ایک سال مکمل ہونے سے پہلے ہی مینگلور ڈپٹی کمشنر کے تبادلے پر رکن اسمبلی یوٹی قادر نے اُٹھائے سوال؛ جان سے مارنے کی دھمکی کے فوری بعد تبادلہ کرنے پر مانگا جواب

Source: S.O. News Service | By I.G. Bhatkali | Published on 31st July 2020, 12:36 AM | ساحلی خبریں | ریاستی خبریں |

مینگلور 30جولائی (ایس او نیوز) مینگلور کے رکن اسمبلی یوٹی قادر نے سرکار سے جواب مانگا ہے کہ دکشن کنڑا کی ڈپٹی کمشنر سندھو بی روپیش کے اچانک تبادلے کی وجہ بتائی جائے حالانکہ وہ مینگلور میں چارج لے کر ایک سال  بھی نہیں ہوئے تھے۔

یہاں جمعرات کو اخبارنویسوں سے گفتگو کرتے ہوئے  یوٹی قادر نے کہا کہسندھو بی روپیش کے   تبادلہ کو ڈسٹرکٹ انچارج وزیر ایک معمول کی کاروارئی قرار دے رہے ہیں لیکن  میں پوچھنا چاہتا ہوں کہ  ایک سال کے اندر دکشن کنڑا میں دو دو ڈپٹی کمشنروں کے تبادلے کیا معمول کی کاروائی ہیں ؟ یوٹی قادر نے کہا کہ  چھ ماہ  میں کسی ڈپٹی کمشنر کے تبادلے کا کوئی  قانون نہیں ہے ڈپٹی کمشنر کو کم از کم ایک سال سے دو سال تک ایک  ضلع میں کام کرنا ہوتا ہے، انہوں نے حکومت سے  جواب  دینے کا اصرا کرتے ہوئے کہا   کہ  سندھو بی روپیش کو یہاں کام کرنے کیوں نہیں دیا گیا، اگر اس طرح ایک سال بھی کسی کو کام نہیں کرنے نہیں دیا جائے گا تو ضلع کی ترقی کیسے آگے بڑھے گی ؟ یوٹی قادر نے یہ بھی کہا کہ  جب سندھو بی روپیش کو  جان سے مارنے کی دھمکی دی گئی تو کسی بی جے پی ارکان اسمبلی یا ارکان پارلیمان یہاں تک کہ ڈسٹرکٹ انچارج وزیر  کی طرف سے بھی مذمت کا ایک لفظ  نہیں نکلا، پولس نے خود سخت جدوجہد کرتے ہوئے  ملزم کے خلاف معاملہ درج کرتے ہوئے اُسے گرفتار کیا اور اپنی ڈیوٹی بخوبی نبھائی۔ یوٹی قادر نے سوال کیا کہ  ملزم کی گرفتاری کے بعد اب بی جے پی کیوں گرفتاری کا سہرا خود کے سر پر باندھنے کی کوشش کررہی ہے ؟

یوٹی قادر نے کہا کہ جب  سندھو بی روپیش کو مارنے کی دھمکی دی گئی تو ایک بھی  بی جےپی  لیڈرسامنے نہیں آیا اور اپنے ڈپٹی کمشنر کا  حوصلہ بڑھانے  اور اُس کی ہمت بندھنے  کی کوشش نہیں کی اور نہ ہی اُس کے حق میں  ایک  بیان دیا۔ قادر نے  کہا کہ ہمارے (کانگریس) کے دور حکومت میں چھ چھ ماہ میں ڈی سی یا کسی  آئی اے ایس آفسرس  کے تبادلے نہیں ہوتے تھے۔

ایک نظر اس پر بھی

کیرالہ میں پیش آیا چٹان کھسکنے کا خطرناک حادثہ۔ 15ہلاک اور60سے زائدافراد ہوگئے لاپتہ۔ ملبے میں دب گئیں 30جیپ گاڑیاں 

کیرالہ کے مشہور تفریحی مقام ’مونار‘ سے قریب ’ایڈوکی‘ میں چٹان کھسکنے کا ایک خطرناک حادثہ پیش آیا جس میں تاحال 15افراد ہلاک ہونے اور 60سے زیادہ لوگ لاپتہ ہونے کے علاوہ 30جیپ گاڑیاں چٹان کے ملبے میں دب کر رہ جانے کی خبر ہے۔

کیرالہ میں پیش آیا چٹان کھسکنے کا خطرناک حادثہ۔ 15ہلاک اور60سے زائدافراد ہوگئے لاپتہ۔ ملبے میں دب گئیں 30جیپ گاڑیاں 

کیرالہ کے مشہور تفریحی مقام ’مونار‘ سے قریب ’ایڈوکی‘ میں چٹان کھسکنے کا ایک خطرناک حادثہ پیش آیا جس میں تاحال 15افراد ہلاک ہونے اور 60سے زیادہ لوگ لاپتہ ہونے کے علاوہ 30جیپ گاڑیاں چٹان کے ملبے میں دب کر رہ جانے کی خبر ہے۔

کورونا کی وبا اور دعوت رجوع الی اللہ، اس عنوان کے تحت جماعت اسلامی ہند، کرناٹک کی 15 روزہ مہم کا آغاز

  کورونا کی وبا سے اس وقت پوری انسانیت پریشان ہے۔ اس مرض کا مقابلہ کرنے کیلئے حفاظتی اور احتیاطی تدابیر اختیار کرتے ہوئے لوگ اپنے رب سے رجوع ہوں۔ کورونا جیسی بیماریوں پر قابو پانے کیلئے طبی علاج کے ساتھ روحانی اور اخلاقی طاقت کا ہونا بھی ضروری ہے۔

کرناٹک سے 40 امیدوار سیول سرویسز امتحان میں کامیاب

کرناٹک سے زائداز 40 امیدواروں نے 2019 کے یونین پبلک سرویس کمیشن (یو پی ایس سی ) سیول سرویس امتحان میں کامیابی حاصل کی اور اب آئی اے ایس ، آئی ایف ایس اور آئی پی ایس اور دیگر میں ملازمت حاصل کریں گے۔