ریزرویشن معاملہ: حکومت کا تعصب ایک طرف لیکن مسلمان اپنے حقوق کی حصولیابی اورسرکاری اسکیمات سے فائدہ اٹھانے میں بھی ناکام۔۔۔۔ روزنامہ سالارکا تجزیہ

Source: S.O. News Service | Published on 15th February 2021, 11:51 PM | ریاستی خبریں | اسپیشل رپورٹس |

بینگلور 14 فروری: کرناٹک میں مختلف طبقات کی طرف سے ریزرویشن کی مانگ کو لے کر ماحول جس طرح دن بہ دن گرمی اختیار کرتا جا رہا ہے اسی درمیان یہ بات بھی سامنے آئی ہے کہ تمام طبقات کیلئے حکومت کی طرف سے آئین کے دائرے میں رہتے ہوئے ریزرویشن دینے کا وزیر اعلیٰ بی ایس ایڈی یورپا کی طرف سے اعلان کیا گیا ہے۔

اس کے بعد یہ بات بھی سامنے آئی ہے کہ وزیر اعلیٰ نے کرناٹک کے پسماندہ طبقات کمیشن کو یہ ہدایت دی ہے کہ حکومت کی طرف سے کرناٹک میں سپریم کورٹ کی ہدایت کے مطابق مقرر کردہ حد50فیصد میں رہتے ہوئے کس طرح تمام طبقات کے ریزرویشن کی مانگ کو پورا کیا جا سکتا ہے اس کیلئے ایک فارمولہ تیار کیا جائے- اس کے بعد سے پسماندہ طبقات کمیشن کی طرف سے اس کام کی شروعات ہو چکی ہے- اسی دوران جہاں یہ خدشات سامنے آرہے ہیں کہ ریزرویشن کی50فیصد حد میں اضافہ کر کے سپریم کورٹ کی حکم عدولی کے قانونی جھمیلے میں پھنسنے کی بجائے حکومت ایسے کسی آسان راستے کی تلاش کر رہی ہے کہ جن طبقات کی طرف سے ریزرویشن کی مانگ کی جا رہی ہے انہیں کسی حد تک مطمئن کیا جا سکے-اسی بنیاد پر ان خدشات کو تقویت مل رہی ہے کہ حکومت کی طرف سے مسلمانوں کو2Bکے تحت ملنے والے ریزرویشن سے چھیڑ چھاڑ کی جا سکتی ہے-

اس ریزرویشن کے تحت بعض سرکاری محکموں میں تقررات مکمل ہو رہے ہیں بلکہ 4فیصد ریزرویشن کے بعد جنرل زمرے میں بھی مسلم امیدواروں کا انتخاب ان کے میرٹ کی بنیاد پر ہو رہا ہے- لیکن متعدد سرکاری محکمے اب بھی ایسے ہیں جن کی طرف مسلم امیدواروں کی توجہ نہیں گئی یا ان میں خالی پڑی ہوئی اسامیوں کو پر کرنے کے بارے میں ان تک معلومات نہیں فراہم کی گئیں -صورتحال یہ ہے کہ ان سرکاری محکموں میں اقلیتی نمائندگی نہ ہونے کے سبب مسلم ریزرویشن کا جو بیک لاگ ہے وہ مجموعی طور پر 1.5فیصد کے آس پاس مانا جا رہا ہے اس کو پر کرنے کیلئے سرکاری سطح پر سنجیدہ کوشش ابھی تک ندارد ہے-

سابقہ سدارامیا حکومت نے15 فروری2015کو ایک سرکاری حکم نامہ جاری کرتے ہوئے تمام سرکاری محکموں کو یہ ہدایت جاری کی تھی کہ پسماندہ طبقات کو جو ریزرویشن دیا گیا ہے اس میں سے کوئی بھی بیک لاگ آسامی خالی نہ رکھی جائے اور اس کو اگلی بھرتی میں شامل کر کے اسے پہلے پر کیا جائے-لیکن اب یہ بات سامنے آئی ہے کہ موجود ہ حکومت کی طرف سے اس حکم نامہ پر عمل کرنے کے سلسلہ میں تمام سرکاری محکمو ں کو سست روی برتنے کی ہدایت دی گئی ہے- نتیجہ یہ ہوا ہے کہ گزشتہ چند مہینوں سے جاری بھرتیوں کے عمل میں پسماندہ طبقات کے ریزرویشن کے تحت آنے والے2Bزمرے کے بیک لاگ کو پر کرنے کی جانب توجہ نہیں دی جا رہی ہے بلکہ امیدواروں کی بھرتی صرف تازہ ریزرویشن کی بنیاد پر کی جا رہی ہے-

اس کا ایک اور پہلو یہ بھی سامنے آیا ہے کہ جہاں محکمہ تعلیم میں مسلم ریزرویشن کا پورا استعمال ہو رہا ہے دیگرسرکاری محکموں میں اس کا استعمال نہیں ہو پا رہا ہے- محکمہ پولیس میں ریزرویشن ہونے کے باوجود بھرتی کے عمل میں مسلم امیدواروں کی حصہ داری 3فیصد سے آگے نہ جا سکی- اسی طرح دیگر سرکاری محکموں میں بھی مسلم امیدواروں کی بھرتی کا اوسط ریزرویشن کے مقررہ اوسط سے کم ہے-

حکومت اگر ریزرویشن کو کم کرنے کے بارے میں منصوبہ بنا سکتی ہے تو اس میں صرف حکومت کا تعصب ہی نہیں بلکہ اس کو حاصل کرنے میں مسلمانوں کی غفلت کا بھی دخل صاف نظر آرہا ہے- ایسا نہیں کہ تعلیم یافتہ امیدواروں کی کمی ہے لیکن سرکاری ملازمت حاصل کرنے میں ان کی رہنمائی نہ ہونے کے سبب شاید انہوں نے سرکاری ملازمت پر پرائیویٹ سیکٹر کو فوقیت دے دی- ان اسباب پر غور کرنے کی ضرورت ہے کہ ریزرویشن کی سہولت کو حاصل کرنے میں دشواری کیا ہے- تعلیم یافتہ نوجوانوں کو سرکاری ملازمت کی اہمیت کے بارے میں بیدار کیوں نہیں کیا جا رہا ہے اور اگر کیا جا رہا ہے تو پھر ریزرویشن میں بیک لاگ کیوں رہ گیا ہے- شاید اس بیک لاگ کے باقی رہ جانے کا فائدہ اٹھاکر حکومت ریزرویشن کو نقصان پہنچانے کی کوشش کرے-

ایک نظر اس پر بھی

کرناٹک میں کورونا کی دہشت کا ایک اور ریکارڈ ، تقریباً 20 ؍ ہزار متاثر ، بنگلورو میں لاک ڈاؤن یا سخت امتناعی احکامات ؟

اتوارکے روز کرناٹک میں کورونا نے اپنا خوفناک ترین رخ پیش کیا اور اب تک متاثرین کی تعداد کا ایک نیا ریکارڈ سامنے آیا ریاست بھر میں 7 6 0 9 1 تازه معاملات سامنے آئے ۔ 81 لوگوں کی موت واقع ہوئی ہے۔

بھٹکل: ریاست میں کورونا کے بڑھتے معاملات سےپریشان طلبہ نے پیر سے شروع ہونے والے امتحانات منسوخ کرنے ٹوئیٹر پر چلائی مہم

کورونا کی دوسری لہر میں  بڑھتے کیسس کے دوران ایک طرف  میٹرک اور سکینڈ پی یوسی کے امتحانات ملتوی اور منسوخ کئے جارہےہیں تو وہیں دوسری طرف ویشویشوریا ٹیکنالوجیکل یونیورسٹی (وی ٹی یو) کے تحت آنے والی کالجس میں کل  پیر سے فرسٹ سیمسٹر کے امتحانات شروع ہورہےہیں۔

شیواجی نگرمیں کورونا متاثرین کی مدد کیلئے وار روم، چرکا سوپر اسپشالٹی اسپتال میں 150بستر دو دن میں مہیا کروا دئیے جائیں گے: رضوان ارشد

کورونا وائر س کی دوسری لہر نے جس قدر شدت اختیار کی ہے، اسے دیکھتے ہوئے شہر کے قلب میں آنے والے علاقے شیواجی نگر اور آس پاس کے علاقوں میں لوگوں کو فوری راحت رسانی کے انتظامات کا رکن اسمبلی رضوان ارشد نے ہفتے کے روز بی بی ایم پی افسروں کے ساتھ جائزہ لیا۔

 کیا شمالی کینرا میں کانگریس پارٹی کی اندرونی گروہ بندی ختم ہوگئی ؟

ضلع شمالی کینرا کو ایک زمانہ میں پورری ریاست کے اندر کانگریس کا سب سے بڑا گڑھ مانا جاتا تھا، لیکن آج ضلع میں کانگریس پارٹی کا وجود ہی ختم ہوتا نظر آرہا ہے، کیونکہ ضلع کی چھ اسمبلی سیٹوں میں سے صرف ہلیال ڈانڈیلی حلقہ چھوڑیں تو بقیہ پانچوں سیٹوں کے علاوہ پارلیمان کی ایک سیٹ پر بی ...

منگلورو: قانونی پابندی کے باوجود دستیاب ہیں ویڈیو گیمس. نئی نسل ہو رہی ہے برباد۔ ماہرین کا خیال

ویڈیو گیم میں ہار جیت کے مسئلہ پر منگلورو میں ایک نوعمر لڑکے کے ہاتھوں دوسرے کم عمر لڑکے عاکف کے قتل کے بعد ویڈیو گیمس اور خاص کر پبجی کا موضوع پھر سے گرما گیا ہے اور کئی ماہرین نے ان ویڈیو گیمس کو نئی نسل کے لئے تباہ کن قرار دیا ہے۔

انکولہ : کون کھیل رہا ہے 'چور پولیس' کا کھیل؟ ایڈیشنل ایس پی پر جان لیوا حملہ ۔ غنڈوں پر درج نہیں ہوا اقدامِ قتل کا کیس!

دو دن پہلے انکولہ تعلقہ کے ہٹّی کیری ٹول گیٹ پر ہنگامہ آرائی کرنے اور ایک پولیس آفیسر پر حملہ کی کوشش کیے جانے کی رپورٹ میڈیا میں آئی تھی۔ اور یہ بھی بتایا گیا تھا کہ پولیس نے  ہنگامہ کرنے والوں کی خوب دھلائی کی ہے اور ان پر پولیس آفیسر کو اپنے فرائض انجام دینے سے روکنے کا کیس ...

کاروار: تعلقہ پنچایت کی تازہ حلقہ بندی کے لئے ریاستی الیکشن کمیشن کی ہدایات سے پیدا ہوئی الجھن ۔ ڈانڈیلی کی 10 ہزار آبادی کے لئے 11 سیٹیں ۔ بھٹکل کی 1 لاکھ آبادی کے لئے 9 سیٹیں !

کاروار: تعلقہ پنچایت کی تازہ حلقہ بندی کے لئے ریاستی الیکشن کمیشن کی ہدایات سے پیدا ہوئی الجھن ۔ ڈانڈیلی کی 10 ہزار آبادی کے لئے 11 سیٹیں ۔ بھٹکل کی 1 لاکھ آبادی کے لئے 9 سیٹیں !