آنے والے تہواروں کے دوران زیادہ احتیاط برتنے کی ضرورت ہے : ڈاکٹر ہرش وردھن

Source: S.O. News Service | Published on 18th October 2020, 10:53 PM | ملکی خبریں |

نئی دہلی،18؍اکتوبر(ایس او نیوز؍ایجنسی) صحت اور خاندانی فلاح وبہبود کے مرکزی وزیر ڈاکٹر ہرش وردھن نے آج کہا کہ کیرالہ میں اونم کے دوران برتی گئی لاپرواہی کی وجہ سے ریاست میں کورونا وائرس کووڈ 19 انفیکشن کے واقعات میں تیزی سے اضافہ ہوا ہے اور دیگر ریاستوں کو اس سے سبق لیتے ہوئے آنے والے تہواروں کے دوران زیادہ احتیاط برتنے کی ضرورت ہے۔

ڈاکٹر ہرش وردھن نے اتوار کے روز بتایا کہ 30 جنوری سے 3 مئی کے درمیان کیرالہ میں کورونا وائرس کے صرف 499 ہی  معاملے سامنے آئے تھے اور وائرس  کی وجہ سے دو مریضوں کی موت ہوگئی تھی۔  اس وقت،انفیکشن کے زیادہ تر معاملے کسرگوڑ اور ضلع  کنور سے تھے۔ اس کے بعد ،سیاحت اور تجارت کی وجہ سے ریاست میں اور ریاست کے باہر لوگوں کی بڑھتی ہوئی نقل و حرکت کی وجہ سے ،دوسرے اضلاع میں بھی کورونا انفیکشن کے واقعات میں اضافہ ہوا ۔

انہوں نے کہا کہ اونم تہوار کی وجہ سے اگست اور ستمبر میں کیرالہ میں کورونا انفیکشن کے معاملات میں مزید اضافہ ہوا ہے۔ اونم کا تہوار 22 اگست سے 2 ستمبر تک جاری رہا اور اس دوران ریاست بھر سے لوگ بڑی تعداد میں جمع ہوئے اور کووڈ ۔19 سے متعلق رہنما خطوط پر عمل نہیں کیا گیا۔ 

ڈاکٹر ہرش وردھن نے کہا کہ ابتدائی طور پر کیرالہ نے کورونا وائرس پر اچھی طرح قابو پالیا تھا لیکن بعد میں لاپرواہی کی وجہ سے کیرالہ میں انفیکشن کے کیسز میں تیزی سے اضافہ ہوا اور معاملہ سنگین ہوگیا۔ اس سے دیگر ریاستوں کو  یہ سبق حاصل کرنا چاہیے کہ کس طرح اونم کے دوران لاپرواہی کے سبب  وہاں وائرس کے کیسز میں اضافہ ہوا  ہے۔

ایک نظر اس پر بھی

جموں وکشمیر پولس کی اپیل؛ بندوق اٹھانے والے بچے بندوق چھوڑ دیں، ان کی ہر ممکن مدد کی جائے گی

جموں و کشمیر پولیس کے سربراہ دلباغ سنگھ نے ملی ٹینسی کا راستہ اختیار کرنے والے مقامی نوجوانوں سے قومی دھارے میں واپس لوٹنے کی اپیل کرتے ہوئے کہا ہے کہ ہمارے جن بچوں نے غلط راستہ اختیار کیا ہے اگر وہ واپس آئیں گے تو انہیں کسی طرح کا کوئی نقصان نہیں ہوگا۔ انہوں نے کہا کہ ان بچوں کی ...

کیا بہار این ڈی اے میں سب کچھ ٹھیک نہیں؟ نتیش کی آبادی کے حساب سے ریزرویشن کی مانگ پر بی جے پی غیر متفق

بہار انتخابات میں این ڈی اے میں سب کچھ ٹھیک ٹھاک نہیں چل رہا ہے۔ اس کی مثال اس وقت نظر آئی جب وزیر اعلیٰ نتیش کمار نے ایک انتخابی ریلی سے مطالبہ کیا کہ ریزرویشن طبقہ کی آبادی کے حساب سے ہونا چاہیے،

ہندوستان میں کورونا کے نئے کیسز کی تعداد پھر 50 ہزار سے کم، فعال کیسز میں لگاتار کمی

ملک میں لگاتار چھٹے دن کورونا وائرس کے نئے کیسز 50000 سے بھی کم رپورٹ ہوئے ہیں اور اس جان لیوا وبا سے شفایاب ہونے والے مریضوں کی تعداد زیادہ رہنے سے اموات اور ایکٹیو کیسز کی شرح میں کمی آرہی ہے۔