2؍مارچ سے دوبارہ بس ہڑتال کا اندیشہ،ٹرانسپورٹ ملازمین یونین کی طرف سے  بنگلورو کے فریڈم پارک میں احتجاج

Source: S.O. News Service | Published on 1st March 2021, 10:55 AM | ریاستی خبریں |

بنگلورو، یکم مارچ (ایس او نیوز) کرناٹک  میں ایک بار پھر اس ہڑتال شروع ہونے کے آثار کافی نمایاں نظر آرہے ہیں ۔ کے ایس آر ٹی کی اور پی ایم ٹی کی ملازمین نے حکومت کی طرف سے ان کی مانگوں پر اب تک کوئی کارروائی نہ کئے جانے پر برہمی کا اظہار کر تے ہوئے ایک بار پھر احتجاجی  تحریک شروع کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔

 بتایاجاتا ہے اتوارکو  بنگلورو ر میں  بی اے ٹیم سی  ملازمین کی یونین اور ریاست کے دیگر اضلاع  میں کے ایس آر ٹی سی  ملازمین نے اپنی اپنی میٹنگ میں یہ فیصلہ کیا ہے کہ وہ اپنے مطالبات پر حکومت کو متوجہ کروانے کے لئے ایک بار پھر احتجاج شروع کریں گے۔ ان ملازمین نے کہا ہے کہ حکومت کو انہوں نے جو مہلت دی تھی وہ اب پوری ہو چکی ہے اس لئے اب متوجہ کروانے کے لئے تحریک کی شروعات ضروری ہو چکی ہے۔

 ملازمین یونین کے نمائندوں نے بتایا کہ تین ماہ میں جب حکومت کی  یقین  دہانی پر ہڑتال ختم کی گئی تھی تو اس وقت  حکومت کے سامنے جو مطالبات پیش کئے گئےان میں سے ایک کو بھی پورا نہیں کیا گیا ہے اس لئے ان ملازمین نے 2؍مارچ سے بنگلورو کے فریڈم پارک میں احتجاج شروع کرنے کا اعلان کیا ہے اور اس پروگرام کا نام فریڈم پارک چلو تحر یک دیا گیا ہے۔ بی ایم ٹی سی  کے علاوہ ریاستی سطح پر  چاروں ٹرانسپورٹ کارپوریشنوں کی طرف سے احتجاج 2 ؍مارچ سے شروع ہونے جارہا ہے ۔ بتایا جاتا ہے کہ احتجاج کے پہلے روز فریڈم پارک میں ایک مشاورتی اجلاس ہو گا جس میں تمام یونینوں کے نمائندے شریک ہوں گے اور اس میں طے کیا جائے گا کہ ہڑتال پھر شروع کرنی ہے یا نہیں ۔ اس دوران کرناٹک  راجیہ رعیت  سنگھا کے صدر کوڈ ی ہلی   چندرا شیکھر  نے اعلان کیا کہ ٹرانسپورٹ ملازمین کی طرف سے ان کے 9 مطالبات پر زور دینے کے لئے 2 ؍مارچ کو ترمیم پارک میں احتجاج کیا جا رہا ہے۔ انہوں نے کہا کہ اس سے پہلے ہوئی ہڑتال اور احتجاج کو ختم کرنے کے لئے حکومت کی طرف سے یہ وعدہ کیا گیا تھا کہ ملازمین کی مانگوں کو تین ماہ کے عرصہ  میں پورا کیا جائے گا لیکن تین ماہ گزرجانے کے بعد بھی اب تک کوئی مانگ  پوری نہیں ہوسکی  ہے۔ انہوں نے  کیا کہ  ملازمین کو چھٹویں پے کمیشن کے مطابق تنخواہ اور دیگر مانگوں کو پورا کرنے کے لئے اس احتجاج میں  زور د یا جائے گا۔

ایک نظر اس پر بھی

کرناٹک میں کورونا کی دہشت کا ایک اور ریکارڈ ، تقریباً 20 ؍ ہزار متاثر ، بنگلورو میں لاک ڈاؤن یا سخت امتناعی احکامات ؟

اتوارکے روز کرناٹک میں کورونا نے اپنا خوفناک ترین رخ پیش کیا اور اب تک متاثرین کی تعداد کا ایک نیا ریکارڈ سامنے آیا ریاست بھر میں 7 6 0 9 1 تازه معاملات سامنے آئے ۔ 81 لوگوں کی موت واقع ہوئی ہے۔

بھٹکل: ریاست میں کورونا کے بڑھتے معاملات سےپریشان طلبہ نے پیر سے شروع ہونے والے امتحانات منسوخ کرنے ٹوئیٹر پر چلائی مہم

کورونا کی دوسری لہر میں  بڑھتے کیسس کے دوران ایک طرف  میٹرک اور سکینڈ پی یوسی کے امتحانات ملتوی اور منسوخ کئے جارہےہیں تو وہیں دوسری طرف ویشویشوریا ٹیکنالوجیکل یونیورسٹی (وی ٹی یو) کے تحت آنے والی کالجس میں کل  پیر سے فرسٹ سیمسٹر کے امتحانات شروع ہورہےہیں۔

شیواجی نگرمیں کورونا متاثرین کی مدد کیلئے وار روم، چرکا سوپر اسپشالٹی اسپتال میں 150بستر دو دن میں مہیا کروا دئیے جائیں گے: رضوان ارشد

کورونا وائر س کی دوسری لہر نے جس قدر شدت اختیار کی ہے، اسے دیکھتے ہوئے شہر کے قلب میں آنے والے علاقے شیواجی نگر اور آس پاس کے علاقوں میں لوگوں کو فوری راحت رسانی کے انتظامات کا رکن اسمبلی رضوان ارشد نے ہفتے کے روز بی بی ایم پی افسروں کے ساتھ جائزہ لیا۔