کرناٹک کانگریس نے کووڈ کے بڑھتے ہوئے معاملوں کے درمیان میکے ڈاٹو پیدل مارچ کو کردیا معطل؛ سدرامیا نے کورونامعاملوں میں اضافے کےلئے بی جے پی کو قرار دیا ذمہ دار

Source: S.O. News Service | By I.G. Bhatkali | Published on 13th January 2022, 2:20 PM | ریاستی خبریں |

رام نگر 13 جنوری (ایس او نیوز) میکے ڈاٹو واٹر پروجکٹ کا مطالبہ  لے کر شروع کی گئی کانگریس کی میکے  ڈاٹو پیدل ریلی کو کانگریس نے  کووڈ کے بڑھتے ہوئے معاملوں کو دیکھتے ہوئے عارضی طور پر معطل کرنے کا اعلان کیا ہے۔

جمعرات کو رام نگر میں  کانگریس کے ضلعی دفتر میں  کرناٹک کے سابق وزیراعلیٰ اور اپوزیشن لیڈر سدرامیا نے پارٹی قائدین کی میٹنگ کے بعد بتایا کہ  جب ہم نے  جب ہم نے دو ماہ قبل اس احتجاجی پیدل ریلی  کا اعلان کیا تھا تو وہاں کوئی کورونا طاعون  نہیں تھا جس کو نظر میں رکھتے ہوئے ہم نے پیدل یاترا  شروع کی تھی، مگر  اب ہم یہاں کووڈ انفیکشن میں اضافے کو دیکھتے ہوئے اپنی ریلی کو  روک رہے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ کورونا کی تیسری لہر ختم ہونے کے بعد ہم  اسی گراؤنڈ سے دوبارہ  اس ریلی کی شروعات کریں گے۔

سدارمیا نے بتایا کہ ریاست میں کووڈ سے متاثرہ افراد میں اضافے کے لیے کانگریس نہیں بلکہ  بی جے پی ذمہ دار ہے۔  بی جے پی لیڈروں نے کئی پروگرام کئے اور اُن پروگراموں میں سینکڑوں اور ہزاروں لوگوں نے شرکت کی اور اب یہ لیڈران عوام کے سامنے مگرمچھ کے آنسو بہارہے ہیں۔ 

میکے ڈاٹو پیدل یاترا کا اغاز سنگم سے ہوا تھا، آج ہمیں اپنی ریلی روکنی پڑی رہی ہے۔  کانگریس بہت پرانی قومی پارٹی ہے اس لئے ملک کے عوام کے لئے  ہماری ذمہ داری ہے۔ کورونا کی تیسری لہر کے چلتے  کوود معاملوں میں اضافے  کے لئے  بی جے پی ذمہ دارہے۔ تاہم وزیر اعلیٰ نے کسی بھی  پروگرام کو نہیں روکا۔  6 تاریخ کو ایوان بالا کے لیے منتخب ہونے والے اراکین اسمبلی نے حلف اٹھایا۔ وزیر اعلیٰ، وزراء وغیرہ سبھی لوگوں نے شرکت کی ، تب کسی نے کووڈ کی کوئی پرواہ نہیں کی۔ سابق ایم ایل اے سبھاش گوڈیوادر نے احتجاج کیا تھا جبکہ رینوکاچاریہ نے ریلی نکالی تھی۔

کورونا کی دوسری لہر کے دوران مرکزی وزراء   نے جنا آشیرواد یاترا نکالی اور کئی جلسے بھی کئے ، اس کے لئے کسی کی اجازت نہیں لی گئی تھی۔  وزیر داخلہ آروگا جنانیندر  نے بھی حلقہ میں میلہ لگایا ایسوں کے خلاف کوئی مقدمہ درج نہیں ہو۔ لیکن ہم نے ریلی نکالی تو ہم پر جھوٹے مقدمے درج کر کے عدالت میں ایف آئی آر درج کرائی گئی ہے۔

سدرامیا نے کہا کہ ہم حکومت سے ڈرنے والے نہیں ہیں، بی جے پی کا مقصد کسی نہ کسی طرح ہماری پیدل یاترا پر پابندی لگانا ہے،   لیکن ہم یہ بھی ہرگز نہیں چاہتے کہ ہماری ریلی کی وجہ سے لوگوں کی صحت پر کوئی اثر پڑے۔ یہ ہماری ذمہ داری ہے کہ ہم اس بات کو یقینی بنائیں کہ کورونا انفیکشن کسی بھی وجہ سے ہماری پیدل یاترا  سے نہ بڑھے۔  ہم نے میکے ڈاٹو پدیاترا کو معطل کرنے کا فیصلہ عوام کی صحت کے پیش نظر اور عوام کے مفاد کو سامنے رکھ کر کیا ہے۔

ایک نظر اس پر بھی

کانگریس لیڈران نے مرکزی حکومت پر لگایا پسماندہ ہندو سماج اورمظلوم طبقے کی ہتک کرنے کا الزام

ہرسال یوم جمہوریہ کی تقریب میں ریاستوں کی نمائندگی کرنےوالی نمائش  کا اہتمام ہوتاہے۔ اس مرتبہ  ریاست کیرلا کی جانب سےبھیجے گئے انقلابی شخصیت ، سماجی مصلح شری نارائن گرو مجسمہ کو نمائش میں شامل کرنے سے مرکزی حکومت نے انکار کیاہے۔ اس طرح  مرکزی حکومت نے بھارت کی تاریخی ، اہم ...

جمعیۃ علماء کرناٹک کاانتخابی اجلاس : مولانا عبدالرحیم رشیدی جمعیۃ علماء کرناٹک کے صدر منتخب

مسجد حسنیٰ شانتی نگر بنگلور میں جمعیۃ علماء کرناٹک کا انتخابی اجلاس جمعیۃ علماء ہندکے جنرل سکریٹری مولانامفتی سید معصوم ثاقب قاسمی کی نگرانی میں منعقد ہوا جس میں مولانا عبدالرحیم رشیدی کو مجلس منتظمہ کے اراکین نے اتفاق رائے سے اگلی  میعاد  کیلئے صدر منتخب کیا ۔ مولانا ...

کرناٹکا ہائی کورٹ نے کانگریس کو پدیاترا نکالنے کا اجازت نامہ عدالت میں داخل کرنے کی دی ہدایت

کرناٹکا ہائی کورٹ نے کرناٹک پردیش کانگریس کمیٹی (کے پی سی سی) سے کہا کہ وہ 14 جنوری تک میکے ڈاٹو پدیاترا نکالنے کے لئے حکومت کی طرف سےلئے گئے اجازت نامہ کو عدالت میں پیش کرے۔ عدالت نے پوچھا کہ کیا کے پی سی سی نےرام نگر ضلع کے میکے ڈاٹو میں کاویری ندی کے پار متوازن آبی ذخائر کا ...

حکومت کرناٹک نے کانگریس کے میکے ڈاٹو پدیاترا پرعائد کی پابندی

ہائی کورٹ اوربعض بی جے پی ارکان اسمبلی کی تنقید کے بعد  بسواراج بومائی کی زیرقیادت بی جے پی حکومت نے بدھ کے روز کووڈ 19 کی پہلے سی بگڑتی صورت حال  کا حوالہ دیتے ہوئے کانگریس کے میکے ڈاٹو پدیاترا پر پابندی لگا دی ہے۔