قیمتوں میں استحکام نہیں ہونے سے  بندہوتے چاول مِل :اترکنڑا ضلع میں 30سے زائد چاول گرنی بند

Source: S.O. News Service | By Abu Aisha | Published on 12th January 2020, 8:09 PM | ساحلی خبریں |

سرسی  :12؍ جنوری (ایس اؤ نیوز)  باربار قیمتوں میں گراوٹ کو دیکھتے ہوئے دھان کےکھیت تجارتی فصلیں سپاری ، جوار میں منتقل ہو رہی  ہیں اور سرکاری اسکیم انّیابھاگیہ میں چاول کی کمی کی جانے سے اسی پر انحصار کئے ضلع کے سیکڑوں چاول کی گرنیاں(Mills)بند ہونے کے درپے  ہیں۔

گزشتہ ایک دہے سے اترکنڑا ضلع بھر میں دھان کے کھیت سپاری کے باغات میں منتقل ہوئے ہیں، قیمت نہیں ملنے سے دھان کی فصل نہیں ہونے سے  بعض مقامات پر کھیت بنجر ہورہےہیں، جس کے نتیجےمیں چاول کی گرنی کے مالکان مشکلات میں ہیں۔ پچھلے تین برسوں سے دھان کی فصل متاثر ہورہی ہے، فصل کی کمی  اورا نیا بھاگیہ اسکیم کی وجہ سے چاول کے ملس میں دھان کم آرہی ہے، جس کی وجہ سے ضلع کی 30 ملس دروازہ بند کرچکی ہیں تو جاری گرنیاں  بھی آج ، کل  کے خدشے میں ہیں۔

سخت مشقت ، کم قیمت : دھان اُگانے کے لئے بہت زیادہ مشقت کرنی پڑتی ہے، ساتھ میں دن بدن اس کی نگرانی کے اخراجات میں اضافہ بھی ہورہاہے۔ ایک کوئنٹل دھان کی قیمت 1300سے 1400روپئے ہے، اس قیمت پر دھان فروخت کریں تو مزدوروں کو دینے تک رقم نہیں بچتی ۔ حالات کو دیکھتے ہوئے اکثر دھان کے کسان تجارتی فصلیں سپاری، گیہوں ، جوا ر کی فصل کی طرف توجہ دے رہے ہیں۔ اس لئے مارکیٹ  میں دھان کی کمی ہورہی ہے۔ اس کے ساتھ ساتھ راشن چاول کو بھی دوسری جگہوں سے درآمد کئے جانے سے مقامی چاول کی مانگ جاتی رہی۔ فطری طورپر دھان کے کسان اس میدان سے مایوس ہوکر دوسری طرف رخ کئے ہوئےہیں۔

ضلع کی  قریب 124چاول کی گرنیاں (ملس) میں سے 40فی صد بند ہوچکی ہیں۔ صرف سرسی میں پچھلے دس برسوں میں 8سے زائد چاول کی ملس نے دروازہ بند کردیا ہے۔ کل تک یومیہ 70-80تھیلے دھان ملس کو آتی تھیں اب صرف 25-30تھیلے دھان ہی پہنچ رہی ہے۔ قابل غور ہے کہ ان حالات کے پیش نظر ضلع میں  پچھلے دس برسوں میں  ایک بھی نئی چاول کی گرنی کی شروعات نہیں ہوئی ہے۔

ایک نظر اس پر بھی

اُڈپی میں کووڈ۔19 جانچ سنٹر قائم ، روزانہ 300 نمونوں کی جانچ ممکن

ساحلی کرناٹک کے اُڈپی شہر میں 45 لاکھ کی لاگت سے ہائی ٹیک مکمل ایئر کنڈیشنڈ کووڈ۔19 جانچ سنٹر قائم کردیا گیا ہے۔ اس لیب کیلئے ایک  مائکرو بیالوجسٹ اور 8 لیب ٹیکنیشن کا بھی تقرر کردیا گیا ہے۔ ان احباب نے بنگلورو کے نمہانس اسپتال میں تربیت حاصل کی ہے۔

کیا بھٹکل میں کورونا کے معاملات قابو میں آگئے ؟ ضلع میں پھر آئے 33 پوزیٹیو

اللہ کا شکرہے کہ بھٹکل میں کورونا کے معاملات تھمتے نظر آرہے ہیں اور کورونا کے حالات قابو میں آنے کے امکانات نظر آرہے ہیں، یہی وجہ ہے کہ آج جمعہ کو بھٹکل میں کورونا کا کوئی پوزیٹیو معاملہ سامنے نہیں آیا، اسی طرح کل جمعرات بھی بھٹکل میں صرف ایک معاملہ کورونا پوزیٹیو کا ...

بھٹکل سے میڈیکل ضروریات کے تحت اُڈپی یا مینگلور جانے اور واپس آنے میں کوئی روک نہیں ؛ اسسٹنٹ کمشنر کا بیان

میڈیکل ضروریات کے تحت کوئی اگر بھٹکل سے کنداپور یا مینگلور جاتا ہے اور واپس بھٹکل آتا ہے تو اس کے لئے کسی قسم کی اجازت لینے کی ضرورت نہیں ہے،ایسے لوگ صبح جاکر شام کو  واپس لوٹ سکتے ہیں، اس بات کی اطلاع بھٹکل اسسٹنٹ کمشنر مسٹر بھرت نے دی۔

کاروار:کووِڈ سے ہلاک ہونے والے شخص کی آخری رسومات میں رکاوٹ۔ 70لوگوں پرہو اکیس درج

یہاں کے کووِڈ اسپتال میں سرسی کے کورونا مریض کی موت واقع ہونے پرسرودیا نگر میں اس شخص کی آخری رسومات ادا کرنے میں جو رکاوٹ پیدا کی گئی تھی اس ضمن میں کاروارتحصیلدار آر وی کٹّی کی شکایت پر ٹاؤن پولیس نے 70لوگوں پرسرکاری افسر کو اپنے فرئض انجام دینے سے روکنے کاکیس درج کیاہے۔

 استعمال شدہ موٹر گاڑیوں کی فروخت کے نام پرفوجیوں کے روپ میں جعلساز گروہ ہوا ہے سرگرم۔ عوام محتاط رہیں!

جعلسازوں کا ایک گروہ فوجیوں کے نام سے استعمال شدہ گاڑیوں کی فروخت کرنے والا ایک جعلساز گروہ سوشیل میڈیا پرسرگرم ہوگیا ہے، جس کے پھندے سے عوام کو محتاط رہنے کی تنبیہ کی گئی ہے۔