شہریت قانون کے خلاف احتجاجی مظاہرہ کے درمیان بنگال کے کچھ حصوں میں انٹرنیٹ سروس بند

Source: S.O. News Service | Published on 15th December 2019, 11:03 PM | ملکی خبریں |

نئی دہلی،15/دسمبر(ایس او نیوز/آئی این ایس انڈیا) نظر ثانی شہریت قانون کے خلاف جاری احتجاج کے درمیان مغربی بنگال کے کچھ حصوں میں احتیاطا انٹرنیٹ سروس بند کر دی گئی ہے۔آپ کو بتا دیں کہ نظر ثانی شہریت قانون کے خلاف مغربی بنگال میں جاری احتجاجی مظاہروں کے درمیان پردیش کے نادیہ، شمال 24 پرگنہ اور ہاوڑہ اضلاع سے تشدد کی کچھ خبریں سامنے آئی ہیں۔پولیس نے اتوار کو اس کی اطلاع دی۔ پولیس نے بتایا کہ مظاہرین نے شمال24 پرگنہ اور نادیہ اضلاع کے امدنگا اور کلیانی علاقوں کے کئی اہم راستوں کو بندکر دیا۔ انہوں نے بتایا کہ مظاہرین نے اضلاع کی سڑکوں اور مختلف اسٹیشنوں پر ریلوے پٹریوں کو بند کردیا۔ہاوڑہ ضلع کے دومجر علاقے میں مظاہرین نے سڑک بندکر دیا اور وزیر اعظم نریندر مودی حکومت کے خلاف نعرے بازی کی۔صورتحال کو کنٹرول کرنے کے لئے پولیس کی بڑی ٹیم کو موقع پر بھیجا گیا۔ریاست کے کئی حصوں میں گزشتہ دو دنوں سے احتجاجی مظاہرے ہو رہے ہیں جہاں مظاہرین نے ریلوے اسٹیشنوں کو آگ لگانے کے ساتھ ہی سرکاری املاک کو نقصان پہنچایا ہے۔ہفتہ کو مرشدآباد، شمال24 پرگنہ اور دیہی ہاوڑہ سے تشدد کے واقعات سامنے آئے تھے۔اس سے پہلے مغربی بنگال کی وزیر اعلی ممتا بنرجی نے نظر ثانی شہریت قانون کے خلاف ریاست میں مختلف مقامات پر پر تشدد احتجاج اور توڑ پھوڑ کرنے والوں کو ہفتہ کو سخت کارروائی کی دھمکی دی۔بنرجی نے لوگوں سے امن برقرار رکھنے اور جمہوری طریقے سے احتجاج کرنے کی اپیل کی۔

ایک نظر اس پر بھی

کورونا: ہندوستان میں ہلاکتوں کی تعداد 46 ہزار کے پار، 24 گھنٹے میں پھر 60 ہزار سے زائد کیسز درج

ہندوستان میں کورونا وائرس کے بڑھتے قہرکے درمیان اس جان لیوا وبا سے شفایابی حاصل کرنے والوں کی تعداد میں بھی تیزی سے اضافہ ہورہا ہے اور گذشتہ 24 گھنٹوں کے دوران 56 ہزار سے زیادہ افراد کی شفایابی کے بعد اب تک تقریبا 16.40 لاکھ صحت مند ہوئے ہیں۔