کنڑا اسکالر ڈاکٹر ایم چدانندا مورتی کا انتقال

Source: S.O. News Service | Published on 12th January 2020, 11:01 AM | ریاستی خبریں | ان خبروں کو پڑھنا مت بھولئے |

بنگلورو،12/جنوری (ایس او  نیوز) نامور کنڑا اسکالر ڈاکٹر ایم چدانندا مورتی کا آج صبح یہاں بنگلور کے ایک نجی اسپتال میں انتقال ہوگیا- چیمو کے نام سے مشہور مورتی نے آج علیٰ الصباح تقریباً3:45 بجے یہاں کے ایک نجی اسپتال میں آخری سانس لی- یہ خبراہل خانہ نے دی ہے- وہ 88برس کے تھے حال ہی میں مورتی کو سانس لینے میں تکلیف کی وجہ سے اسپتال میں داخل کیا گیا تھا جہاں انہیں نمونیا بھی ہوگیا- ان کے پسماندگان میں بیوی، بیٹا اور بیٹی شامل ہیں - ان کی لاش کو شہر میں ان کے مکان میں رکھا گیا ہے- جہاں سینکڑوں لوگوں نے ان کا آخری دیدار کیا اور انہیں تعزیت بھی پیش کی- ان کی آخری رسومات اتوار کے دن سرکاری اعزاز کے ساتھ ادا کی جائیں گی- کنڑا کو کلاسیکل درجہ دلوانے میں مورتی کا اہم رول رہا، اس کے لئے انہوں نے کنڑا شکتی کیندرا کے ذریعہ ایک تحریک شروع کی تھی- سدارامیا کی قیادت والی ریاستی کانگریس حکومت نے سرکاری سطح پر ٹیپو سلطان جینتی منانے کا فیصلہ کیا تو مورتی نے اس کی سخت مخالفت کی تھی- مورتی کے انتقال پر تعزیت اداکرنے والوں میں وزیر اعلیٰ بی ایس ایڈی یورپا، کانگریس لیڈر سدارامیا، جے ڈی ایس لیڈر کمار سوامی بھی شامل ہیں - ہمیں یادگاروں اور کنڑا زبان کے تحفظ کے لئے مورتی کی خدمات کو یاد کرتے ہوئے وزیر اعلیٰ نے کہا کہ انہیں جب ایم ایل سی بنانے کی پیش کش کی گئی تو انہوں نے یہ کہتے ہوئے اس پیش کش کو ٹھکرا دیا کہ وہ اس ضعف العمری میں یہ ذمہ داری نہیں لے سکتے- وزیر اعلیٰ نے یہ اعلان کیا ہے کہ سرکاری اعزاز کے ساتھ ان کے آخری رسومات ادا کی جائیں گی-

ایک نظر اس پر بھی

کورونامتاثرین کے ساتھ ناانصافی ناقابل برداشت، خاطیوں کوسزادینے حقوق انسانی کمیشن آگے آئے:ایچ کے پاٹل

کانگریس کے سینئرقائداورسابق ریاستی وزیرایچ کے پاٹل نے آج حکومت پر سخت برہمی ظاہرکرتے ہوئے کہا کہ کوروناوائرس کے پھیلاؤ سے عوام بری طرح متاثرہوئے ہیں،نہایت مشکل حالات سے دوچارعوام کے لیے مناسب علاج ومعالجہ کا نظم نہیں،یہاں تک کہ اچھے اسپتال دستیاب نہیں۔

گریجویٹ،پوسٹ گریجویٹ اورڈپلولہ کے سال آخرکے طلبہ کاامتحان ستمبرمیں ہوگا:اشوتھ نارائن

مہاماری کوروناوائرس کے پیش نظرطلبہ کومفادات کی حفاظت کی خاطرریاستی حکومت نے ایک اہم فیصلہ کیاہے۔ریاستی وزیربرائے اعلیٰ تعلیم ونائب وزیراعلیٰ ڈاکٹراشوتھ نارائن نے آج کہا کہ تعلیمی سال 2019-2020ء کے انجینئرنگ،گریجویٹ اورپوسٹ گریجویٹ سمیت ڈپلومہ میں زیرتعلیم انٹرمیڈیٹ سمسٹرکے ...

غیر کورونا مریضوں کی اموات کورونا متاثرین کے مقابل 10گنا زیادہ، ہنگامی حالات میں ان کا علاج کرنے اسپتالوں کو ہدایت دی جائے: وزیر اعلیٰ سے ضمیر احمد خان کا مطالبہ

شہر بنگلورو میں کورونا وائرس کے معاملات میں بے تحاشہ اضافہ اپنی جگہ، دوسری طرف ایسے افراد کی اموات میں بھی مسلسل اضافہ ہو تا جا رہا ہے جو کورونا وائرس میں مبتلا نہیں مگر دیگر بیماریوں میں مبتلا ہیں اور علاج میسر نہ رہنے کے سبب ان میں سے بڑی تعداد میں لوگوں کی موت واقع ہو تی جا ...

کوروناسے بنگلورمیں 29سمیت ریاست بھرمیں 57؍اموات، 24گھنٹوں کے دوران کرناٹک میں 2313نئے پازیٹیوکیس، ایک ہی دن 1004ڈسچارج

عالمی وباکوروناوائرس کا قہرہنوزجاری ہے، ریاست میں ایک ہی دن کوروناوائرس کے 2313کیس درج ہوئے ہیں۔گزشتہ 24گھنٹوں کے دوران کووِڈ۔19کی زدمیں آکربنگلورمیں 29سمیت ریاست بھر میں 57افرالقمہ اجل بن گئے ہیں۔

اُڈپی میں کووڈ۔19 جانچ سنٹر قائم ، روزانہ 300 نمونوں کی جانچ ممکن

ساحلی کرناٹک کے اُڈپی شہر میں 45 لاکھ کی لاگت سے ہائی ٹیک مکمل ایئر کنڈیشنڈ کووڈ۔19 جانچ سنٹر قائم کردیا گیا ہے۔ اس لیب کیلئے ایک  مائکرو بیالوجسٹ اور 8 لیب ٹیکنیشن کا بھی تقرر کردیا گیا ہے۔ ان احباب نے بنگلورو کے نمہانس اسپتال میں تربیت حاصل کی ہے۔

گریجویٹ،پوسٹ گریجویٹ اورڈپلولہ کے سال آخرکے طلبہ کاامتحان ستمبرمیں ہوگا:اشوتھ نارائن

مہاماری کوروناوائرس کے پیش نظرطلبہ کومفادات کی حفاظت کی خاطرریاستی حکومت نے ایک اہم فیصلہ کیاہے۔ریاستی وزیربرائے اعلیٰ تعلیم ونائب وزیراعلیٰ ڈاکٹراشوتھ نارائن نے آج کہا کہ تعلیمی سال 2019-2020ء کے انجینئرنگ،گریجویٹ اورپوسٹ گریجویٹ سمیت ڈپلومہ میں زیرتعلیم انٹرمیڈیٹ سمسٹرکے ...

کیا بھٹکل میں کورونا کے معاملات قابو میں آگئے ؟ ضلع میں پھر آئے 33 پوزیٹیو

اللہ کا شکرہے کہ بھٹکل میں کورونا کے معاملات تھمتے نظر آرہے ہیں اور کورونا کے حالات قابو میں آنے کے امکانات نظر آرہے ہیں، یہی وجہ ہے کہ آج جمعہ کو بھٹکل میں کورونا کا کوئی پوزیٹیو معاملہ سامنے نہیں آیا، اسی طرح کل جمعرات بھی بھٹکل میں صرف ایک معاملہ کورونا پوزیٹیو کا ...

بھٹکل سے میڈیکل ضروریات کے تحت اُڈپی یا مینگلور جانے اور واپس آنے میں کوئی روک نہیں ؛ اسسٹنٹ کمشنر کا بیان

میڈیکل ضروریات کے تحت کوئی اگر بھٹکل سے کنداپور یا مینگلور جاتا ہے اور واپس بھٹکل آتا ہے تو اس کے لئے کسی قسم کی اجازت لینے کی ضرورت نہیں ہے،ایسے لوگ صبح جاکر شام کو  واپس لوٹ سکتے ہیں، اس بات کی اطلاع بھٹکل اسسٹنٹ کمشنر مسٹر بھرت نے دی۔