کووِڈ کے علاج میں ایک نئی پیش رفت۔ کینسر اسپتال کے ڈاکٹروں نے تلاش کیا ایک نیا طریقہ۔ تجرباتی مرحلے پر ہورہا ہے کام!

سر اور گلے کے کینسر اورروبوٹک سرجری کے ماہر ڈاکٹر وشال راؤ کا کہنا ہے کہ ایچ سی جی کینسر اسپتال میں کووِڈ 19کے علاج کے لئے ڈاکٹروں نے ایک نئے طریقے پر کام کرنا شروع کیا ہے جس میں خون کے اندر موجود سائٹوکینس نامی ہارمون کا استعمال کیا جائے گا۔

کورونا وباء بھٹکل والوں کے لئے بن گئی ایک آفت۔فرقہ پرست نہیں چھوڑرہے ہیں مخصوص فرقے کو بدنام کرنے کا موقع، ہاتھ ٹوٹنے کی وجہ سے بچی کو منگلورو لے جانے پر گودی میڈیا نے مچایا واویلا

بھٹکل کے مسلمانو ں کے لئے بیماری بھی فرقہ وارانہ رنگ و روپ لے کرآتی ہے اورانہیں ہر مرحلے پر نئی ہراسانیوں کا شکار ہونا پڑتا ہے۔کورونا کی وباء ایک طرف مرض کے طور پر مصیبت بن گئی ہے تو کچھ فرقہ پرستوں کی طرف سے اس کو متعصبانہ رنگ دیا جارہا ہے اور یہ دوسری مصیبت بن گئی ہے۔

بھٹکل میں کووِڈ کے تازہ معاملات: کیا جنوبی کینرا اور شمالی کینرا ضلع انتظامیہ کی کوتاہی نے بگاڑا سارا کھیل؟ ۔۔۔۔۔۔ سینئر کرسپانڈنٹ کی خصوصی رپورٹ

بھٹکل میں خلیجی ملک سے کورونا وباء آنے اور پھر ضلع انتظامیہ، پولیس، محکمہ صحت اور عوام کے تعاون سے اس پر تقریباً قابو پالینے کے بعد اچانک جو دوسرا مرحلہ شروع ہوا ہے اور بڑی سرعت کے ساتھ انتہائی سنگین موڑ پر پہنچ گیا ہے اس پر لوگ سوال کررہے ہیں کہ کیا ا س کے لئے ضلع جنوبی کینرا ...