مرشدآباد قتل معاملہ: مغربی بنگال پولیس نے کہا، اس واقعہ کا سیاست سے کوئی تعلق نہیں 

Source: S.O. News Service | Published on 12th October 2019, 8:00 PM | ملکی خبریں |

نئی دہلی ،12/اکتوبر(ایس او نیوز/آئی این ایس انڈیا) مغربی بنگال کے مرشدآباد میں ایک ہی خاندان کے تین افراد کے قتل کے معاملے میں بڑھتے سیاسی تنازعہ کے درمیان ریاست کی پولیس نے اپنی بات رکھنے کے لئے ٹوئٹر کا سہارا لیا ہے۔آپ کو بتا دیں کہ مرشدآباد کے واقعہ کے بعد نادیہ ضلع میں بھی ایک سادھو کا قتل ہو گیا تھا۔ بتایا جا رہا ہے کہ سال 2021 میں ریاست میں اسمبلی انتخابات ہونے والے ہیں جس سے سیاسی سرگرمی بڑھ گئی ہے اور جب سے بی جے پی نے لوک سبھا انتخابات میں 16 سیٹیں جیتی ہیں اس کے بعد سے ایسے واقعات اور بڑھ گئے ہیں۔مرشدآباد کے معاملے میں ایک سرکاری ٹیوٹر، اس حاملہ بیوی اور بیٹے کو قتل کر دیاگیاتھا۔جبکہ نادیہ ضلع میں 42 سال کے سادھو کا قتل کیا گیا جو پیر سے غائب تھے۔بی جے پی کے رہنما جگن ناتھ حکومت کا کہنا ہے کہ وہ بی جے پی کارکن تھے ان کی سیاسی تعلقات کے چلتے قتل کیا گیا ہے۔اس بات کا مرکزی وزیر بابل سپریو نے بھی حمایت کی ہے۔ بی جے پی کی جانب سے لگائے جا رہے الزامات کے درمیان مرشدآباد کے واقعہ کو لے کر مغربی بنگال پولیس نے ٹوئٹر پر صفائی دی ہے کہ اس واقعہ کا سیاست سے کوئی لینا دینا نہیں ہے۔ پولیس کا کہنا ہے کہ مرشدآباد کے کنائی گنج میں ایک ہی خاندان کے تین افراد کا قتل المناک واقعہ ہے۔اس معاملے میں تحقیقات شروع ہوتے ہی دو افراد کو حراست میں لیا گیا ہے اور ان سے پوچھ گچھ کی جا رہی ہے۔جانچ میں پایا گیا ہے کہ متوفی بندھوپرکاش پال کسی انشورنس اور چین کی کمپنی کے لئے بھی کام کرتے تھے اورمالیاتی چیلنجوں سے کا سامنا کر رہے تھے۔ان کے خاندان نے بھی ان کا کسی بھی سیاسی گروپ سے منسلک ہونے سے انکار کیا ہے۔ایک ڈائری میں ملے نوٹ میں پایا گیا ہے کہ خاندان میں باہمی اختلافات تھے۔سی آئی ڈی کو بھی تحقیقات میں شامل ہونے کے لئے کہا گیا ہے۔ابتدائی جانچ میں پایا گیا ہے کہ یہ واقعہ ذاتی دشمنی کے ساتھ منسلک ہے۔اس کا سیاست سے کوئی تعلق نہیں ہے۔

ایک نظر اس پر بھی

بابری مسجد معاملے پر سپریم کورٹ کے فیصلہ سے ناخوش پاپولر فرنٹ کی طرف سے بھی نظر ثانی کی عرضی داخل

بابری مسجد حق ملکیت معاملے میں سپریم کورٹ کی آئینی بنچ کے فیصلے کو چیلنج کرتے ہوئے، پاپولر فرنٹ آف انڈیا نارتھ زون کے سکریٹری انیس انصاری نے بھی 9/ڈسمبر بروز پیر کو سپریم کورٹ میں نظر ثانی کی عرضی داخل کی ہے۔ پی ایف آئی کی جانب سے جاری کردی پریس ریلیز میں بتایا گیا ہے کہ رویو ...