بارش کے بعد بھٹکل کی قومی شاہراہ : گڑھوں کا دربار، سواریوں کے لئے پریشانی؛ گڑھوں سے بچنے کی کوشش میں حادثات کے خدشات

Source: S.O. News Service | By Abu Aisha | Published on 15th September 2019, 9:27 PM | ساحلی خبریں | اسپیشل رپورٹس |

بھٹکل:15؍ستمبر(ایس اؤ نیوز) لوگ فورلین قومی شاہراہ  کی تعمیر کو لے کر  خوشی میں جھوم رہے ہیں لیکن شہر میں شاہراہ کا کام ابھی تک  شروع نہیں ہوا ہے، اُس پرستم یہ ہے کہ سواریوں کو پرانی سڑک پر واقع گڑھوں میں سے گرتے پڑتے گزرنے کے حالات پیدا ہوگئے ہیں۔ لوگ جب گڈھوں سے بچنے کی کوشش میں اپنی سواریوں کو دوسری طرف گھماتے ہیں تو پیچھے سے یا آگے سے دوسری سواری کے ذریعے ٹکر مارنے کا خدشہ پیدا ہوجاتا ہے۔

سواریوں اور سواروں کی حفاظت کے پیش نظر  ساحلی پٹی کے دیگر تعلقہ جات کی طرح بھٹکل میں بھی فورلین شاہراہ کی تعمیر کے منصوبہ پر عمل آوری کو دس برس ہونے کو ہیں ، لیکن تعلقہ کے منکولی کے چند جگہوں کے علاوہ  بھٹکل شہر میں فورلین کی تعمیر کاکام ابھی  تک شروع  نہیں ہواہے۔ پچھلے 5برسوں  پہلے شروع کیا گیا شاہراہ کےلئے  نشان زدہ  کام ابھی تک ویسا ہی پڑا   ہے۔ تعمیری کام شروع ہونا تو دور کی بات ، شہری سطح میں شاہراہ کی لمبائی اور چوڑائی بھی ابھی تک طئے نہیں ہو پارہی ہے۔ فورلین  کی تعمیر کے بہانے پرانی قومی شاہراہ کو یوں ہی چھوڑ دیا گیا ہے جس کے نتیجے میں پرانی شاہراہ پر بچھا تارکول نکل کر سڑک کی حالت خستہ ہوگئی ہے۔ جہاں دیکھووہاں گڑھوں کا دربار ہے ، جو سواریوں کے لئے خطرہ بنتا جارہا ہے۔ گڑھے وہ بھی کیسے ؟ بھٹکل سرکاری بس اسٹانڈ کے دونوں گیٹ پر موجود گڑھوں کو دیکھ لیجئے پتہ چلے گا کہ نظا م کس ابتر حالت کو پہنچ گیا ہے۔ تھوڑی سی بار ش پر بھی یہ دونوں گڑھے تالاب نما  شکل اختیار کرلیتے ہیں اور زیادہ بار ش ہوگئی تو سڑک ہے یا تالاب ہے پتہ نہیں چلتا۔گڑھوں سے بچنے کی دھن میں سامنے سے آنے والی سواری سے ٹکرانے کا خوف اور  سڑک پرپھسلنے کا ڈرموجود رہتاہے۔ اس سلسلے میں جب افسران سے گفتگو کریں تو افسران فورلین کی تعمیر کابہانہ گھڑ لیتے ہیں ۔ کلی طورپر شاہراہ ناسور بنتی جارہی ہے۔

 تنگنگنڈی کراس سے منکولی کراس  کے درمیان والی شاہراہ تعلقہ کی سطح پر بہت اہمیت رکھتی ہے۔ متعلقہ علاقے کی شاہراہ پر صرف ہائی وے کی سواریاں ہی نہیں بلکہ شہر کے عوام بھی بھاگ دوڑ کرتے رہتےہیں اورا سی شاہراہ پر اسکولی بچوں کی سواریاں بھی گذرتی  ہیں۔ شاہراہ کی گنجانی اور مسلسل بارش کی وجہ سے تینگنگنڈی سے لے کر منکولی کراس  تک کی شاہراہ پر تارکول نکلتی جارہی ہے، جھلی ، چھوٹے چھوٹے پتھر بکھرے ہوئے ہیں، تھوڑی سی دھوپ اور ہوا چلی تو ماحول گدلا ہو جاتا ہے۔ بارش کی وجہ سے شاہراہ پر جہاں تہاں پانی جمع ہوجاتاہے۔ مان لیں کہ بارش کے بعد شاہراہ کی تعمیر کا کام شروع ہوجاتاہے تب بھی واضح تصویر ابھرنےکے لئے سال دو سال لگنا طئے لگتا ہے۔ ایسے میں عوام  سوال کررہے ہیں  کہ کیا تب تک عوام کو اسی  کچی اور خستہ حال سرک پر ہی بھاگ دوڑ کرنا ہوگا یا  سڑک کی مرمت کی طرف بھی کسی کا دھیان جائے گا ؟  اس تعلق سے عوام یہ بھی سوال اُٹھارہے ہیں کہ شاہراہ تعمیر کرنے والے  ٹھکیدار بڑے لوگ ہونےکی وجہ سے افسران بھی سر نیچے کرکے چلنے لگیں گے تو عوام کا کیا ہوگا؟  عوام اس بات کا مطالبہ کررہے ہیں کہ اس سلسلے میں افسران سڑک کی مرمت کی طرف حتمی فیصلہ لیں یا پھر  فورلائین تعمیر کا کام جلد سے جلد شروع کیا جائے۔

معاملے کو لےکر ساحل آن لائن نے  جب بھٹکل اسسٹنٹ کمشنر ساجد ملا سے سوال کیا تو انہوں نے وضاحت کرتےہوئے کہاکہ یہ سحیح ہے کہ قومی شاہراہ پر گڑھے ہونے کی وجہ سے سواریوں کے لئے تکلیف ہورہی ہے۔انہوں نے  اس تعلق سے یقین دلایا کہ وہ  شاہراہ کے ٹھیکداروں سے ضروری اقدامات کرنے کے لئے فوری ہدایات جاری کریں گے۔

ایک نظر اس پر بھی

کاروارکے بیت کول میں آدھی رات کو ٹرک ڈرائیوروں پر حملہ۔ نقدی اور موبائل لوٹنے کے ساتھ لاریوں کو پہنچایاگیا نقصان۔پولیس اسٹیشن سے قریب ہی پیش آئی واردات

بیت کول ماہی گیری بندر کے علاقے میں پولیس اسٹیشن سے چار قدم کے فاصلے پر جمعرات کی شب میں شرپسندوں کے ذریعے بیرونی ریاستوں سے تعلق رکھنے والے ٹرک ڈرائیوروں کو لوٹنے اور گاڑیوں کو نقصان پہنچانے کی واردات پیش آئی ہے۔

افسران کی مبینہ ملی بھگت سے بھٹکل میں حد سے بڑھ گئی پتھروں کے لئے غیر قانونی کھدائی۔ منڈلّی کی پہاڑی کو نابود کرنے کی ہورہی ہے تیاری

بھٹکل میں قانون کی پاسدار ی کرنے والے کئی اسسٹنٹ کمشنرز اور اور کئی تحصیلدار تعینات کیے جاچکے ہیں، لیکن یہاں پر چل رہے ریت اور پتھروں کے غیر قانونی کاروبار پر کسی نے بھی پوری طرح روک لگائی ہو، ایسا دیکھنے میں نہیں آیا۔ بلکہ عوام کا ااحساس تو یہ ہے کہ کچھ افسران کی ملی بھگت سے ہی ...

شیرور میں کار اور لاری کی ٹکر۔کار ڈرائیور ہلاک۔ ایک مسافر شدید زخمی

پڑوسی علاقہ شیرور میں    نیشنل ہائی وے پرواقع سنکد گنڈی پُل کے قریب جمعرات   شام کو پیش آئے کار اور لاری کے تصادم میں کار ڈرائیور موقع پر ہی ہلاک ہوگیا ، جبکہ ایک مسافر شدید زخمی ہوگیا  جسے علاج کے لئے قریبی  اسپتال میں منتقل کیا گیا ہے۔

افسران کی مبینہ ملی بھگت سے بھٹکل میں حد سے بڑھ گئی پتھروں کے لئے غیر قانونی کھدائی۔ منڈلّی کی پہاڑی کو نابود کرنے کی ہورہی ہے تیاری

بھٹکل میں قانون کی پاسدار ی کرنے والے کئی اسسٹنٹ کمشنرز اور اور کئی تحصیلدار تعینات کیے جاچکے ہیں، لیکن یہاں پر چل رہے ریت اور پتھروں کے غیر قانونی کاروبار پر کسی نے بھی پوری طرح روک لگائی ہو، ایسا دیکھنے میں نہیں آیا۔ بلکہ عوام کا ااحساس تو یہ ہے کہ کچھ افسران کی ملی بھگت سے ہی ...

معصوم بچوں کو روتا چھوڑ کر بھٹکلی بہو کو کیا گیا پاکستان جانے پر مجبور؛ خط سوشیل میڈیا پر وائرل؛ پڑھنے والوں کی انکھوں سے رواں ہوئے آنسو؛ کیا کوئی نہیں جو اس کی مدد کرسکے ؟

پاکستان سے بیاہ کر آئی  قوم نوائط کی  ایک بہو کا شوہر جب دہشت گردی کے الزام میں جیل چلا گیا تو اُس پر کس طرح کے حالات آئے اورجب اس خاتون کا ویزا  کینسل کرکے اُسے  اپنے تین معصوم اور چھوٹے بلکتے بچوں کو  بھٹکل  چھوڑ کر واپس اُس کے وطن  بھیجا گیا تو اُس مظلوم پر کس طرح کی قیامت ...

جب کشمیر ہمارا تو کشمیری ہمارے کیوں نہیں؟ آز: ڈاکٹر محمد نجیب قاسمی سنبھلی

کشمیر کے متعلق مغل شہنشاہ ظہیر الدین بابر نے وہاں کی قدرتی خوبصورتی اور دلکش مناظر کو دیکھ کر کہا تھا کہ کشمیر زمین پر جنت کے مانند ہے۔ ہمالیہ اور پیرپنچال کے پہاڑی سلسلوں کے درمیان واقع کشمیر کی وادی کئی دریاؤں سے زرخیز ہونے والی سرزمین ہے۔ یہ وادی اپنے حسن کے باعث آج بھی پوری ...

ضلع شمالی کینرا میں وبائی صورت اختیار کرنے والی چمڑی کی بیماری۔ علاج کارگر نہ ہونے سے عوام پریشان

محکمہ صحت کی طرف سے یوں تو وبائی امراض پر قابو پانے کے لئے مختلف پروگرا م او ر اسکیمیں موجود ہیں۔ اس میں چمڑی کے امراض میں صرف جذام (کوڑھ/لیپرسی)کے علاج اور روک تھام کی گنجائش ہے۔

یلاپور ضمنی انتخاب میں عوام کے لئے یہ سمجھنا مشکل ہوگیا ہے کہ کس کا تعلق کس پارٹی سے ہے

ریاستی اسمبلی انتخابات کو مکمل ہوئے ابھی دوسال بھی پورے نہیں ہوئے تھے کہ بعض اراکین اسمبلی کی اپنی پارٹیوں سے بغاوت او ر استعفے کے بعد دوبارہ ضمنی انتخا بات کا موسم آگیا ہے۔ اس میں ضلع شمالی کینرا کا یلاپور اسمبلی حلقہ بھی ہے۔

دبئی کے مشہور و معروف تاجر بی آر شیٹی کا منصوبہ۔کمٹہ میں ملٹی اسپیشالٹی ہاسپٹل کا قیام۔کیاجلد پورا ہوگا ضلع کے عوام کا خواب؟!

ضلع شمالی کینرا میں ایک جدید سہولیات والے اسپتال کی ضرورت بہت شدت سے محسوس کی جارہی ہے۔ ایک عرصے سے اس سلسلے میں تجاویز اور منصوبے مختلف اداروں کی جانب سے زیر غور رہے ہیں۔