بریکنگ نیوز

مصری ثالثی سے اسرائیل اور فلسطینیوں کے درمیان جنگ بندی

Source: S.O. News Service | Published on 9th August 2022, 11:15 AM | عالمی خبریں |

غزہ، 9؍اگست (ایس او نیوز؍ایجنسی) مصر  کی ثالثی کے بعد ہونے والی یہ جنگ بندی اتوار کو مقامی وقت کے مطابق رات ساڑھے گیارہ بجے شروع ہوئی، جس کا مقصد غزہ میں گزشتہ برس گیارہ روزہ جنگ کے بعد سے بدترین لڑائی کو روکنا ہے۔

قبل ازیں فلسطین کے اسلامی جہاد گروپ نے اعلان کیا تھا کہ وہ مصر کی ثالثی میں جنگ بندی پر متفق ہے۔ اسرائیل اور فلسطینیوں کے درمیان گزشتہ برس کے بعد سے اس سب سے شدید تصادم میں اب تک کم از کم 44 افراد فلسطینی ہو چکے ہیں، جن میں 15 بچے شامل ہیں۔

امریکی صدر جو بائیڈن نے جنگ بندی کا خیر مقدم کرتے ہوئے شہریوں کی اموات کو "سانحہ" قرار دیتے ہوئے اس معاملے کی تحقیقات پر زور دیا ہے۔

وائٹ ہاوس کی طرف سے جاری کردہ ایک بیان میں کہا گیا ہے، ''گزشتہ 72 گھنٹوں میں امریکہ نے اسرائیل، فلسطینی اتھارٹی، مصر، قطر، اردن اور خطے کے دیگر ممالک کے اہلکاروں کے ساتھ مل کر کام کیا ہے تاکہ تنازعے کا جلد سے جلد حل نکالا جاسکے۔‘‘

وائٹ ہاؤس کی طرف سے جاری کردہ بیان میں امریکی صدر نے مزید کہا، ''میں مصر کے صدر عبدالفتاح السیسی اور دیگر اعلیٰ عہدیداروں کا شکر گزار ہوں، جنہوں نے سفارت کاری میں کردار ادا کیا اور اس کے ساتھ ساتھ قطر کے امیر شیخ تمیم بن حمد الثانی اور ان کی ٹیم کا بھی جنہوں نے لڑائی ختم کروانے میں مدد کی۔‘‘

اسرائیلی وزیر اعظم یائر لیپیڈ نے بھی مصر کی ثالثی کے لیے شکریہ ادا کیا۔ اسلامی جہاد کے ترجمان طارق سلمی نے اپنے ایک بیان میں کہا، ''ہم مصر کی ان کوششوں کو سراہتے ہیں جو اس نے ہمارے عوام کے خلاف اسرائیلی جارحیت کے خاتمے کے لیے کی ہیں۔‘‘

اقوام متحدہ میں مشرق وسطیٰ کے نمائندے نے ایک بیان میں کہا، ''صورت حال اب بھی نازک ہے اور میں تمام فریقین پر زور دوں گا کہ وہ جنگ بندی کے پابند ہوں۔‘‘

اسرائیل نے فلسطینی عسکریت پسندوں کے خلاف فوجی کارروائی کا آغاز جمعے کے روز کیا تھا۔ اسرائیلی فضائی حملوں میں اسلامی جہاد کے اب تک کئی اعلیٰ رہنما مارے جا چکے ہیں۔ ان میں سینیئر کمانڈر خالد منصور اور تیسیر الجباری بھی شامل ہیں۔

اسرائیلی دفاعی فوج کا کہنا ہے کہ منصور اور الجباری دونوں ہی دہشت گردانہ حملوں کا منصوبہ بنا رہے تھے۔ فلسطین کی وزارت صحت کا کہنا ہے کہ اسرائیلی حملوں میں اب تک 44 افراد ہلاک ہو چکے ہیں۔ ان میں متعدد بچے شامل ہیں۔ غزہ میں حکام کے مطابق اسرائیلی حملوں میں کم از کم 311 افراد زخمی بھی ہوئے ہیں۔

اسرائیل کا کہنا ہے کہ بچے اسلامی جہاد کی جانب سے غلطی سے راکٹ فائر ہو جانے کی وجہ سے ہلاک ہوئے ہیں۔ اس دوران فلسطینی عسکریت پسندوں نے تل ابیب اور اشکلون سمیت متعدد اسرائیلی شہروں پر سینکڑوں راکٹ داغے۔ ان راکٹوں کی وجہ سے اب تک دو اسرائیلیوں کے زخمی ہونے کی اطلاعات ہیں۔ اسرائیل کا کہنا ہے کہ فلسطینیوں کے مورٹر حملوں کی وجہ سے اسرائیل غزہ ایریز سرحدی کراسنگ کو بھی نقصان پہنچا ہے۔

تازہ ترین تصادم کی وجہ سے غزہ میں انسانی صورت حال مزید ابتر ہو گئی ہے۔ غزہ ہسپتال کے سربراہ نے بتایا کہ الشفا ہسپتال میں ہر منٹ زخمیوں کو لایا جا رہا ہے۔ دواؤں کی قلت ہے اور بجلی مسلسل گل ہو رہی ہے۔

اسرائیل نے سکیورٹی اسباب کی بنا پر اس ہفتے کے اوائل میں غزہ کراسنگ کو بند کردیا تھا جبکہ ایندھن کی قلت کی وجہ سے غزہ کے واحد بجلی پلانٹ کو بند کرنا پڑا ہے۔

ایک نظر اس پر بھی

دنیا بھر میں بڑھتی مسلم دشمنی نسل پرستی،عدم برداشت دیکھ رہے ہیں: اقوام متحدہ

کوپن ہیگن کی ایک مسجد کے قریب اسلام مخالف شخص کی جانب سے ڈنمارک میں ترک سفارت خانے کے سامنے مسلمانوں کی مقدس کتاب جلانے کے چند گھنٹے بعد اقوام متحدہ نے خبردار کیا کہ انٹرنیٹ نے نفرت انگیز تقریر کو بھڑکایا جس سے مجرموں کو اپنا جھوٹ، سازشیں اور دھمکیاں پھیلانے میں مدد ملی۔

قرآن کو جلانے کے خلاف مظاہروں میں شدت

سویڈن اور ہالینڈ میں انتہائی دائیں بازو کے کارکنوں کی طرف سے حالیہ دنوں میں اسلام کی مقدس کتاب کو نذر آتش کرنے کی مذمت کیلئے جمعہ کو کئی مسلم اکثریتی ممالک میں احتجاجی مظاہرے کیے گئے-

دنیا بھر میں ہورہی ہے چھٹنی،سروے سے کھلا راز، ہر 4 میں سے 1 ہندوستانی کو ملازمت سے برطرفی کا خدشہ

دنیا بھر کی بڑی ٹیک کمپنیوں میں  ملازمین کو نوکریوں سے برطرف کیا جارہا ہے۔ اور ذرائع کی مانیں تو  ہر 4 میں سے 1 ہندوستانی ملازمت کے خاتمے  کو لے کر پریشان ہے۔ دوسری طرف 4 میں سے 3 ہندوستانی بڑھتی ہوئی مہنگائی سے پریشان ہیں۔

افغانستان میں ریکارڈ سردی ، اب تک 157 افراد ہلاک

افغانستان میں اس وقت شدید سردی پڑ رہی ہے۔ میڈیا رپورٹس کے مطابق سردی نے گزشتہ 15 سال کا ریکارڈ توڑ دیا ہے اور درجہ حرارت گر کر مائنس 34 ڈگری سلسیس تک پہنچ گیا ہے۔ سردی کی اس شدت نے گزشتہ ایک ہفتہ میں لوگوں کو بری طرح حراساں کیا ہے اور سردی کی وجہ سے اموات کی تعداد میں بھی زبردست ...

قرآن کی بے حرمتی کیخلاف عالمِ اسلام میں شدید احتجاج، ترکی ، عراق ، ایران ، لیبیا ، سعودی عرب، یو اے ای اور دیگر اسلامی ممالک میں عوام سڑکوں پر نکل آئے

اسلام کی  مخالفت میں  زہر اگلنے والے  ڈینش سیاست داں راسموس پالودان کے ذریعہ اسٹاک ہوم میں ترک سفارت خانے کے سامنے  قرآن مقدس کا نسخہ نذر آتش کرنے کے خلاف پاکستان، ایران اور ترکی سمیت کئی اسلامی ملکوں میں احتجاجی مظاہرے ہورہے ہیں۔