مہاراشٹراکے مسلمانوں نے زکوٰۃ کی رقم سے سرکاری اسپتال کو عطیہ میں دیاآئی سی یو یونٹ۔ وزیر اعلیٰ نے کی مسلمانوں کی ستائش

Source: S.O. News Service | Published on 28th May 2020, 9:19 PM | ملکی خبریں | اسپیشل رپورٹس |

ممبئی،28؍مئی (ایس او نیوز) ایچل کرنجی مہاراشٹرا کا وہ علاقہ ہے جہاں سب سے زیادہ کپڑے تیار کیے جاتے ہیں اسی لئے اس شہر کو ’مانچسٹر آف مہاراشٹرا‘ کے نام سے پہچانا جاتا ہے۔

2.88لاکھ کی آبادی والے اس شہر میں 78.32فی صد آبادی ہندوؤں کی ہے۔ جبکہ 15.98فی صد مسلمان رہتے ہیں۔ یہاں کے لوگوں کا عام پیشہ کپڑا سازی ہے۔جب سے کووِڈ وباء پھیلی ہے سرکاری اسپتالوں میں مریضوں کے علاج کے لئے سہولت نہ ہونے سے بڑی مشکلات پیش آرہی ہیں۔ یہاں پر واقع اندراگاندھی میموریل (آئی جی ایم) ہاسپٹل میں بھی مریضوں کے علاج کے لئے درکار دیگر سہولتو ں کے علاوہ آئی سی یو یونٹ بھی نہ ہونے سے عوام کو بڑی دشواری پیش آرہی تھی۔خیال رہے کہ پورے مہاراشٹرا میں کووِڈ نے قہر مچارکھا ہے اس وباء کے دور میں بھی سیاست داں حکومت گرانے اور بچانے کے کھیل میں الجھے ہوئے ہیں۔یا پھر سوشیل میڈیا پر فرقہ وارنہ اشتعال انگیزی کا بازار گرم کیا جارہا ہے۔ جس کی وجہ سے مریضوں کے علاوہ مہاجر مزدوروں کی مشکلات میں آئے دن اضافہ ہوتا جارہا ہے۔

ایسے بحرانی دور میں ایچل کرنجی نامی ایک چھوٹے سے شہر سے مسلمانوں نے  رمضان کی زکوٰۃ اور صدقات کومفاد عامہ کے لئے استعمال کرنے کا فیصلہ کیا اور 36لاکھ روپے کی بھاری رقم اکٹھا کرکے ایک جدید سہولتوں والا آئی سی یو یونٹ اندراگاندھی میموریل ہاسپٹل کو عطیہ میں دے دیا۔ جس میں علاج کے انتظامات والے10 بستروں کا ایک وارڈ شامل ہے۔

اس شہر کے ایک باشندے اَتُل نے بتایا کہ:”آئی جی ایم ہاسپٹل بہت ہی بدحالی کا شکار تھا۔ضروری آلات، اسٹاف اور دیگر سہولتیں موجود نہ رہنے کی وجہ سے مریض وہاں جانے سے خوف کھاتے تھے۔ حالانکہ ابھی ایچل کرنجی میں کووِڈ 19کے زیادہ معاملات سامنے نہیں آئے ہیں، لیکن آئندہ دنوں میں مریضوں کی تعداد بڑھنے کا امکان موجود ہے۔اب یہ جو نئی سہولت فراہم کی گئی ہے اس سے ان غریب مریضوں کو بڑا فائدہ ہوگا جو پرائیویٹ اسپتالوں کا خرچ برداشت کرنے کی سکت نہیں رکھتے۔“

مہاراشٹرا کے وزیر اعلیٰ ادھو ٹھاکرے نے ایچل کرنجی کے مسلمانوں کے اس کارخیر اور بہترین عملی اقدام کی دل کھول کر ستائش کی ہے۔انہوں نے ایک ویڈیوکانفرنس پیغام میں کہا: ”ایچل کرنجی کے مسلمانوں نے اس ملک کے دوسرے لوگوں کو ایک راستہ دکھایا ہے۔اب تک ہم نے پوری ہمت اور صبر کے ساتھ کورونا وائرس کو قابو میں کیا ہے۔آئندہ اس کے لئے عوام کی شرکت بھی ضروری ہوگئی ہے۔مسلم طبقے نے اس کی بہترین مثال قائم کی ہے۔اور بتادیا ہے کہ رمضان کا تہوار اس طرح بھی منایا جاسکتا ہے۔“

ایک نظر اس پر بھی

ذات پر مبنی مردم شماری کے لیے نتیش کمار نے پی ایم مودی کو لکھا خط

بہار کے وزیر اعلیٰ نتیش کمار نے گزشتہ دنوں کہا تھا کہ وہ ذات پر مبنی مردم شماری کے تعلق سے وزیر اعظم نریندر مودی کو خط لکھیں گے، اور اب ایسی خبریں سامنے آ رہی ہیں کہ انھوں نے نریندر مودی کو خط لکھ کر ملاقات کے لیے وقت مانگا ہے۔ ملاقات کر کے وہ وزیر اعظم کو ذات پر مبنی مردم شماری ...

جب تک ’ہم دو، ہمارے دو‘ کی حکومت ہے، نوجوانوں کو روزگار نہیں ملے گا: راہل گاندھی

یوتھ کانگریس کے ذریعہ آج منعقد پارلیمنٹ گھیراؤ پروگرام میں کانگریس کے سابق صدر راہل گاندھی نے بھی شرکت کی اور اس موقع پر انھوں نے مرکز کی مودی حکومت کو زوردار انداز میں تنقید کا نشانہ بنایا۔ پارلیمنٹ گھیراؤ پروگرام کے دوران اپنی تقریر میں راہل گاندھی نے کہا کہ ’’اس ملک ...

’پٹرول، ڈیزل اور سلنڈر، مہنگا کر کے چھپ گیا نریندر‘، یوتھ کانگریس کا مودی حکومت پر حملہ

پیگاسس، پٹرول-ڈیزل، گیس سلنڈر کی آسمان چھو رہی قیمتوں اور مہنگائی کو لے کر کانگریس لگاتار مرکزی حکومت پر حملہ آور ہے۔ اس تعلق سے جمعرات کو یوتھ کانگریس نے مرکزی حکومت کے خلاف سڑکوں پر اتر کر مظاہرہ کیا۔ یوتھ کانگریس کارکنان بڑی تعداد میں رائے سینا روڈ پر ہاتھوں میں بینر اور ...

کشمیر کی خصوصی آئینی حیثیت کی بحالی کے لیے پُرامن جدوجہد جاری: فاروق عبداللہ

 نیشنل کانفرنس کے صدر و رکن پارلیمان ڈاکٹر فاروق عبداللہ نے کہا کہ ان کی جماعت جموں و کشمیر کی خصوصی آئینی حیثیت کی بحالی کے لئے پرامن جمہوری اور قانونی جدوجہد میں مصروف ہے۔ انہوں نے یہ بات جمعرات کو یہاں پانچ اگست 2019 کی برسی کے موقع پر نیشنل کانفرنس ہیڈکوارٹرز نوائے صبح ...

پیگاسس جاسوسی: ’اگر میڈیا رپورٹوں میں صداقت ہے تو انتہائی سنگین معاملہ ہے‘ سپریم کورٹ

 سپریم کورٹ نے جمعرات کے روز پیگاسس جاسوسی معاملہ کی آزادانہ تحقیقات کرانے کی درخواست کرنے والی 9 عرضیوں پر بیک وقت سماعت کی۔ ان عرضیوں میں ایڈیٹرس گلڈ آف انڈیا اور سینئر صحافیوں این رام اور ششی کمار کی عرضیاں بھی شامل ہیں۔ عدالت عظمیٰ نے کہا کہ اگر میڈیا رپورٹوں میں صداقت ہے ...

بھٹکل میں کووڈ کی تیسری لہر کی دہشت اور ویکسین کی قلت ۔ ویکسین سینٹرس کا چکر لگا کر عوام لوٹ رہے ہیں خالی ہاتھ

کووڈ کی دوسری لہر کچھ تھم تو گئی ہے مگر عوام کے اندر تیسری لہر کا خوف اور ویکسین نہ ملنے کی وجہ سے دہشت کا ماحول بنتا جارہا ہے۔ جبکہ حکومت کی  طرف سے  18سال سے زائد عمر کے تمام افراد کا ویکسینیشن کرنے کا بھروسہ دلایا گیا تھا ۔      لیکن فرسٹ ڈوز کی بات تو دور، فی الحال پہلا ڈوز لے ...

بھٹکل : بڑے جانوروں کی قربانی پر سرکاری پابندی کے پس منظر میں بکروں کا کاروبار زوروں پر

بقر عید کی آمد کے ساتھ بھٹکل میں بڑے پیمانے پر بڑے جانوروں کی قربانی ہمیشہ ایک معمول رہا ہے ۔ مگر امسال ریاستی حکومت کی پابندیوں کی وجہ سے بڑے جانور لانے اور فروخت کرنے میں جو رکاوٹیں پیدا ہورہی ہیں اس پس منظر میں بکرے کی منڈی بہت زیادہ اچھال پر آگئی ہے۔

کوویڈ کا پیغام انسانیت کے نام۔۔۔۔ (از:۔مدثراحمد، ایڈیٹر آج کا انقلاب، شموگہ)

کوروناوائرس کی وجہ سے جہاںوباء دنیابھرمیں تیزی سے پھیلتی گئی اور چندہی مہینوں میں کروڑوں لوگ اس وباء سے متاثرہوئے،لاکھوں لوگ ہلاک ہوئے،وہیں اس وباء نےپوری انسانیت کو کئی پیغامات دئیے ہیں جو قابل فکر اور قابل عمل باتیں ہیں۔

بنگلورو: ’میڈیکل ٹیررزم ‘ کا ٹائٹل دینے والی بی جے پی اب خاموش کیوں ہے ؟:کانگریس کا سوال

بیڈ بلاکنگ دھندے کو ’’میڈیکل ٹیررزم ‘‘ کا نیا ٹائٹل دینے والی بی جےپی اب خاموش  کیوں ہے، اس سلسلے میں کوئی زبان  کیوں نہیں کھول رہا ہے، یہ سوال   ریاستی کانگریس نے بی جے پی سے کرتے ہوئے  جواب مانگا ہے۔

فائیوجی کا ریڈئیشن نقصان دہ نہیں ، بلکہ ٹیکنالوجی کا بےجا استعمال نقصان دہ: فائیوجی کے ماہر انجنئیر محمد سلیم نے فراہم کیں معلومات

فائیو جی ٹکنالوجی ان دنوں عوام کے درمیان بحث کا موضوع ہے۔ کورونا وبا کو ایک سازش قرار دیتے ہوئے لوگوں نے اس کے تار 5جی ٹکنالوجی سے جوڑنے کی بھی کوشش کی ہے۔یہ سارا معاملہ کیا ہے اسے سمجھنے کے لیے نائب امیر جماعت اسلامی ہند پروفیسر محمد سلیم انجینئر سے  مشرف علی کی بات چیت کا ...

کرونا ویکسین اور افواہوں کا بازار ؛ افسوسناک بات یہ ہے کہ بے بنیاد افواہیں مسلم حلقوں میں زیادہ اڑائی جا رہی ہیں ۔ ۔۔۔ آز: سہیل انجم

مئی کا مہینہ ہندوستان کے لیے انتہائی خطرناک ثابت ہوا۔ اس مہینے میں کرونا کی دوسری لہر نے ایسی تباہی مچائی کہ ہر شخص آہ و بکا کرنے پر مجبور ہو گیا۔ اپریل اور مئی کے مہینے میں کرونا سے ایک لاکھ ساٹھ ہزار افراد ہلاک ہوئے۔ نہ تو شمشانوں میں چتا جلانے کی جگہ تھی اور نہ ہی قبرستانوں ...