بنگلورو:مورل پولیسنگ کی پشت پناہی والے بیان پر وکلاء کی انجمن نے دیا وزیر اعلیٰ بومئی کو نوٹس 

Source: S.O. News Service | Published on 19th October 2021, 12:12 AM | ریاستی خبریں |

بنگلورو،18/ اکتوبر (ایس او نیوز) کرناٹک کے وزیر اعلیٰ بسواراج بومئی نے حال ہی میں ہندوتواوادیوں کی طرف سے مورل پولیسنگ کے نام پر کی جارہی دھاندلیوں اور غنذہ گردی کی پشت پناہی کرنے والا جو بیان دیا تھا اس کے لئے  وکلا کی انجمن 'آل انڈیا لائرس ایسوسی ایشن فار جسٹس" نے وزیر اعلیٰ کو نوٹس بھیجتے ہوئے معافی مانگنے اور اپنا بیان واپس لینے کا مطالبہ کیا ہے ۔
    
خیال رہے کہ 13 اکتوبر کو جب وزیر اعلیٰ سے اخبار نویسوں نے ریاست میں بڑھتے ہوئے مورل پولیسنگ کے معاملات اور مورل پولیسنگ کے ملزمین کے ساتھ  خود موڈبیدری سے بی جے پی ایم ایل اے اوماناتھ کوٹیان کھڑے ہونے کے بارے میں پوچھا تھا تو انہوں نے کہا تھا :" ہم سب کو سماجی ذمہ داری سنبھالنی چاہیے ۔ ہمارے نوجوانوں کو اس بات کا خیال رکھنا چاہیے کہ سماج کے لوگوں کے جذبات مجروح نہ ہوں ۔ لوگوں کے کچھ شدید جذبات ہوتے ہیں ۔ اور جب بھی کوئی عمل ہوتا ہے تو پھر اس کا رد عمل ہوجاتا ہے ۔ یہ ایک سماجی مسئلہ ہے  اور  اس میں اخلاقیات کی ضرورت ہے ۔ جبکہ سماج میں اخلاقیات نہیں ہونگے تو اسی کے مطابق ردعمل بھی ہونگے ۔"
    
میڈیا میں آئی خبروں کے مطابق وکلاء اور وکالت کے طالب علموں کی انجمن آل انڈیا لائرس ایسوسی ایشن فار جسٹس نے وزیر اعلیٰ کو جو نوٹس بھیجا ہے اس میں انہیں مخاطب کرکے کہا گیا ہے کہ "ہر عمل کا رد عمل ہوتا ہے والی بات کہہ کر آپ نے مورل پولیسنگ کے عمل کو جائز ٹھہرایا ہے ۔ جس کا مطلب یہ ہوا کہ شہریوں کو ردعمل کی مناسبت سے اپنے بنیادی حقوق سے دستبردار ہونا چاہیے ۔"
    
ایسو سی ایشن کے نوٹس میں فرقہ وارانہ منافرت اور تشدد کے بڑھتے ہوئے حالیہ سلسلہ اور بیلگام میں ہوئے مسلم نوجوان ارباز کے انتہائی بے دردانہ قتل کے پس منظر میں  وزیر اعلیٰ کے بیان کو حیران کرنے والا قرار دیا گیا ہے۔ مذہبی گروہوں کی طرف سے برپا کیے جارہے تشدد کو سماجی تفریق اور علاحدگی کا سبب بتاتے ہوئے اسے دستور کے مطابق رائج  سیکیولرازم کے بنیادی اصولوں کے منافی کہا گیا ہے ۔ 
    
اس نوٹس میں مزید کہا گیا ہے کہ اپنے اقتدار کا غلط استعمال کرتے ہوئےوزیر اعلیٰ نے :" نہ صرف مذہبی منافرت کے متاثرین کو ہی ان کے خلاف ہونے والے تشدد اکسانے کا سبب قرار دے کران کی ہتک اور مذمت کی ہے ، بلکہ ان کے قانونی حقوق اور تحفظ سے انہیں محروم کیا ہے ۔ اور اس طرح انہیں مکمل طور پر غیر قانونی اور ماورائے قانون طاقتوں کے رحم وکرم پر چھوڑ دیا ہے ۔"
    
مذکورہ وکلاء کی انجمن نے وزیراعلیٰ کو یاد دلایا ہے کہ انہیں دستوری عہدے پر قائم رہتے ہوئے ایسے جرائم کی روک تھام کے لئے ٹھوس اقدامات کرنے چاہئیں ۔ کیونکہ :" آپ نے جو بیان دیا ہے وہ قانون اور آپ کے اٹھائے گئے حلف کے خلاف ہے ، جس سے اس قسم کے واقعات میں اضافہ کو قانونی جواز مل جائے گا ۔"
    
نوٹس میں وزیراعلیٰ سے اپنے بیان فوراً واپس لینے، عوام کے سامنے معافی مانگنے  اور ریاستی سطح پر چند اصلاحات اور اقدامات کرنے کا مطالبہ کیا گیا ہے ۔ جیسے : 
    
1۔ اس بات کو یقینی بنایا جائے کہ مذہب اور ذات پات کی بنیاد پر ہونے والے جرائم پر روک لگے اور مجرموں کو لازماً سزا ملے ۔
    
2۔ ریاستی حکومت کو چاہیے کہ سپریم کورٹ کی ہدایت کے مطابق مختلف المذاہب اور مختلف الذات شادیوں کے معاملہ میں تحفظ فراہم کرے اور فرقہ وارانہ تشدد، غیرت کے نام پر قتل اور مورل پولیسنگ  کا مقابلہ کرنے کے لئے  جو بھی اقدامات کیے گئے ہیں اس کی تشہیر کی جائے۔
    
3۔ تحسین پونہ والا بالمقابل حکومت ہند کیس میں سپریم کورٹ نے جو ہدایات دی تھیں سختی  کے ساتھ اس کا نفاذ یقینی بنایا جائے ۔  
    
4۔ اس بات کو بھی یقینی بنایا جائے کہ سپریم کورٹ نے شکتی واہینی بالمقابل حکومت ہند والے کیس میں جو ہدایات طے کی ہیں اس پر عمل ہو۔

ایک نظر اس پر بھی

میسورو: محبت کی راہ میں ملازمت رکاوٹ بن گئی ، نوکری نہ ملنے سے دلبرداشتہ دوپریمی پھانسی کے پھندے سے لٹک گئے

دو پیار کرنے والوں کی زندگی کے درمیان نوکری رکاوٹ بن گئی۔نوکری نہ ملنے سے دلبرداشتہ چامراج نگرضلع کے گنڈل پیٹ تعلقہ کے بوملاپورگرام کے رہنے والے پریمیوں نے میسورمیں انتہائی قدم اٹھاتے ہوئے خودکشی کرلی۔

اسمبلی چناؤ میں جے ڈی ایس اور پارلیمانی الیکشن میں بی جے پی کی تائید کرنے والے مطلب پرست: ریاستی وزیر ڈاکٹر سدھاکر

کولار چکبالاپورحلقہ سے اسی ماہ 10دسمبر کو ہونے جارہے کونسل چناؤ کی انتخابی مہم چلانے کیلئے آئے ہوئے ریاستی وزراء چکبالاپور کے نگران کار وزیر اور ریاستی وزیر برائے ہیلتھ ڈاکٹر سدھاکر کولار ضلع نگراں کار وزیر منی رتنا اور پارٹی لیڈروں نے آج کولار کے پریس بھون میں ایک اخباری ...

بنگلورو کے آنیکل میں کووڈ کے معا ملات میں اضافہ ، اسکول اور نرسنگ کالج کے12طلبہ سمیت27افراد کو کورونا

بنگلورو کے آنیکل تعلقہ میں کووڈ کے نئے معا ملات درج ہو نے سے مقامی لوگوں میں دہشت کا ماحول پایا جا رہا ہے۔ وہاں کے ایک اسکول اور نرسنگ کالج کے12طلبہ سمیت جملہ27افراد کو کووڈ کی تصدیق ہو ئی ہے۔

بنگلورو میں ویکسین کے دونوں ٹیکے لینے والوں کو ہی داخلہ کی اجازت ، کووڈ ضوابط کے خلاف ورزی پر سخت کارروائی،مالس،شاپنگ اور کمرشیل کامپلکس کے مالکان کو بی بی ایم پی کا انتباہ

بنگلورو  شہر میں کووڈ کی نئی قسم اومیکرون کے معا ملات کا پتا لگنے کے بعد ریاستی حکومت اور بروہت بنگلورو مہا نگر پالیکے(بی بی ایم پی) نے احتیاطی اقدامات کئے ہیں۔ اس کے پیش نظر شہر کے تمام کمرشیل کامپلکس،مالس،سنیما گھروں اور عوامی تقریبات میں شرکت کرنے والے افراد کا کووڈ کے ...