کیا مرکزی حکومت چاہتی ہے کہ کرناٹک میں اوربھی زیادہ لوگ مریں؟ آکسیجن کی قلت کے مسئلہ پر کرناٹک ہائی کورٹ کا انتہائی تلخ تبصرہ، کرناٹک کا کوٹہ آج ہی بڑھانے کی ہدایت

Source: S.O. News Service | Published on 5th May 2021, 6:16 AM | ریاستی خبریں | ملکی خبریں |

بنگلورو، 5/مئی(ایس او نیوز) کرناٹک کو آکسیجن کا کوٹہ مقرر کرنے میں مرکزی حکومت کی تاخیر پر منگل کے روز کرناٹک ہائی کورٹ نے سختی برہمی کا اظہار کیا اور مرکزی حکومت کے وکیل سے عدالت نے دریافت کیا کہ کیا مرکزی حکومت چاہتی ہے کہ کرناٹک میں اور بھی زیادہ لوگ مریں؟

چیف جسٹس ابھے سرینواس اوکا اور جسنس اروند کمار پر مشتمل بینچ میں چیف جسٹس نے مرکزی حکومت نے وکیل کو واضح کردیا کہ مرکزی حکومت کے طریقہ کار سے عدالت کو کچھ سروکار نہیں بلکہ عدالت یہ چاہتی ہے کہ فوری طوررپ آکسیجن کی فراہمی کی جائے۔ عدالت نے یہ دریافت کیا کہ مرکزی حکومت نے ان ریاستو ں کو افزود آکسیجن کیو ں دیا جن کی مانگ کم ہے۔ جبکہ ان ریاستوں کو آکسیجن نہیں دے رہی ہے جہاں کورونا متاثرین کی تعداد کافی زیادہ ہے۔ عدالت نے اس صورتحال کا جواز طلب کیا۔

چامراج نگر میں آکسیجن کی قلت سے 24لوگوں کی موت کے واقعہ کا حوالہ دیتے ہوئے بینچ نے مرکزی حکومت کو خوب آڑے ہاتھوں لیا۔ مرکزی حکومت کی طرف سے حاضر ہو کر وکیل نے اس سلسلہ میں فیصلہ کے لئے ایک اور دن کی مہلت مانگی جس پر عدالت نے ناراضگی کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ جو بھی فیصلہ ہو گا اور تازہ صورتحال ہو گی اس کی تفصیل چہارشنبہ کی صبح 10.30بنے عدالت کے سامنے ہونی چاہئے۔ بینچ نے کہا کہ مرکزی حکومت کو عدالت یہ واضح کردینا چاہتی ہے کہ چہارشنبہ کی صبح جب اس معاملہ کی سماعت شروع ہو گی مرکزی حکومت کا فیصلہ عدالت کے سامنے ہونا چاہئے۔عدالت کو اس سے پہلے ریاستی حکومت کی طرف سے یہ بتادیا گیا تھا کہ ریاست میں روزانہ 1792میٹرک ٹن آکسیجن کی ضرورت ہے جبکہ مرکزی حکومت کی طرف سے 802میٹرک ٹن آکسیجن فراہم کیا جا رہا ہے۔ 

اس ضمن میں عدالت کی طرف سے 30اپریل کو حکم صادر کئے جانے کے بعد یہ بتایا گیا ہے کہ کوٹہ کو بڑھا کر 865ٹن کیا گیا ہے۔ اس مرحلہ میں ایک عرضی گزار کے وکیل نے اسی طرح کے معاملہ میں دہلی ہائی کورٹ کے حکم کا حوالہ دیا اورکہا کہ اس حکم سے دہلی کو کچھ حد تک راحت ملی۔ 

چامراج نگر المیہ کے بارے میں ہائی کورٹ نے حکومت سے تفصیل مانگی اور دریافت کیا کہ وافر مقدار میں آکسیجن کی فراہمی یقینی بنانے کے لئے حکومت نے کیا کیا ہے۔ اس سلسلہ میں کوئی حکم صادر کئے بغیر عدالت نے صرف یہ تبصرہ کیا کہ یہ بات صاف ہے کہ ریاست میں آکسیجن کی شید قلت ہے اس کے اسباب کا پتہ لگانے کے لئے ایک ریٹائرڈ جج کے ذریعے جانچ کروانی ہو گی۔

ایک نظر اس پر بھی

لوگ کورونا سے مرے جارہے ہیں اور ریاستی حکومت کو لگی ہے ذات پات کے اعداد و شمار کی فکر

پورے ملک کی طرح ریاست میں بھی کورونا کا قہر جاری ہے ۔ عوام آکسیجن، اسپتال میں بستر اور دوائیوں کی کمی سے تڑپ رہے ہیں۔ لیکن ریاستی حکومت کو الیکشن اور ذات پات کی تفصیلات کی فکر لاحق ہوگئی ہے تاکہ آئندہ انتخاب کے لئے تیاریاں مکمل کی جائیں۔

کورونا پر قابو پانے میں ایڈی یورپا مکمل طورپر ناکام: ایم بی پاٹل

ریاست میں کورونا وباء سے نمٹنے میں ایڈی یورپا کی بی جے پی حکومت مکمل ناکام ہوچکی ہے۔سابق ریاستی وزیر و مقامی بی ایل ڈی ای میڈیکل کالج کے سربراہ ایم بی پاٹل نے آج یہاں ایک اخباری کانفرنس کو خطاب کرتے ہوئے ڈنکے کی چوٹ پر یہ بات بتائی۔

کرناٹک میں 120ٹن لکویڈ آکسیجن کی آمد

ریاست کرناٹک میں میڈیکل آکسیجن کی قلت ہنوز جاری ہے۔ حکومت آکسیجن منگوانے کی ہر ممکن کوشش کرنے کا دعویٰ کررہی ہے۔ ریاست کی راجدھانی بنگلورو میں پہلی آکسیجن ایکسپریس کی آمد ہوئی۔

کرناٹک لاک ڈاؤن:اب تک 19949گاڑیاں ضبط

ریاست   میں کوروناوائرس کے بے تحاشہ پھیلاؤ کے سبب ریاست گیرلاک ڈاؤن نافذکیاگیاہے،تاکہ کوروناپرقابوپاجائے۔لاک ڈاؤن کے دوران کسی بھی سوری کوسڑک پراترنے کی اجازت نہیں ہے۔اس قسم کی سختی کے باوجودبہت سارے لوگ گاڑیوں میں گھومتے ہوئے نظرآئے،خلاف ورزی کی پاداش میں پولیس سواریوں ...

تیجسوی سوریاریاست کیلئے زہریلابیج ہے:ڈی کےشیوکمار

ریاست کرناٹک  میں کووڈکے معاملات میں ہرگزرتے دن کے ساتھ اضافہ ہورہاہے،اس دوران وزیراعلیٰ نے تیسری لہرپرقابوپانے کی تیاری کرنے کی صلاح دی ہے۔پہلے کووڈکی دوسری لہرپرقابوپانے کی کوشش کرے پھرتیسری لہرپرقابوپانے کی بات کریں۔یہ باتیں کے پی سی سی صدرڈی کے شیوکمارنے کہی۔

کورونا کا خاتمہ جولائی تک نہیں ہوگا: ایکسپرٹ

جس طرح کورونا کے نئے معاملوں کی تعداد میں کمی درج ہو رہی ہے اس سے یہ امید بنی ہے کہ ہندوستان میں کورونا کی دوسری لہر کا خاتمہ جلد ہو جائے گا لیکن وبائی بیماریوں کے ماہر شاہد جمیل کا کہنا ہے کہ بھلے ہی ابھی کچھ ریاستوں میں کورونا کے کیس کم ہوتے نظر آ رہے ہوں لیکن دوسری لہر کا ...

سادگی کے ساتھ عید منائیں اور چھوٹی جماعت کے ساتھ عید کی نماز ادا کریں ، سرکردہ مسلم رہنماوں کی مسلمانوں سے اپیل

آل انڈیا مسلم پرسنل لاء بورڈ کے صدر مولانا رابع حسنی ندوی ۔ جمعیت علماءہند کے صدر مولانا ارشد مدنی ۔ جماعت اسلامی ہند کے امیر سید سعادت اللہ حسینی سمیت دیگر سرکردہ علماء اور مسلم قائدین مسلمانوں نے اپیل کی ہے کہ وہ کرونا کے بڑھتے خطرات کے پیش نظر احتیاط کریں اور مختصر جماعت ...

لاک ڈاؤن پر ہو سختی سے عمل: اشوک گہلوت

راجستھان میں عالمی وبا کورونا کی دوسری لہر کی چین توڑنے کے لئے آج صبح 5بجے سے لے کر 24 مئی تک سخت لاک ڈاؤن نافذ ہوگیا ہے۔ اس مدت کے دوران، ہنگامی اور ضروری خدمات، میڈیکل، دودھ اور دیگر ضروری خدمات کے لئے رعایت رہے گی۔