بنگلورو کے تینوں حلقوں کے ووٹوں کی گنتی کے لئے غیر معمولی حفاظتی انتظامات،گنتی کے کسی بھی مرکز میں موبائل فون لے جانے کی اجازت نہیں ہوگی

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 21st May 2019, 11:22 AM | ریاستی خبریں |

بنگلورو، 21مئی (ایس او نیوز)  23مئی کو لوک سبھا انتخابات کے ووٹوں کی گنتی کے لئے تمام تیاریاں مکمل ہوچکی ہیں۔ بنگلور کے تینوں حلقوں نارتھ، ساؤتھ اور سنٹرل کے ریٹرننگ افسر اور بی بی ایم پی کمشنر منجوناتھ پرساد اور شہر کے پولیس کمشنر سنیل کمار نے آج ایک مشترکہ اخباری کانفرنس کے دوران گنتی کے لئے کئے گئے انتظامات کی تفصیل بتائی۔ الیکشن کمیشن کے ضابطے کے مطابق گنتی کے مرکز میں گنتی کے لئے متعین گنتی ایجنٹوں، امیدواروں وغیرہ کو موبائل فون لے جانے کی اجازت قطعاً نہیں دی جائے گی۔ انہو ں نے بتایاکہ صرف سرکاری افسروں اور میڈیا کے نمائندوں کے علاوہ گنتی کے مرکز میں کوئی بھی موبائل فون استعمال نہیں کرسکتا۔ گنتی کے کسی بھی مرکز میں موبائل فون جمع کرانے کا انتظام بھی نہیں کیا جائے گا۔ 23مئی کی صبح آٹھ بجے تینوں مرکزوں میں گنتی شروع ہوجائے گی۔ پہلے ڈاک کے ذریعے آنے والے ووٹوں کی گنتی کی جائے گی۔تینوں حلقوں میں مجموعی طور پر 11063 پوسٹل ووٹ موصول ہوئے ہیں۔ الیکٹرانک ووٹنگ مشینوں کی گنتی ساڑھے آٹھ بجے سے شروع ہوگی، مشینوں کی گنتی کے لئے ہر اسمبلی حلقے کے لئے الگ الگ ٹیبل رکھے گئے ہیں۔ ہر شعبے میں اسسٹنٹ الیکٹوریل افسر کی نگرانی میں گنتی کی جائے گی۔ 18 اپریل کو شہر میں ہوئی پولنگ کے مرحلے میں بنگلور نارتھ حلقے سے 31امیدواروں نے قسمت آزمائی ہے۔ اس حلقے میں 54.66 فیصد ووٹنگ ہوئی اور مجموعی طور پر 1556997 ووٹ ڈالے گئے ہیں۔ بنگلور سنٹرل حلقے میں 22امیدوار میدان میں رہے، اس حلقے میں 54.28 فیصد ووٹنگ ہوئی اور مجموعی طور پر 1196697 ووٹ ڈالے گئے ہیں۔ بنگلور ساؤتھ حلقے میں 53.47 فیصد ووٹنگ ہوئی، اس حلقے سے 25امیدوار میدان میں ہیں، اور مجموعی طور پر1184745 ووٹ ڈالے گئے ہیں۔ بنگلور سنٹرل حلقے کے لئے ووٹوں کی گنتی کا مرکز ماؤنٹ کارمل کالج وسنت نگر ہوگی۔ بنگلور نارتھ حلقے کے ووٹوں کی گنتی وٹھل ملیا ر وڈ پر موجود سینٹ جوزف انڈین ہائی اسکول میں کی جائے گی، جبکہ بنگلور ساؤتھ کے ووٹوں کی گنتی جئے نگر فورتھ بلاک میں آنے والے ایس ایس ایم آر وی کالج میں کی جائے گی۔ تینوں حلقوں کے لئے 497کاؤنٹنگ سپرنٹنڈٹنٹس کا تقرر کیاگیا ہے۔ گنتی کے لئے 20 فیصد افزود عملہ متعین رکھا جائے گا۔ان تمام کو تربیت کا دوسرا مرحلہ 22مئی کو مقرر کیاگیا ہے۔حسب سابق ہر اسمبلی حلقے میں گنتی کے لئے 14ٹیبل رکھے گئے ہیں۔ جن اسمبلی حلقوں میں ووٹروں کی تین لاکھ سے زیادہ ہے ان کے لئے افزود ٹیبل رکھے جائیں گے۔ان میں شہر کے کے آر پورم، بیاٹرائن پورہ، داسر ہلی، مہادیو پورہ، یشونت پور، بمن ہلی، سروگنا نگر، حلقوں کے لئے افزود ٹیبل مہیا کرائے گئے ہیں۔کے آر پورم، بیاٹرائن پورہ اور داسر ہلی کے لئے فی حلقہ 26 ٹیبلوں پر گنتی ہوگی، یشونت پور اور بمن ہلی کے لئے فی حلقہ 24 ٹیبل رہیں گے۔سروگنا نگر کے لئے 21 ٹیبل رکھے جائیں گے۔اور سب سے زیادہ مہادیو پورہ اسمبلی حلقے کے لئے 28 ٹیبلوں کا انتظام کیا جائے گا۔ الیکٹرانک ووٹنگ مشینوں کی گنتی مکمل ہونے کے بعد ہر اسمبلی حلقے کے پانچ پولنگ بوتھوں میں ڈالے گئے ووٹوں کا موازنہ وی وی پیاٹ کی پرچیوں سے کیا جائے گا۔گنتی کے لئے سخت حفاظتی انتظامات کے مقصد سے ہر گنتی کے مرکز کے چاروں جانب جال لگائے گئے ہیں۔ اس موقع پر اخباری کانفرنس میں بنگلور اربن کے ڈپٹی کمشنر وجئے شنکر، بنگلور سنٹرل لوک سبھا حلقے کے ریٹرننگ افسر ڈاکٹر ایم لوکیش، بنگلور ساؤتھ کے ریٹرننگ افسر ایس ایس نکل اڈیشنل پولیس کمشنر سیمنت کمار سنگھ موجود تھے۔ منجوناتھ پرساد نے بتایاکہ بنگلور نارتھ پارلیمانی حلقے کے لئے تمام اسمبلی حلقوں پر مشتمل 190 ٹیبل گنتی کے لئے رکھے جائیں گے۔ بنگلور سنٹرل پارلیمانی حلقے میں آنے والے آٹھ اسمبلی حلقوں کے لئے 160ٹیبل رکھے جائیں گے۔ بنگلور ساؤتھ کے آٹھ اسمبلی حلقوں کے لئے 147 ٹیبل رکھے جائیں گے مجموعی طور پر شہر کے تینوں پارلیمانی حلقوں کے لئے 497 ٹیبلوں پر گنتی کی جائے گی۔ گنتی کے ہر مرکز میں سیکورٹی کے لئے تین مرحلوں پر مشتمل انتظامات کئے جائیں گے۔ گنتی کے ہر مرکز میں امیدواروں اور ایجنٹوں کے لئے داخلے کا مخصوص راستہ ہے، اس راستے سے میڈیا کے نمائندوں کو داخلہ نہیں دیا جائے گا۔ امیدواروں اور ایجنٹوں کو گنتی کے مرکز میں ہر اسمبلی حلقے کے ٹیبل پر آنے جانے کی اجازت رہے گی۔ گنتی کے لئے ٹیبل پر جن ایجنٹوں کو مقرر کیا جائے گا انہیں ٹیبل بدلنے کی اجازت نہیں ہوگی۔ 
 

ایک نظر اس پر بھی

کورونا کے قہر سے قطع نظرفرقہ وارانہ ایجنڈہ پر بی جے پی متوجہ، ریاست میں ایک بار پھر انسداد گؤ کشی قانون لانے کی تیاری

ایسے مرحلے میں جبکہ ریاست کے عوام کورونا وائرس کے قہر سے بدحال ہیں، ریاست کی بی جے پی حکومت خاموشی سے اپنا فرقہ وارانہ ایجنڈہ نافذ کرنے کی تیاریوں میں لگی ہوئی ہے۔

نائب وزیر اعلیٰ اشوتھ نارائین نے شہر کے مغربی زون میں کورونا صورتحال کا جائزہ لیا

شہر بنگلورو میں کورونا متاثرین کے علاج کے لئے حکومت کی طرف سے جاری انتظامات کے ساتھ ریاستی حکومت نے ہفتہ کے روز ا س حقیقت کا بھی اعتراف کیا ہے کہ کورونا وائرس سے ہر کر مرنے والوں کی تعداد کورونا متاثرین کے مقابلہ کافی زیادہ ہے اور ان کے علاج کے لئے حکومت نے فوری انتظامات کرنے کا ...

ریوا سولار پلانٹ ایشیا کے سب سے بڑے پلانٹ ہونے کا دعویٰ جھوٹا: ڈی کے شیوکمار

وزیراعظم مودی نے بروز جمعہ مدھیہ پردیش کے ریوا ضلع میں 750میگاواٹ کی پیداوار کی گنجائش والے سولارپلانٹ کا افتتاح کرتے ہوئے قوم کے نام وقف کیا۔ وزیراعظم دفتر کی طرف سے اس پلانٹ کو ایشیا کا سب سے بڑا سولار پلانٹ بتایاگیاہے۔

کرناٹکا کے وزیر سی ٹی روی سمیت معروف فلم ایکٹر امیتابھ بچن کی رپورٹ بھی کورونا پوزیٹیو

کرناٹک میں کورونا کا پھیلاو اتنا زیادہ ہوگیا ہے کہ اس سے کوئی  محفوظ نظر نہیں آرہا ہے۔ آج  کرناٹکا ٹورسم منسٹر سی ٹی روی کی رپورٹ بھی کورونا پوزیٹیو آنے کی اطلاع ملی  ہے، وہ کرناٹک کے پہلے وزیر ہیں جن کی رپورٹ پوزیٹیو آئی ہے حالانکہ لوک سبھا ایم پی سومالتا امبریش، ایم ایل ...

کورونا کو لےکر بنگلور کی حالت تشویشناک؛ ایک ہی دن15سو سے زائد معاملات؛14جولائی سے مکمل لاک ڈاون کا اعلان

ریاست کرناٹک میں کورونا کے معاملات کم ہونے کے بجائے روز بروز بڑھتے جارہے ہیں تشویش کی بات یہ ہے کہ سب سے زیادہ معاملات ریاست کی راجدھانی بنگلور سے سامنے آرہے ہیں۔ حالات اتنے زیادہ سنگین ہوگئے ہیں کہ آج پھرایک بار ایک طرف کرناٹک میں 2798 معاملات سامنے آئے ہیں تو ان میں صرف ...