کاروار میں سی برڈ نیول بیس کی سرحد پر داخل ہونے پر ماردینے کی وارننگ کا بورڈ چسپاں کرنے پر عوام میں سخت ناراضگی

Source: S.O. News Service | By Abu Aisha | Published on 23rd July 2019, 9:35 PM | ساحلی خبریں | ان خبروں کو پڑھنا مت بھولئے |

کاروار:23؍جولائی  (ایس اؤ نیوز)  سی برڈ بحری اڈے کی  سرحد میں غیر قانونی طور پر گھسنے کوشش کرنے پر ماردینے کی وارننگ والا بورڈ چسپاں کرنے کے بعد کاروار کے بینگا سے انکولہ کے ہارواڑ تک کے عوام نے  سخت ناراضگی ظاہر کرتے ہوئے  اسے شہری حقوق کی خلاف ورزی قرار دیا ہے۔

ذرائع سے ملی اطلاع کے مطابق سی برڈ بحریہ اڈے کی سرحد  کاروار کے بینگا سے شروع ہوکر انکولہ کے ہارواڈ دیہات تک  قریب 18دیہاتوں کی وسعت پر مشتمل ہے۔ اب  سی برڈ بحریہ اڈے والوں نے رہائشی علاقوں میں ایک بہت بڑا بورڈ چسپاں کرتےہوئے عوام کو وارننگ دی ہے کہ سی برڈ بحریہ اڈے کی سرحد میں غیر قانونی طورپرگھسنے پر پابندی عائد ہے۔اگر کوئی  غیرقانونی طورپراس سرحد پر  گھسنے کی کوشش کرے گا تو اُسے  مار دیاجائے گا، بورڈ میں یہ بھی لکھا گیا ہے کہ سرحد پر فوج کے دستے نہایت  متحرک ہیں ۔

 متعلقہ علاقے کے اطراف رہائش پذیر عوام سی برڈ کی جانب سے چسپاں کئے گئے بورڈ  پر سوالات اُٹھاتے ہوئے   اُسے  محافظ دستے کی طرف سے خطرہ محسوس کررہے ہیں اور اس طرح کی کاروائی کو  جمہوریت کا ایک بڑا مذاق کہا جارہا ہے۔ علاقہ کے عوام کا کہنا ہے کہ کسی بھی ملک میں دشمن ملک والے گھستے ہیں تو ان کے متعلق چھان بین کی جاتی ہے اور ان کے جرم کے مطابق انہیں سزا دی جاتی ہے۔ عوام پوچھ رہے کہ کیا  بحری  اڈے میں داخل ہونےپر بغیر کسی پوچھ تاچھ کے بندوق کی گولی سے شہریوں کو ہی قتل کرنے کی انہیں سرکار نے   اجازت دی ہے ؟ کیا یہ انسانی حقوق کی خلاف ورزی نہیں ہے؟ 

ایک نظر اس پر بھی

کاروارکے بیت کول میں آدھی رات کو ٹرک ڈرائیوروں پر حملہ۔ نقدی اور موبائل لوٹنے کے ساتھ لاریوں کو پہنچایاگیا نقصان۔پولیس اسٹیشن سے قریب ہی پیش آئی واردات

بیت کول ماہی گیری بندر کے علاقے میں پولیس اسٹیشن سے چار قدم کے فاصلے پر جمعرات کی شب میں شرپسندوں کے ذریعے بیرونی ریاستوں سے تعلق رکھنے والے ٹرک ڈرائیوروں کو لوٹنے اور گاڑیوں کو نقصان پہنچانے کی واردات پیش آئی ہے۔

افسران کی مبینہ ملی بھگت سے بھٹکل میں حد سے بڑھ گئی پتھروں کے لئے غیر قانونی کھدائی۔ منڈلّی کی پہاڑی کو نابود کرنے کی ہورہی ہے تیاری

بھٹکل میں قانون کی پاسدار ی کرنے والے کئی اسسٹنٹ کمشنرز اور اور کئی تحصیلدار تعینات کیے جاچکے ہیں، لیکن یہاں پر چل رہے ریت اور پتھروں کے غیر قانونی کاروبار پر کسی نے بھی پوری طرح روک لگائی ہو، ایسا دیکھنے میں نہیں آیا۔ بلکہ عوام کا ااحساس تو یہ ہے کہ کچھ افسران کی ملی بھگت سے ہی ...

شیرور میں کار اور لاری کی ٹکر۔کار ڈرائیور ہلاک۔ ایک مسافر شدید زخمی

پڑوسی علاقہ شیرور میں    نیشنل ہائی وے پرواقع سنکد گنڈی پُل کے قریب جمعرات   شام کو پیش آئے کار اور لاری کے تصادم میں کار ڈرائیور موقع پر ہی ہلاک ہوگیا ، جبکہ ایک مسافر شدید زخمی ہوگیا  جسے علاج کے لئے قریبی  اسپتال میں منتقل کیا گیا ہے۔

این آر سی دستاویزات کی تیاری میں اقلیتوں کی رہنمائی کرنے روشن بیگ نے اقلیتی کمیشن کے نئے چیرمین سے کیا مطالبہ

مرکزی حکومت کی ہدایت پر ریاستی حکومت کی طرف سے کرناٹک میں این آر سی نافذ کرنے کے لئے جو تیاری کی جا رہی ہے اس کے پیش نظر ریاستی اقلیتی کمیشن کی طرف سے اقلیتوں بالخصوص مسلمانوں کودستاویزات کی تکمیل میں آسانی فراہم کرنے کے لئے فوری طور پر قدم اٹھانے چاہئے۔ کمیشن کی طرف سے مساجد ...

تیراکی میں یونیورسٹی بلیو کا خطاب جیتنے والے بھٹکل انجمن کالج کے محمد اشفاق اب کریں گے آل انڈیا ٹورنامنٹ میں کرناٹکا یونیورسٹی دھارواڑ کی نمائندگی

انجمن آرٹس سائنس  کامرس  کالج اور پی جی سینٹر  بھٹکل کے ایک طالب العلم   محمد اشفاق ابن محمد  اسلم  تیراکی میں  بہترین مظاہرہ پیش کرتے ہوئے  کرناٹکا یونیورسٹی  بلیو   کا خطاب حاصل کرنے میں کامیاب ہوگئے ہیں  ۔کالج کے فزیکل ڈائرکٹر نے   بتایا کہ  تیراکی میں یونیورسٹی ...

پانچ مہینوں بعد  آئی پی ایس  اناملئی کا استعفیٰ منظور : کیا وہ تمل ناڈو کے سنگھ پریوار میں شامل ہوں گے ؟

آئی پی ایس عہدے سے پانچ مہینے پہلے  استعفیٰ دئیے اناملئی کا اب  جا کر مرکزی حکومت نے منظور کیا ہے۔ مستقبل میں اناملئی سنگھ پریوار کے کسی ایک ذیلی ادارے سے جڑ کر زندگی کا دوسرا دور شروع کرنے کے امکانات ظاہر کئے گئے ہیں۔

بابری مسجد مقدمہ میں شامل مسلم پارٹیوں کی طرف سے سپریم کورٹ آف انڈیا میں دیا گیا ایک بیان؛ مسلم پرسنل لاء بورڈ نے جاری کی پریس ریلیز

بابری مسجد کے تعلق سے  آل انڈیا مسلم  پرسنل لاء بورڈ کی بابری مسجد کے کو۔کنوینر   ڈاکٹر قاسم رسول الیاس نے پریس ریلیز جاری کرتے ہوئے مندرجہ ذیل نکات پیش کئے  ہیں :