بہار میں بچوں کی موت کا معاملہ: سپریم کورٹ نے تشویش ظاہر کی، مرکز، بہار اور یو پی حکومت سے سات دنوں میں مانگا جواب 

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 24th June 2019, 11:16 PM | ملکی خبریں |

نئی دہلی، 24 جون (ایس او نیوز/آئی این ایس انڈیا) بہار میں چمکی بخار سے بچوں کی موت معاملے پر سپریم کورٹ نے تشویش ظاہر کی ہے۔بچوں کی موت کے معاملے پر دائر درخواست پر سماعت کرتے ہوئے سپریم کورٹ نے مرکزی، بہار اور یوپی حکومت سے سات دنوں میں جواب مانگا ہے۔ کورٹ نے کہا کہ بخار سے جن کی موت ہوئی ہے، وہ سب کے سب بچے ہیں۔سپریم کورٹ نے تشویش ظاہر کرتے ہوئے کہا کہ ہم نے رپورٹ دیکھی ہے لوگ گاؤں چھوڑ رہے ہیں۔سپریم کورٹ نے جن تین چیزوں پر جواب مانگا ہے، ان میں معقول صحت کی خدمات، غذائیت اور صفائی شامل ہے۔ساتھ ہی عدالت نے کہا کہ یہ بنیادی حقوق کا معاملہ ہے۔حکومتوں نے اس سے نمٹنے کے لئے کیا اقدامات کئے ہیں؟ بتا دیں ایکیوٹ انسیفلاٹس سنڈروم سے ہو رہی بچوں کی موت معاملے کو لے کر سپریم کورٹ میں پٹیشن داخل کی گئی تھی۔مفاد عامہ کی عرضی میں ریاست اور مرکزی حکومت کو علاج کے پختہ انتظامات کرنے کی ہدایت دیئے جانے کی مانگ کی گئی تھی۔داخل مفاد عامہ کی عرضی میں کہا گیا ہے کہ بہار حکومت بیماری کو پھیلنے سے روکنے میں ناکام رہی ہے لہٰذا کورٹ اور مرکزی حکومت معاملے میں دخل دے۔ساتھ ہی بہار حکومت اور مرکزی حکومت کو ہدایت دی جائے کہ وہ متاثرین کے علاج کے لئے بہار میں تقریباً500 آئی سی یو اور موبائل آئی سی یو کا بندوبست کرے۔
 

ایک نظر اس پر بھی

یوپی اسمبلی: پرینکا گاندھی کو سون بھدر جانے سے روکنے اور حراست پر زَبردست ہنگامہ

ریاستی حکومت کے ذریعہ کانگریس جنرل سکریٹری پرینکا گاندھی واڈرا کو سون بھد رجانے سے روکنے، انہیں 27 سے زیادہ گھنٹوں تک حراست میں رکھنے و ریاست میں ایس پی حامیوں کے ہوئے رہے قتل پر یو پی اسمبلی میں کانگریس و ایس پی اراکین نے جم کر ہنگامہ کیا۔

مودی حکومت نے لوک سبھا میں ’آر ٹی آئی‘ ختم کرنے والا بل پیش کیا: کانگریس

  کانگریس نے الزام لگایا ہے کہ ’کم از کم گورنمنٹ اور زیادہ سے زیادہ گورننس‘ کی بات کرنے والی مرکزی حکومت لوگوں کے اطلاعات کے حق کے تحت حاصل حقوق کو چھین رہی ہے اور اس قانون کو ختم کرنے کی کوشش کررہی ہے۔