بیرون ملک سے لوٹنے والوں کو کمٹہ ریسارٹ میں کوارنٹین کرنے کے خلاف مقامی افراد کا احتجاج

Source: S.O. News Service | By I.G. Bhatkali | Published on 20th May 2020, 12:21 PM | ساحلی خبریں |

کمٹہ 20/ مئی (ایس او نیوز) بیرون ملک سے ضلع شمالی کینرا میں لوٹنے والوں کو پروٹوکول کے مطابق لازمی کوارنٹین کے لئے کمٹہ کے ایک ریسارٹ میں رکھے جانے پر ایڈوکیٹ آر جی نائک کی قیادت میں مقامی عوام نے زبردست احتجاج کیا اور ایک گھنٹے سے زیادہ وقت کے لئے سڑک کو جام کردیا۔

 پچھلے دنوں دبئی سے لوٹے ہوئے بھٹکل اور انکولہ سے تعلق رکھنے والے2 افراد کو دیر رات گئے جب باڈ میں واقع ایک ریسارٹ میں منتقل کیا گیا اور صبح یہ بات مقامی لوگوں کو معلوم ہوئی تو انہوں نے احتجاجی مظاہرا کیا اورمطالبہ کیا کہ کمٹہ ابھی تک کوورونا وباء سے محفوظ ہے، ایسے میں دوسری جگہ سے یہاں پر لوگوں کو کوارنٹین کے لئے لاکر مقامی لوگوں کے لئے مصیبت کھڑی نہ کی جائے۔ مظاہرین نے جب دیکھا کہ کسی محکمہ کا افسر ان سے بات چیت کے لئے نہیں آرہا ہے تو انہوں نے سڑک پر جام لگادیااور اعلیٰ افسران کے موقع پر پہنچ کر مسئلے کا حل نکالنے تک دھرنے پر بیٹھنے کا فیصلہ کیا۔

 کافی دیر بعد سرکل پولیس انسپکٹر پرمیشور گونکا نے دھرنے کے مقام پر پہنچ کر مظاہرین کو سمجھانے کی کوشش کی کہ یہ سرکاری حکم ہے اور اس کی خلاف ورزی وہ نہیں کرسکتے۔اور جن لوگوں کو کوارنٹین کے لئے لایا گیا ہے وہ کورونا کے مریض نہیں ہیں بلکہ بیرون ملک سے واپس لوٹنے والے صحتمند افراد ہیں۔ہمارے ضلع کے سیکڑوں لوگوں کو اس وقت کوارنٹین کرنے کی حاجت درپیش ہے۔ ان لوگوں میں آپ کے اپنے گاؤں والے اور رشتے داربھی ہوسکتے ہیں۔ ان کو یہاں کوارنٹین کرنے سے منع نہیں کیا جاسکے گا۔ اس لئے تمام لوگوں کو اس کے لئے تعاون کرناچاہیے۔

 اس موقع پر وکیل آر جی نائک نے عوام کی نمائندگی کرتے ہوئے کہا کہ ہم سرکاری احکام کو مسترد نہیں کررہے ہیں۔ مگر یہاں کے تقریبا 28ہزار باشندوں کی صحت کا سوال ہمارے سامنے ہے۔ پورے ملک میں کورونا کی وباء پھیلی ہوئی ہے۔ ہم لوگوں نے حکومت کے قانون کے مطابق لاگو کیے گئے لاک ڈاؤن کی گزشتہ 56دنوں تک پوری طرح پابندی کی ہے۔ اس لئے تعلقہ انتظامیہ کی طرف سے بیرون ملک سے واپس لوٹنے والوں کو یہاں لاکر کوارنٹین کرنے کی ہم مخالفت کررہے ہیں۔

 سرکل انسپکٹر نے بتایا کہ فی الحال دو افراد کو یہاں پر کوارنٹین کیا گیا ہے اور تمام احتیاطی تدابیر اختیار کی گئی ہیں۔ وہ لوگ ریسارٹ سے باہر نہیں نکلیں گے۔ داخلی دروازے پر نوٹس چسپاں کیا گیا ہے۔کسی کو وہاں جانے کی اجازت بھی نہیں ہے۔ اس کے بعد پھر اس ریسارٹ میں کسی اور شخص کو کوارنٹین کے لئے نہیں لایا جائے گا۔سرکل پولیس انسپکٹر کی اس یقین دہانی کے بعد مظاہرین نے اپنا احتجاج ختم کیا۔

ایک نظر اس پر بھی

اُڈپی ضلع میں کورونا کے بڑھتے ہوئے معاملات سے نمٹنے کے لئے کنداپور اور بیندور میں کووِڈ اسپتالوں کا قیام۔ ڈپٹی کمشنر جگدیش کا اعلان

ضلع اُڈپی کے ڈپٹی کمشنر جی جگدیش نے بتایا کہ ضلع میں کووِڈ 19سے متاثرین کی تعداد میں روزبرو ز اضافہ کو دیکھتے ہوئے کنداپور اور بیندو ر میں 400 بستروں کی سہولت کے ساتھ کووِ ڈ اسپتال قائم کرنے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔

کرناٹک میں 25 جون سے شروع ہورہے ہیں ایس ایس ایل سی امتحانات؛ ہر امتحان گاہ میں صرف 18 طلبا کو بیٹھنے کی ہوگی سہولت؛ ایک گھنٹہ پہلے امتحان گاہ پہنچنا ضروری

کورونا وباء کے بعد ملک بھر میں لگے لاک ڈاون کے بعد اب ریاست کرناٹک میں 25 جون سے ایس ایس ایل سی امتحانات شروع ہورہے ہیں جو  4 جولائی کو اختتام کو پہنچیں گے۔ امتحانات کو منعقد کرنے کے لئے ہرممکن احتیاطی اقدامات اُٹھائے جارہے ہیں تاکہ طلبا کویڈ سے  محفوظ رہیں،  طلبا کے درمیان ...