کاروار: رکن پارلیمان اننت کمار ہیگڈے کے خلاف آنند اسنوٹیکر کی بیان بازی ۔ بی جے پی کیمپ سے ہورہی ہے سخت مذمت ۔ پولیس اسٹیشن میں درج ہوئی شکایت 

Source: S.O. News Service | Published on 7th April 2021, 12:24 PM | ساحلی خبریں | ریاستی خبریں |

کاروار، 7 ؍ اپریل (ایس او نیوز) ضلع شمالی کینرا کے رکن پارلیمان اننت کمار ہیگڈے ان دنوں علیل ہیں اور عوامی سطح پر کہیں نظرنہیں آرہے ہیں۔ اس پس منظر میں سابق وزیر آنند اسنوٹیکر نے ایک قابل اعتراض بیان دیا تھا جس پر بی جے پی کیمپ میں کھلبلی مچ گئی ہے اور ہر طرف سے اس بیان کی مذمت کی جارہی ہے۔

   خیال رہے کہ کاروار میں الیکٹرانک میڈیا کے نمائندوں سے بات چیت کے دوران آنند اسنوٹیکر نے رکن پارلیمان اننت کمار ہیگڈے کے خلاف انتہائی نامناسب لہجے میں کہا تھا:" وہ زندہ رہے یا مر جائے کیا فرق پڑتا ہے؟ ان سے عوام کو کیا فائدہ پہنچا ہے؟" 

اسنوٹیکر کا ذہنی دیوالیہ :    بی جے پی ضلع صدر وینکٹیش نائیک نے کاروار میں اخباری کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے آنند اسنوٹیکر کے بیان کی مذمت کرتے ہوئے کہا کہ بیمار رکن پارلیمان اننت کمار ہیگڈے کے خلاف ایسا قابل اعتراض دینا اسنوٹیکر کے ذہنی دیوالیہ پن کی علامت ہے۔ گزشتہ الیکشن میں اننت کمار نے اسنوٹیکر کو ذلت آمیز شکست دیتے ہوئے 4.80 لاکھ سے زائد ووٹ حاصل کیے تھے۔ اس بات کو نہیں بھولنا چاہیے۔ وینکٹیش نائک نے اسنوٹیکر کا مذاق اڑاتے ہوئے کہا وہ دیوے گوڈا خاندان کے سہاے اپنا سیاسی کیریئر بنانے میں لگے ہیں، جبکہ اننت کمار نے اپنا سیاسی کیریئر خود اپنے ہاتھوں بنایا ہے۔ انہوں نے بتایا کہ اننت کمار کی حالت بہتر ہوتی جارہی ہے اور ڈاکٹروں کے مشورے سے ایک مہینے کے اندر وہ عوامی زندگی میں واپس لوٹ آئیں گے اور پارٹی میں سرگرم ہوجائیں گے۔

  اسنوٹیکر کا خاندانی دیوتا؟!:    پریس کانفرنس میں موجود بی جے پی کے ترجمان ناگراج نائک نے بھی آنند اسنوٹیکر کے بیان کی مذمت کرتے ہوئے کہا کہ سیاست میں اختلاف پارٹی کی پالیسیوں اور اصولوں پر ہونا چاہیے۔ اس سے ہٹ کر کسی سے ذاتی اختلاف کرنا اور دشمنی کرنا سیاست نہیں ہے۔ سابق وزیر کی حیثیت سے اسنوٹیکر کو اپنی سرگرمیوں سے سماج کے لئے ایک مثالی شخصیت ہونا چاہیے تھا۔ مگر اس کے بجائے وہ اننت کمار ہیگڈے کے خلاف بچکانہ بیان بازی کررہے ہیں۔ انہوں  نے کہا کہ اس سے پہلے اسی اسنوٹیکر نے کہا تھا اننت کمار ہیگڈے میرے لئے اپنے خاندانی دیوتا جیسے ہیں۔ اور اب اسی دیوتا کی موت کی تمنا کرنا کونسی تہذیب ہے۔وہ جسمانی طور پر طاقتور ہیں لیکن ذہنی طور پر قبرستان میں پہنچ گئے ہیں ۔  

روپالی نائک نے کی مذمت:    انکولہ کاروار ایم ایل اے روپالی نائک نے اسنوٹیکر کی مذمت کرتے ہوئے کہا کہ قابل فخر دیش بھکت اننت کمار ہیگڈے جیسے رکن پارلیمان کے خلاف غیر مہذب زبان استعمال کرنے والے سابق وزیر آنند اسنوٹیکر کو معافی مانگنی چاہیے۔ ورنہ آنے والے دنوں میں بی جے پی کی طرف سے انہیں سبق سکھایا جائے گا۔ روپالی نائک نے کہا کہ اننت کمار کے ووٹرس اور ریاست بھر میں ان کے چاہنے والوں کو آنند اسنوٹیکر کے بیان سے چوٹ پہنچی ہے۔

منڈیا میں درج ہوئی شکایت:     اننت کمار ہیگڈے کے چاہنے والوں کی طرف سے منڈیا میں آنند اسنوٹیکر کے خلاف پولیس کے پاس شکایت درج کروائی گئی۔ منڈیا کے انیل گوڈا نامی شخص نے اپنے آپ کو ہیگڈے کا پرستار بتاتے ہوئے پولیس سپرنٹنڈنٹ کے پاس شکایت درج کروائی اور مطالبہ کیا ہے کہ رکن پارلیمان ہیگڈے کے بارے میں ناشائستہ زبان استعمال کرنے والے اسنوٹیکر کے خلاف قانونی کارروائی کی جائے۔

    سنیل نائک نے بھی کی مذمت:     بھٹکل ہوناور حلقہ کے رکن اسمبلی سنیل نائک نے آنند اسنوٹیکر کے بیان کی سخت الفاظ میں مذمت کرتے ہوئے کہا کہ اسنوٹیکر کو دماغی علاج کی سخت ضرورت ہے۔ شہر میں اخباری کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ رکن پارلیمان اور سابق مرکزی وزیر اننت کمار ہیگڈے کے خلاف بولنے کا اسنوٹیکر کو کوئی حق نہیں ہے۔ اس طرح جو بھی منھ میں آیا بولنے کا مزاج ان کے کلچر کی عکاسی کرتا ہے۔ 4 لاکھ ووٹوں کے فرق سے ہارنے والے آنند اسنوٹیکر کو اننت کمار ہیگڈے کی طاقت کیا ہے اس کا اندازہ لگانے کا شعور نہیں ہے۔ ہمیشہ گوا میں پڑے رہنے والے اسنوٹیکر کو کسی بڑے دماغی علاج کے اسپتال میں داخل کیا جانا ضروری ہے۔انہوں نے اسنوٹیکر کو تاکید کرتے ہوئے کہا کہ وہ اپنی زبان کو لگام دیں اور اس قسم کی باتیں دوبارہ اپنے منھ  سے نہ نکالیں۔ ہم سے ہرگز برداشت نہیں کریں گے۔

    اننت کمار کو فون پر دھمکی؟! :     اننت کمار ہیگڈے کے پرسنل سیکریٹری سنتوش شیٹی نے سرسی پولیس اسٹیشن میں شکایت درج کروائی ہے کہ کسی گمنام شخص کی طرف سے ٹیلی فون پر دھمکیاں دی جارہی ہیں۔ شکایت میں کہا گیا ہے کہ فون کرنے والے نے اردو ملی جلی زبان میں کہا ہے کہ 'میں تمہارے ساتھ کیا کرتا ہوں، دیکھ لینا۔ میں تمہیں ایسے ہی نہیں چھوڑوں گا۔' اس سے پہلے فروری 2019 اور اپریل 2019 میں بھی اس قسم کی کال آئی تھی جس کے بارے میں پولیس سے شکایت کی گئی تھی ۔ اوراب پھر ایک بار ایسی کال موصول ہوئی ہے۔

ایک نظر اس پر بھی

بھٹکل میں قاضی صاحبان کی ہدایات کے بعد اسسٹنٹ کمشنر نے جاری کیں نئی گائیڈلائنس؛ مسجد میں عوام کو نماز پڑھنے کی نہیں ہوگی اجازت

ریاست میں کورونا کے بڑھتے معاملات کو دیکھتے ہوئے  بھٹکل میں نماز بالخصوص تراویح کی نماز کو لے کر  قاضی صاحبان کی جانب سے جاری کی گئیں ہدایات کے بعد شام کو اسسٹنٹ کمشنر نے سرکار کی جانب سے جاری کردہ نئی گائیڈلائن سے  اخبارنویسوں کو آگاہ کیا ہے جس میں  مندر، مسجد اور چرچ وغیرہ ...

کرناٹکانائٹ کرفیو؛ بھٹکل میں نماز عشاء اور تراویح کو لے کر قاضی صاحبان نے جاری کیں رہنما ہدایات

ملک کے دیگر شہروں کی طرح ریاست کرناٹک میں بھی   کورونا کے بڑھتے معاملات کو لے کرحکومت نے  آج بدھ سے   ریاست بھر میں  امتناعی  احکامات دفعہ 144 نافذ کرنے کے  ساتھ ساتھ  رات نو بجے سے صبح 6 بجے تک نائٹ کرفیو  کا اعلان کیا ہے، جس کو دیکھتے ہوئے آج قومی سماجی ادارہ  مجلس اصلاح و ...

منگلورو: آسمانی بجلی گرنے سے ایک بچہ جاں بحق دوسرا شدید زخمی

منگلورو تعلقہ کے ہلے انگڈی نامی گاوں میں کھلے میدان میں کھیلنے والے دو بچے آسمانی بجلی کی زد میں آگئے جن میں سے ایک  بعد میں زخموں کی تاب نہ لاکر چل بسا، البتہ دوسرا بچہ  بھی  شدید زخمی ہوا ہے اور اُسے  بے حد  نازک حالت میں اسپتال میں داخل کیا گیا ہے۔

اُڈپی: کورونا کو لے کر بسوں پر سماجی فاصلہ برقرار نہ رکھنے پر ڈپٹی کمشنر نے بسوں پر سے طلبہ کو اُتارا، عوام کی طرف سے زبردست تنقید

کوویڈ کے رہنما اُصولوں پر عمل نہ کرنے کے خلاف مہم چلاتے ہوئے اُڈپی ڈپٹی کمشنر نے آج منگل کو جب  مسافروں سےبھری ایک بس کو روک کر مسافروں کو نیچے اُتارا تو کئی طلبہ و طالبات بھی اس کی زد میں آگئے، جنہوں نے  ڈی سی کے اس اقدام کی جم کر مخالفت کی ، اس تعلق سے ایک  وڈیو بھی سوشل میڈیا ...

گوکرن کے مہابلیشور مندر کے متعلق سپریم کورٹ کا اہم فیصلہ : مندرکی نگرانی کے لئے کمیٹی تشکیل دینے کا حکم

اترکنڑاضلع کے ہندؤوں کے مشہورو تاریخی مذہبی مقام گوکرن کی مہابلیشور مندر کے تعلق سے سپریم کورٹ نے حکم دیا ہے کہ  ریاستی حکومت  مندر کے انتظامی امور کو رام چندر پور مٹھ سے واپس لے۔ یاد رہے کہ  پچھلی بی جے پی کی حکومت نے گوکرن کے مہابلیشور مندر کی انتظامیہ اور نگرانی رام چندر ...

اُڈپی ضلع کے کوڈؤر کی جامعہ مسجد کی زمین پر غیرقانونی سرگرمیوں کا الزام: اے پی سی آر کی جانب سے انسانی حقوق کمیشن میں شکایت درج

کوڈؤور کلمات مسجد کی رجسٹرڈ زمین پر زور زبردستی داخل ہوکر غیر قانونی سرگرمیوں کو انجام دیا گیا ہے اور مسجد آنے والوں کو رکاوٹ پیدا کرنے کے متعلق اے پی سی آر اُڈپی نے 15اپریل کو کرناٹکا حقوق انسانی کمیشن میں شکایت درج کی ہے۔

گوکرن کے مہابلیشور مندر کے متعلق سپریم کورٹ کا اہم فیصلہ : مندرکی نگرانی کے لئے کمیٹی تشکیل دینے کا حکم

اترکنڑاضلع کے ہندؤوں کے مشہورو تاریخی مذہبی مقام گوکرن کی مہابلیشور مندر کے تعلق سے سپریم کورٹ نے حکم دیا ہے کہ  ریاستی حکومت  مندر کے انتظامی امور کو رام چندر پور مٹھ سے واپس لے۔ یاد رہے کہ  پچھلی بی جے پی کی حکومت نے گوکرن کے مہابلیشور مندر کی انتظامیہ اور نگرانی رام چندر ...

لاک ڈاؤن کی بجائے دفعہ 144 نافذ کی جائے : سی ایم ابراہیم| کورونا سے شہید ہونے والے مسلمانوں کی تدفین کیلئے علاحدہ جگہ دی جائے : ضمیر احمد خان 

کورونا سے شہید ہونے والے مسلم طبقے کے افراد کی تدفین کے لئے علاحدہ جگہ دی جائے ۔رکن اسمبلی ضمیر احمد خان نے  ودھان سودھا میں ہوئی بنگلورو کے اراکین اسمبلی،اراکین پارلیمان کی میٹنگ میں یہ مطالبہ کیا۔ انہوں نے کہا کہ ہر ایک رکن اسمبلی کے لئے 25 کووڈ بیڈ اسپتالوں میں ریزرو کئے ...

کرناٹک میں لاک ڈاؤن ضروری نہیں، نائٹ کرفیو کے اوقات میں تبدیلی نہیں، دفعہ 144 نافذ کریں؛ ریاستی حکومت کو اپوزیشن کے مشورے 

بنگلورو میں کووڈ۔ 19 معاملات تیزی سے بڑھنے کے سبب  وزیر اعلیٰ  یڈیورپا، بنگلورو کے وزراء، اراکین پارلیمان اور اراکین اسمبلی کے ساتھ ویڈیو کانفرنس منعقد کی گئی۔  جس میں حکومت کو مشورہ دیا گیا کہ لاک ڈاؤن نافذ نہ  کر یں ،اسپتالوں میں کووڈ بستروں کی قلت دور  کریں۔مہلوکین کی ...

کرناٹک میں کورونا کی دہشت کا ایک اور ریکارڈ ، تقریباً 20 ؍ ہزار متاثر ، بنگلورو میں لاک ڈاؤن یا سخت امتناعی احکامات ؟

اتوارکے روز کرناٹک میں کورونا نے اپنا خوفناک ترین رخ پیش کیا اور اب تک متاثرین کی تعداد کا ایک نیا ریکارڈ سامنے آیا ریاست بھر میں 7 6 0 9 1 تازه معاملات سامنے آئے ۔ 81 لوگوں کی موت واقع ہوئی ہے۔

بھٹکل: ریاست میں کورونا کے بڑھتے معاملات سےپریشان طلبہ نے پیر سے شروع ہونے والے امتحانات منسوخ کرنے ٹوئیٹر پر چلائی مہم

کورونا کی دوسری لہر میں  بڑھتے کیسس کے دوران ایک طرف  میٹرک اور سکینڈ پی یوسی کے امتحانات ملتوی اور منسوخ کئے جارہےہیں تو وہیں دوسری طرف ویشویشوریا ٹیکنالوجیکل یونیورسٹی (وی ٹی یو) کے تحت آنے والی کالجس میں کل  پیر سے فرسٹ سیمسٹر کے امتحانات شروع ہورہےہیں۔