کرناٹکا اسمبلی کے سابق باغی اراکین کی نااہلیت برقرار۔ لیکن انتخاب لڑ نے پر نہیں ہوگی پابندی۔ سپریم کورٹ کا فیصلہ

Source: S.O. News Service | Published on 13th November 2019, 12:33 PM | ریاستی خبریں | ملکی خبریں |

نئی دہلی13/ نومبر (ایس او نیوز) سابقہ اسمبلی میں جن 17 کانگریس اور جے ڈی ایس اراکین نے بغاوت کی تھی، انہیں سپریم کورٹ سے تھوڑی سے راحت ملی ہے جس کا اثر ریاستی بی جے پی حکومت پر بھی پڑنے والا ہے۔

یاد رہے کہ کانگریس جے ڈی ایس کی مخلوط ریاستی حکومت کو گرانے کا سبب بننے والے14کانگریسی اور 3جے ڈی ایس اراکین اسمبلی کو اس وقت کے اسپیکر رمیش کمار نے ’دَل بدلی مخالف قانون‘ کے تحت جولائی میں نااہل قرار دیتے ہوئے ان کے 2023تک انتخابات میں حصہ لینے پر پابندی لگائی تھی۔ اس کے خلاف باغی اور نااہل قرار دئے اراکین اسمبلی نے سپریم کورٹ کا دروازہ کھٹکھٹایا تھا اور نااہل قراردینے کے فیصلے کو منسوخ کرنے کی مانگ کی تھی۔جبکہ کانگریس اور جے ڈی ایس نے بھی عدالت سے رجوع کیاتھا اور اسپیکر کے فیصلے کی حمایت کی تھی۔

آج سپریم کورٹ میں جسٹس این وی مورتی کی قیادت والی سہ رکنی بینچ نے اس معاملے میں فیصلہ سناتے ہوئے ایک طر ف اسپیکر رمیش کمار کے اس فیصلے کو درست قرار دیا جس میں ان اراکین کو نااہل قرار دیا گیا تھا۔ البتہ انتخاب میں حصہ لینے پر لگائی گئی پابندی کو ہٹا دیا۔سپریم کورٹ نے اپنے فیصلے میں کہا ہے کہ ”ایک جمہوری نظام حکومت میں اخلاقیات کی پابندی حکومت کے ساتھ ساتھ اپوزیشن پربھی لاگو ہوتی ہے۔“کورٹ نے اپنے فیصلے میں مزید یہ بھی کہا کہ ”درخواست گزاروں کوہائی کورٹ سے رجوع ہونا چاہیے تھا، مگر مخصوص حالات کی وجہ سے ہمیں اس پر شنوائی کرنی پڑی۔ 

اب سپریم کورٹ کے فیصلے کے بعد یہ باغی اراکین بی جے پی کے ٹکٹ پر15سیٹوں پر ہورہے ؤ ضمنی الیکشن لڑ سکیں گے۔بی جے پی کو اپنی اکثریت بچانے کے لئے 15میں سے کم از کم 6سیٹیں جیتنا لازمی ہوگا۔وزیراعلیٰ ایڈی یورپا نے ان نااہل قراردئے گئے باغی اراکین کی ہمیشہ حمایت کی ہے اور خود انہوں نے ایک ویڈیو کلپ میں اقرارکیا ہے کہ پارٹی ہائی کمان کی اجازت سے یہ بغاوت کروائی گئی تھی۔ اس لئے اب ان اراکین کو ٹکٹ دے کر اپنا وعدہ پورا کرنا وزیراعلیٰ ایڈی یورپا کے لئے ضروری ہوگیا ہے۔لیکن زمینی حقیقت یہ ہے کہ کانگریس اور جے ڈی ایس کے باغی اراکین کو بی جے پی کاٹکٹ دے کر جیت دلانا اور پھر ان سے کیے گئے وعدے کے مطابق وزارتی قلم دان سونپنا وزیر اعلیٰ کے لئے اتنا آسان بھی نہیں ہوگا۔ اس مسئلے پر خود بی جے پی کے اندر پہلے سے ہی کچھ اختلافا ت دیکھے گئے ہیں اب سپریم کورٹ کے فیصلے کے بعد مخالفانہ لہر تیز ہونے کی پوری امید کی جارہی ہے۔

ایک نظر اس پر بھی

مرکزی حکومت کے خلاف 8/جنوری کو ملک گیر ہڑتال کا اعلان

آل انڈیا اسٹوڈنٹس فیڈریشن (اے آئی ایس ایف) نے تعلیم، روزگار، خواتین کے حقوق کی پامالی، معاشی شعبہ میں گراوٹ اوربے روزگاری کے مسئلہ کو حل کرنے میں ناکام مرکزی حکومت کے خلاف 8/جنوری کو ملک گیر ہڑتال کا اعلان کیا ہے-

شہریت ترمیمی قانون کے خلاف ہلیال میں دیا گیا میمورنڈم

مرکزی حکومت کی جانب سے متنازع شہریت ترمیمی بل منظور کیے جانے کے خلاف ہلیال میں جمیت العلماء الہند ضلع کاروارکے پرچم تلے مسلمانوں اور غیر مسلم ایس سی / ایس ٹی لیڈروں نے مشترکہ طور پر تحصیلدار کی معرفت سے صدر ہند کو میمورنڈم پیش کیا۔

شہریت ترمیمی بل کے خلاف بنگلورو میں کرناٹکامسلم متحدہ محاذ کے زیر اہتمام ملّی و سماجی تنظیموں کا زبردست احتجاجی مظاہرہ

سماج کو مذہبی بنیادوں پر تقسیم کرنے والے مرکزی حکومت کے شہریت ترمیمی بل (سی اے بی) کے خلاف بنگلورو میں کرناٹکا متحدہ محاذ کے زیر اہتمام دوپہر 12بجے ٹاؤن ہال کے پاس ایک زبردست احتجاجی مظاہرہ کیا گیا۔

اداکارہ پائل روہتگی کو پولیس نے حراست میں لیا، نہرو خاندان پر قابل اعتراض تبصرہ کرنے کا تھا الزام

بالی ووڈ اداکارہ پائل روہتگی کو راجستھان کی بوندی پولیس نے حراست میں لے لیا ہے۔پائل روہتگی کو سابق وزیر اعظم پنڈت جواہر لال نہرو پر قابل اعتراض تبصرہ کے لئے حراست میں لیا گیا ہے۔

فاروق عبداللہ کو حراست میں لینا شرمناک، فوراً رہا کیے جائیں: اسٹالن

 دراوڑ منتر كشگم (ڈی ایم کے) سربراہ ایم کے اسٹالن نے جموں و کشمیر کے سابق وزیر اعلی فاروق عبداللہ کو پبلک سیفٹی قانون (پی ایس اے) کے تحت حراست میں لئے جانے کو آئینی اقدار اور جمہوری روایات کے لئے شرمناک قرار دیتے ہوئے ان کی فوری طور پر رہائی کا مطالبہ کیا ہے۔

حیدرآباد انکاؤنٹر: سپریم کورٹ کا تشکیل شدہ کمیشن آئندہ ہفتہ دورہ کرے گا

 حیدرآباد کے سائبر آباد پولس کمشنریٹ کی حدود میں 26 سالہ وٹرنری ڈاکٹر کی اجتماعی عصمت دری کے بعد اس کے قتل اور لاش کو جلا دینے کی واردات میں ملوث ملزمین کی انکاونٹر میں ہلاکت کی جانچ کے لئے سپریم کورٹ کی جانب سے تشکیل دیا گیا کمیشن آئندہ ہفتہ حیدرآباد کا دورہ کرے گا۔