بھٹکل اور ساحلی کرناٹکا سمیت دنیا کےکئی خطوں میں عید قرباں مذہبی جوش وخروش مگر محتاط طور پر منائی گئی

Source: S.O. News Service | By I.G. Bhatkali | Published on 31st July 2020, 11:59 PM | ساحلی خبریں |

بھٹکل 31 جولائی (ایس اونیوز)  کورونا وائرس کے پیش نظراحتیاطی تدابیر پر عمل درآمد کو  یقینی بناتے ہوئے آج ہندوستان کے ساحلی علاقوں بالخصوص بھٹکل، کنداپور، اڈپی، مینگلور سمیت ریاست کیرالہ میں عید الاضحیٰ کا تیوہار مذہبی جوش وخروش کے ساتھ منائی جارہی ہے۔ آج جمعہ کو خلیجی ممالک، متحدہ عرب امارات، سعودی عرب، بحرین، قطر، امریکہ،  ترکی اور یورپ کے کئی ملکوں کے ساتھ ساتھ  افغانستان، مصر، کویت، اردن، ایران، مصر اور ملائیشیا میں بھی  عید الاضحیٰ منائی جا رہی ہے۔

کورونا وبا کو دیکھتے ہوئے مسجد الحرام ، مسجد نبوی ﷺ سمیت مختلف مساجد میں نمازِ عید کے محتاط اجتماعات منعقد کئے گئے۔  حجاج سمیت دیگر لوگوں کی خاصی  تعداد نے دوگانہ ادا کیا۔

کرناٹک میں ویسے تو عیدگاہوں میں نمازکی اجازت نہیں دی گئی ہے، لیکن بھٹکل اور ساحلی کرناٹکا میں آج صبح سے جاری موسلادھار بارش کی وجہ سے بھی عیدگاہوں میں نماز نہیں پڑھی گئی۔ البتہ بیس سے زائد جامع مساجد میں ایک دوسرے سے کافی فاصلہ  رکھتے ہوئے اور ماسک  کے استعمال کے ساتھ  عید کی دوگانہ ادا کی گئی۔

بھٹکل بڑی جامع مسجد میں مولانا عبدالعلیم خطیب ندوی، خلیفہ جامع مسجد میں مولانا خواجہ معین الدین اکرمی مدنی، نوائط کالونی تنظیم ملیہ جمعہ مسجد میں مولانا انصار خطیب مدنی، مخدوم کالونی مخدومیہ جمعہ مسجد میں مولانا نعمت اللہ عسکری ندوی اور مدینہ کالونی مدینہ جمعہ مسجد میں مولانا ابوبکر صدیق خطیب ندوی نے عید کی دوگانہ پڑھائی۔

علماء نے اپنے خطبہ میں اس بات پر زور دیا کہ ہم اللہ کے حضور جانوروں کی قربانی اللہ کو راضی کرنے کے لئے دیتے ہیں، ہم کسی کو تکلیف دینے کے لئے جانور ذبح نہیں کرتے، اسی لئے مسلمانوں سے بار بار تاکید کی جاتی ہے کہ وہ دکھاوے کے لئے قربانی نہیں کریں، اللہ اور اللہ کے رسول کے بتائے ہوئے طریقے پر قربانی کریں۔  اس موقع پر  خطیب حضرات نے حضرت ابراہیم ؑ  اور حضرت اسماعیل ؑ کے واقعے کو بھی پیش کیا کہ کس طرح   آج بھی حضرت ابراہیم ؑ  کی اس یاد کو تازہ کیا جاتا ہے۔

کورونا وباء کی وجہ سے اس بار بھٹکل میں بڑے جانوروں کی شدید کمی نظر آئی، البتہ  کافی جگہوں پر لوگ بکرے خریدتے پائے گئے۔

ایک نظر اس پر بھی

بھٹکل انجمن ڈگری کالج اینڈ پی جی سنٹر میں ’’یوم ِ دستور ‘‘ پروگرام کاانعقاد : ہر شہری کو دستور کا شعور لازمی ہے

ہمیں اپنے حقوق حاصل کرنے اور اپنے فرائض کو ادا کرنے کے لئے  دستور کا شعور ہونا ضروری ہے ۔ بھٹکل سرکاری  پی یو کالج کی پرنسپال ڈاکٹر بھاگیرتھی نے ان خیالات کااظہار کیا۔

سرسی کو علاحدہ ضلع بنانے کے متعلق اسپیکر کاگیری سے بات چیت کرونگا: ضلع نگراں کارو زیر شیورام ہیبار

ابھی تک اترکنڑا ضلع سالم و غیر منقسم ہے، جب کبھی ضلع کو تقسیم کرنا ہوتا ہے تو ضلع کے عوامی نمائندوں اور باشعور افراد کے ساتھ صلاح ومشورہ لازمی ہوجاتاہے۔ ودھان سبھا اسپیکر وشویشور کاگیری نے سرسی ضلع کی ضرورت کے متعلق جو بیان دیا ہے اس سلسلے میں ان سے  گفتگو کرتاہوں، اس کے بعد ...

چکمگلورو میں المناک حادثہ: تالاب میں تیرنے پہنچے پانچ افراد موت کا شکار۔ شادی کا گھر بن گیا ماتم کدہ؛ ایک کو بچانے کی کوشش میں چار غرق

چکمگلورو کے وستارگاؤں میں ایک المناک حادثہ پیش آیا جس میں ہیرے کیرے نامی    تالاب کے اندر تیرنے کے لئے گئے  ہوئے   پانچ افراد  ڈوبنے کی وجہ سے  بیک وقت موت کا شکارہوگئے ۔مہلوکین کی شناخت سندیپ، راگھویندرا، سدیپ، دلیپ اور دیپک کے طور پر کی گئی ہے۔

ارے بائیل گھاٹ پر کانکریٹ روڈ بنانے 52کروڑر وپئے کا منصوبہ مرکزی حکومت کو ارسال : شیورام ہیبار

ضلع نگراں کار وزیر شیورام ہیبار نے  ارے بائیل سے لے کر اڈگوندی تک کی 16کلومیٹر قومی شاہراہ 63کو مکمل طورپر کانکریٹ سڑک میں منتقل کرنے کے لئے خصوصی توجہ دیتے ہوئے  52کروڑر وپئے کا منصوبہ تشکیل دے کر منظوری کے لئے مرکزی حکومت کو بھیج دیا ہے۔

بھٹکل: ساحلی اضلاع کے مختلف مقامات پر کسان مخالف ترمیم شدہ قوانین کو فوراً واپس لینے کا مطالبہ لےکر ٹریڈیونینوں کا احتجاج

سینٹر آ ف انڈین ٹریڈ یونینس (سی آئی ٹی یو ) بھٹکل تعلقہ یونٹ  سمیت  ساحلی اضلاع کے کئی مقامات پرمختلف کسان اور مزدور سنگھ نے  تحصیلدار کے توسط سے وزیر اعظم نریندرا مودی کے نام ایک میمورنڈم دیا جس میں مانگ کی گئی ہے کہ حال ہی میں منظور کیے گئے  عوام ،مزدور اور کسان مخالف ترمیم ...

مرڈیشور ساحلی کنارے سےکشتیاں ہٹانے کا مسئلہ :سرکاری انتظامیہ اور ماہی گیر وں کے بیچ ہوگئی تیز تکرا ر۔ پیدا ہوگئے ہیں تصادم کے آثار

مشہور سیاحتی مرکز مرڈیشور کے ساحل پر ٹورازم کو فروغ دینے کے لئے ضلع انتظامیہ نے جو ترقیاتی منصوبہ بنایا ہے اس کے تحت کچھ تعمیراتی کام بھی کیے جارہے ہیں اور اسی کے ساتھ ساحلی کنارے پر چھوٹے چھوٹے دکانداروں کو جگہ فراہم کرنا طے پایا ہے۔ لیکن اس کے لئے ساحلی کنارے پر اپنی کشتیاں ...