پریش میستا کی موت کو بی جےپی نے سیاسی مفاد کے لئے استعمال کیا ہے: کمٹہ میں ضلعی کانگریس کمیٹی کا عظیم الشان سماویش، ڈی کے شیوکمار اور دیگر کانگریسی لیڈران سمیت ہزاروں لوگوں کی شرکت

Source: S.O. News Service | By Abu Aisha | Published on 24th November 2022, 8:52 PM | ساحلی خبریں |

کمٹہ :24؍ نومبر(ایس اؤ نیوز)پریش میستا کی موت پر بی جے پی نے نہ صرف جھوٹ بولا بلکہ ایک معصوم کی موت کو سیاسی داؤ کھیل کر اپنے مفاد کی بھینٹ چڑھایا۔ صرف فرقہ وارانہ فسادات برپا کرنےو الی بی جےپی کو ترقی کا نام تک معلوم نہیں ہےایسی حکومت کس کام کی۔ اب عوام کی ذمہ داری ہے کہ وہ ایسی بے کار ،اندھی، بہری ، گونگی حکومت کو بے دخل کرتےہوئے عوام کی بھلائی  کےلئے کام کرنےو الی کانگریس کو اقتدار سونپیں۔ کمٹہ کے منکی میدان میں منعقدہ عظیم الشان کانگریس سماویش میں کانگریس لیڈران نے ان خیالات کا اظہارکیا۔

24نومبر بروز جمعرات کو کمٹہ کے منکی میدان میں منعقدہ ضلعی کانگریس کمیٹی کی جانب سے عوامی بیداری سماویش میں ہزاروں کارکنان اور عوام نے شرکت کرتے ہوئے بی جے پی سے ناراضگی کا ثبوت دیا۔ سماویش کی صدارت کرتےہوئے کانگریس کے ریاستی صدر  ڈی کے شیوکمارنےکہاکہ ہم یہاں صرف پریش میستا کے متعلق یہ سماویش منعقد نہیں کئے ہیں بلکہ ساحلی پٹی کے عوام میں بیداری لانے کےلئے اس پروگرام کا انعقاد کیاگیا ہے۔ انہوں نے عوام الناس سے کہا کہ وہ  ہرمحاذ پر ناکام بی جے پی کے نمائندوں سے پوچھے کہ انہوں نےانتخابات کے دوران جو وعدےکئےتھےاس کو پورا کیوں نہیں کیا۔ انہوں نے کہا کہ  ریاستی عوام کو پرسکون زندگی میسر نہیں ہے۔ ہرجگہ ہنگامہ برپا  ہے۔یہی بی جے پی والوں کی ترقی اور کارکردگی ہے۔  انہوں نے کہا کہ  بی جے پی نے صرف نفرت، دشمنی اور بد امنی کو ہی پھیلا یا ہے۔ یہاں کے لوگ حالات سے بیزار ہوکرضلع سے باہر جارہے ہیں۔ بنگلور، گوا یہاں تک کہ گلف ممالک کو جارہے ہیں ، کیونکہ یہاں کوئی روزگار کے مواقع نہیں ہیں۔

ڈی کے شیوکمار نے کہا کہ بی جے پی نے اقتدار حاصل کرنے سے پہلے  عوام سے دو کروڑروزگار کا دینے کا  وعدہ کیا تھا مگر  اس کو بھی  پورا نہیں کیا۔کسانوں کو کوئی فائدہ نہیں ہوا۔ کورونا کے زمانے میں 4لاکھ لوگ موت کا شکار ہوئے۔ انہیں کوئی پوچھنے تک نہیں گیا۔ یہ سرکار بہری ، گونگی اور اندھی ہے۔ یہاں کے ٹھیکداروں نے خود وزیراعظم کو خط لکھ کرشکایت کی کہ یہاں 40فی صد کمیشن لیاجاتاہے۔اور اب ووٹر لسٹ سے  27لاکھ ووٹروں کے نام غائب کردئیے  ہیں۔ کانگریس ووٹروں کو باہر کیا گیا ہے۔شیوکمار نے الزام لگایا کہ   بی جےپی والوں نے یہ سب کچھ  صرف الیکشن جیتنے کےلئےکیا ہے۔ ہم نے الیکشن کمیشن سے شکایت کی ہے۔ اس سلسلےمیں عوام کو بھی سوال کرنا چاہئے۔

انہوں نے کہاکہ کانگریس پارٹی نے راہل گاندھی کی  قیادت میں جاری بھارت جوڑو یاترا میں شریک ہوتےہوئےہم نے اس ملک کو قوت بخشنےکا کام کیا ہے۔ ڈی کے شیوکمار نے پریش میستا کی موت کا ذکر کرتےہوئےرکن پارلیمان کے بیان کو دہرایا کہ ’’خون دے کر ہم انصاف دلائیں گے‘‘۔ شیوکمار نے پوچھا کہ کہاں ہے انصاف؟ ۔ معصوم ہزاروں کارکنان جیل کی سلاخوں میں بند ہیں کیا یہی ہے انصاف ؟  جنہوں نےاپنے کارکنوں کو انصاف نہیں دلایا ۔وہ کیا خاک عوام کو انصاف دلائیں گے۔ مگر کانگریس پارٹی کا وعد ہ ہے کہ وہ عوام کے ساتھ انصاف کرےگی۔کانگریس پارٹی ساحلی عوام سے وعدہ کرتی ہے کہ اس کے لئے الگ سےمنشور  جاری  کیاجائے گا، روزگار کے مواقع فراہم کرتےہوئے یہاں کی خوب صورتی کی حفاظت کی جائے گی۔ اورکسی کو یہاں سے باہر جا کر روزگار تلاش کرنےکی ضرورت نہیں ہوگی۔  

کانگریس لیڈریوٹی قادر نے اپنے خطاب میں کہاکہ آج یہاں جمع ہوئے آپ لوگوں کے ہجوم کو دیکھیں تو کہاجاسکتا ہےکہ اگلے انتخابات میں آپ لوگ ساحلی پٹی کی سبھی سیٹوں پر کانگریس کی جیت کو یقینی  بنا چکے ہیں۔ہم لوگ یہاں کسی سیاست کی خاطر نہیں آئے ہیں بلکہ آپ بہت معصوم لوگ ہیں، محنتی ہیں، بھائی چارے اور مل جل کر رہتےہیں ۔ صرف یہ بتانے آئے ہیں کہ آپ بی جےپی کی سازشوں اور کارستانیوں کے جھانسے میں نہ آئیں۔ بی جے پی والوں نے عام عوام کی کوئی مدد نہیں کی۔ کوئی تعلیمی کام نہیں کیا۔ کسی غریب کی مدد نہیں کی۔ پریس میستا کے معاملے کو لے کر جو ہنگامہ بی جے پی والوں نےکیا تھا اب اس کے تعلق سے بات کرنے کی کوئی ضرورت نہیں ہے۔ کیونکہ یلاپور، سرسی، کاروار،کمٹہ سے لےکر سبھی ارکان اسمبلی اچھی طرح جانتے ہیں کہ اب کی بات وہ جیت نہیں سکتے۔ جب ایک بھائی کی پریس میستا کی موت ہوئی تھی تو ان کے گھر جاتے، انہیں دلاسہ دیتے ، ان کی مالی امداد کرتے ۔ایساکچھ نہیں کیا بلکہ اس کی نعش چوراہےپر رکھ کر ہنگامہ کیا،فرقہ وارنہ فسادات برپا کئے ، جائیداد کو نقصان پہنچایا، پولس کی جیپ جلائی تمہیں تھوڑی سی بھی شرم ہے۔ آج اس کی حقیقت سامنے آچکی ہے۔ کیا اس پر شرمندگی نہیں ہورہی ہے۔ میں اسی موقع پر یہاں کے رکن پارلیمان سے بھی سوال کرنا چاہتاہوں ایم پی ہوکر ایک طویل عرصہ گزر رہاہے پریش میستا کو جانےدیجئے، کیا کبھی آپ نے ڈاکٹر چترنجن کے گھروالوں سےملاقات کرتےہوئےان کے دکھ میں شامل ہونے کی کوشش کی ہے۔

 کانگریس لیڈرمدھو بنگارپانے کہاکہ پریش میستا کی موت میں بھی اپنی گندی ذہنیت کا اظہار کرتےہوئے اقتدار  پانے والی بی جے پی کو حکومت سےباہر کرنا میرا اورآپ کا فرض ہے۔ بی جے پی والوں نے کبھی کسی کو زمینات کا حق پترا نہیں دیا۔ جس طرح کانگریس نے غریبوں کو کھانا دیا اس کا انتظام کیا ہے ایسا کوئی ایک کام بی جے پی والےبتانہیں سکتےہیں۔ اپنے اقتدار پانے کے مفاد کے لئے انہوں نے سارے ملک میں نفرت کا ماحول پیدا کردیا ہے۔ کمٹہ کی سابق رکن اسمبلی  شاردا شٹی نے کہاکہ سدرامیا کی حکومت نے ترقی کی راہ میں کافی کام  کئے تھے جب سدرامیا ضلع کے دورے پر تھے تو اسی وقت بی جے پی نے فسادات برپا کرتےہوئے انہیں بدنام کرنےکی کوشش کی گئی ۔ آج اس کی حقیقت کھل گئی ہے کون جھوٹااور کو ن سچا ہے ثابت ہوچکا ہے۔

بھٹکل کے سابق رکن اسمبلی منکال وئیدیا نے خطاب کرتےہوئےکہاکہ کانگریس کی حکومت کا زمانہ ترقی کا زمانہ تھا۔ اس ترقی کے چلتے بی جےپی والوں نے سمجھ لیا تھا کہ وہ اب جیت نہیں سکیں گے اسی لئے عین پروگرام کے موقع پر ایک پلان کے تحت  ٹول کٹ تیار کرتےہوئے پریش میستا کی موت کا کھیل کھیلااور فساد برپا کیا۔ اسی کا نتیجہ ہےکہ 100سے زائد معصوم افراد عدالت کے چکر کاٹتے رہے۔ کیا انہیں یاد نہیں تھا جب آئی جی کی جیپ کو آگ میں جھونکا گیاتھا تو یہ عوام کی جائیداد ہے۔ میں اپنے دور میں 7000گھروں کی تعمیر کرایا تھا ۔ گزرے ہوئے پانچ برسوں میں ایک گھر تک تعمیر نہیں ہواہے۔ بی جے پی والے صرف لوٹنے کے لئے آئے ہیں۔ اگر آپ عوام کی ترقی چاہتےہیں تو دوبارہ کانگریس کی حکومت بنائیں۔ اسی طرح کاروار کے سابق رکن اسمبلی ستیش سئیل نے کہاکہ پریش میستا کی موت کے بعد بی جےپی والوں نےجھوٹ پر جھوٹ بولا، جسم جل گیا ہے، ٹیاٹو کو کٹ کر نکالاگیا ہے۔ لیکن سی بی آئی کی رپورٹ ان کے جھوٹ کی پول کھولتے ہوئےکہاکہ یہ ایک طبعی موت تھی۔

کانگریس کے ضلعی لیڈر دیش پانڈے اپنے خطاب میں کہاکہ پریش میستا کی موت کو بی جے پی والے قتل کہہ رہے تھے جب کہ انہی کے دورحکومت والی سی بی آئی کی رپورٹ طبعی موت کہتی ہے۔ بی جے پی والوں کو ترقی کےکاموں کی جانکاری ہی نہیں ہے۔ بس وہ فرقہ وارانہ فسادات برپا کرنا جانتے ہیں۔ کانگریس کی سدرامیا والی حکومت نے صرف اور صرف ترقی پر توجہ دیتےہوئےعوام کی بھلائی کا کام کیاتھا۔ ان کی ترقی دیکھئے کہ روزمرہ کی ہرضروری چیز کی قیمت آسمان کو چھو رہی ہے۔ ان کے علاوہ آئیون ڈیسوزا، ضلعی صدر بھیمنانائک وغیرہ نے بھی خطاب کیا۔

ایک نظر اس پر بھی

بھٹکل: ابنائے انجمن کی رجسٹریشن مہم جاری؛ صدسالہ جشن کی اختتامی تقریب کے موقع پر29 ڈسمبر کو منایا جائے گاانجمن الومنی ڈے ؛ انجمن سے فارغ حضرات توجہ دیں

انجمن حامئی مسلمین بھٹکل کے زیراہتمام کسی بھی اسکول یا کالج میں کم ازکم  ایک سال تعلیم حاصل کرنے والا یا کرنے والی ابنائے انجمن یا    انجمن الومنی کہلائے گا۔ اس وقت ملک کے مختلف شہروں سمیت گلف کے شہروں میں انجمن الومنی کی ممبر شپ  رجسٹریشن مہم   تیزی کے ساتھ جاری ہے اور انجمن ...

اُترکنڑا ڈپٹی کمشنرپربھولنگا کا بھٹکل دورہ؛ نیشنل ہائی وے کا کام جلد مکمل کرنے کی دی یقین دہانی؛ تنظیم وفد نےنئے ڈی سی کا بھٹکل میں کیا استقبال

اُترکنڑا کے نئے ڈپٹی کمشنر پربھولنگا کولی کٹّے نے آج سنیچر کو پہلی بار بھٹکل کا دورہ کرتے ہوئے مختلف محکموں کے آفسران کے ساتھ میٹنگ منعقد کی اور بھٹکل تعلقہ کے تمام اُمورکا جائزہ لیا۔ اس موقع پر قومی سماجی ادارہ مجلس اصلاح و تنظیم کے ذمہ داروں کو ڈپٹی کمشنر کی بھٹکل آمد کی ...

اتوار کو بھٹکل تنظیم میں منعقد ہورہا ہے میگا ووٹررجسٹریشن کیمپ؛ عوام الناس تنظیم دفتر پہنچ کر اپنے ناموں کی کریں جانچ؛ نئے ناموں کا بھی ہوگا اندراج

کل اتوار کو مجلس اصلاح و تنظیم بھٹکل کے زیر اہتمام اور بھٹکل مسلم یوتھ فیڈریشن کے تعاون سے تنظیم   دفتر میں  میگا ووٹر رجسٹریشن کیمپ منعقد کیا گیا ہے جس میں نئے ناموں کا بھی اندراج ہوگا ساتھ ساتھ  لوگوں کے لئے سہولت فراہم کی گئی ہے کہ وہ اپنے نام کی جانچ کریں کہ آیا اُن کا نام ...

بھٹکل کے طالب علم کی ایم ایس سی میں شاندار کامیابی؛ لندن میں یونیورسٹی کی طرف سے ملا گولڈ میڈل

بھٹکل کے طالب علم محمد اٰمین ابن یونس بیلکے  لندن     یونیورسٹی  میں  ماسٹر آف سائنس (ایم ایس سی) میں  ٹاپ  پوزیشن کے ساتھ  کامیاب ہوئے ہیں اور ان کی شاندار کامیابی پر انہیں  یونیورسٹی آف دی ویسٹ آف اسکاوٹ لینڈ کی طرف سے گریجویشن ڈے کی تقریب  میں گولڈ میڈل سے نوازا گیا ہے۔ ...