اُردو اور نائطی شاعر عبداللہ رفیق کے انتقال پرمختلف اداروں کی جانب سے خراج تحسین

Source: S.O. News Service | By I.G. Bhatkali | Published on 7th December 2021, 1:24 AM | ساحلی خبریں |

بھٹکل 6 ڈسمبر (ایس او نیوز)بھٹکل کے اُردو اور نائطی شاعر جناب عبداللہ رفیق صاحب دو روز قبل سنیچر کو انتقال کرگئے۔ انا للہ و انا الیہ راجعون۔ ان کے انتقال پر مختلف اداروں کی جانب سے انہیں خراج عقیدت پیش کیا گیا ہے اور کئی اداروں میں تعزیتی اجلاس بھی منعقد کرتے ہوئے ان کے حق میں دعائے مغفرت کی گئی ہے۔

سوشیل میڈیا پرمتحرک جناب محمد فاروق شاہ بندری عرف نقاش نائطی نے ان کے انتقال پرگہرے رنج وغم کااظہار کرتے ہوئے لکھا ہے کہ شاعر و نقاد اردوعبداللہ رفیق، خالق کائنات کی دعوت پر لبیک کہتے ہوئے  اس فانی دنیا سے اخروی دنیا کی طرف کوچ کر گئے۔ اللہ انہیں غریق رحمت کرے۔ انہوں نے اپنے ایک طویل مضمون میں اس بات کا تذکرہ کیا ہے کہ چار ساڑھے چار دہے قبل، زمانہ طلاب کلیہ، جب ہم کالج کے سالانہ اختتامی تقاریب میں اپنے ایک ہم عصر طالب علم، نعیم شبر ائیکری کے ساتھ بھٹکل معاشرے کی شادیوں میں خصوصی طورپر پکنے والے مقامی طورپرمعروف "رائیطہ" پر  نوائطی ڈرامہ "رائیطہ چو پسولو" پیش کیا تھا تواس کے کچھ ہی مہینوں بعد  ایک باریش  جوان سے ہماری ملاقات ہوئی تھی، جنہوں نے اپنا تعارف کراتے ہوئے کہا تھا کہ وہ ممبئی سے شائع ہونے والے اُس وقت کے مشہور نائطی پندرہ روزہ النوائط میں اور النوائط کے بند ہونے کے بعد، نقش نوائط میں مستقل اصلاحی کالم لکھتے ہیں، انہوں نے کہا تھا کہ گو انہوں نے رائیطہ چوپسولو ڈرامہ نہیں دیکھا، لیکن  ایک نقاد قوم قلم کار کی طرح، اس ڈرامے کی تعریف سن رکھی ہے، اس نے ہماری ہمت افزائی کرتے ہوئے ایک دوسرے ڈرامے کا تخیل ہمارے سامنے  پیش کیا تھااوراس پر ان کے تحریرا" پیش کئے گئے تخیل پر ہم دونوں نے مل کر بھٹکل میں پیش کیا جانے والا  دوسرا نائطی ڈرامہ "دوبئی چو وھریت" دوسرے سال پیش کیا تھا۔ "رائیطہ چو پسولو" کی طرح یہ دوسرا  ڈرامہ بھی بھٹکل میں کافی مقبول ہوا اور لوگوں نے اسے بھی کافی پسند کیا، ہم سے اُس وقت ملاقات کرنے والا وہ جوان کوئی اور نہیں، ہمارے گاؤں کا ایک نقاد قلم کار،شاعر عبداللہ رفیق تھا، جس کے انتقال کی خبر نے ہمیں ان پر کچھ کلمات لکھنے کی توفیق بخشی ہے۔ اللہ مرحوم عبداللہ رفیق کو اپنی جوار رحمت میں جگہ عطا فرمائے اور قبر و برزخ کے مختلف مدارج کو ان کے لئے آسان فرماتے ہوئے، جنت کے اعلی مقام کو ان کے لئے محجوز رکھے، اٰمین

ایک نظر اس پر بھی

کاروار: دانتوں میں درد اور سردرد جیسی عام بیماریوں پر اسپتال نہ جائیں ،شدید بیمار پڑنے یا ایمرجنسی کی صورت میں ہی اسپتال کا رخ کریں: کاروار اور ہوناور میں پانچ دنوں تک اسکول بند

شدید بیمار پڑنے اور ایمرجنسی ہونے پر ہی سرکاری، پرائیویٹ  اسپتال یا سوپر اسپیشالٹی اسپتال کا رُخ کریں اور معمولی بیمار مثلاً دانتوں کا درد، سر میں درد وغیرہ پر  اسپتالوں کا رُخ نہ کیا جائے، ایسی عام بیماریوں کے لئے مقامی ڈاکٹروں کے ذریعے علاج کراسکتے ہیں۔ اس طرح  کا حکم حکومت ...

جامعہ اسلامیہ بھٹکل کے ہونہار فرزند کابڑا کارنامہ ۔ انٹرنیشنل سطح پر روشن کیا بھٹکل کانام

کہتے ہیں کہ درخت اپنے پھل سے پہچانا جاتا ہے اور تعلیمی ادارے اپنے فارغین کی لیاقت اور صلاحیت سے پہچانے جاتے ہیں، ہندوستان میں بڑے تعلیمی اداروں کا نام کچھ شخصیات نے ہی روشن کیا ہے ،  الحمد للہ بھٹکل کے دینی و عصری تعلیم گاہوں کے طلبہ و طالبات بھی بڑی حد تک اپنی مادر علمی کی نیک  ...