بنگلوروشہر میں پارکنگ کی خلاف ورزیوں میں اضافہ

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 11th June 2019, 10:31 AM | ریاستی خبریں |

بنگلورو،11؍جون (ایس او نیوز) ریجنل ٹرانسپورٹ آفس (آر ٹی او) کی رپورٹ کے مطابق شہر کی سڑکوں پر 73 لاکھ سے بھی زائد گاڑیاں دوڑ رہی ہیں اور روزانہ ایک ہزار سے بھی زائد نئی گاڑیاں سڑکوں پر اتر رہی ہیں جس کی وجہ سے پارکنگ کے لئے جگہ تنگ ہوتی جارہی ہے- مزید یہ کہ 55لاکھ سے بھی زائد دو پہیوں والی گاڑیاں بنگلور کی سڑکوں پر گھوم رہی ہیں - جو ٹرافک اژدہام میں بھی راستہ بنا کر نکل جاتے ہیں - دن بہ دن گاڑیوں کے اضافے سے پارکنگ کی خلاف ورزیوں میں اضافہ ہورہا ہے- زیادہ سے زیادہ لوگ اپنی گاڑیوں کو اپنی منزل کے قریب رکھنا چاہتے ہیں - ایک سے زائد گاڑیاں رکھنے والے کار مالک اپنی کاروں کو رہائشی مکانوں کے آگے پارکنگ کررہے ہیں جس کی وجہ سے دوسری گاڑی گزرنے کے لئے سڑک تنگ ہوجاتی ہے- ٹرافک کے ماہرین کے مطابق ایک سے زائد گاڑیاں رکھنے کے شوق میں اضافہ ہوتا ہی جارہا ہے غیر قانونی طو پر سڑکوں کے کنارے گاڑیوں کو کھڑی کر کے دوسری گاڑیوں کے لئے راستہ تنگ کرنا قانون کے خلاف ہے- ان حالات سے نمٹنے کے لئے بنگلور ٹرافک پولیس نے 16 ایسی سرکاری زمینوں کی شناخت کی ہے جنہیں پارکنگ کے لئے استعمال کیاجاسکتا ہے- جن میں چار اشوک نگر، دوہلسور میں، جیون بھیم نگر میں 3 اور کے آر پورم اور ایچ اے ایل میں ایک ایک سرکاری زمین کی شناخت کی گئی ہے- ٹرافک پولیس کے ایک سینئر افسر نے بتایا کہ بی بی ایم پی کو اس سلسلے تمام تفصیلات دے دی گئی ہے - مگر ابھی تک کمشنر منجوناتھ پرساد کی جانب سے کوئی جواب نہیں ملا ہے- انہوں نے بتایا کہ اب یہ سماجی اداروں کی ذمہ داری ہے کہ وہ اس سرکاری زمین کا کس طرح استعمال کرنا ہے، طے کریں -

ایک نظر اس پر بھی

ایڈی یورپا کو پارٹی ہائی کمان کی تنبیہ۔ وزارتی قلمدان تقسیم کرو یا پھر اسمبلی تحلیل کرو

عتبر ذرائع سے ملنے والی خبر کے مطابق بی جے پی ہائی کمان نے وزیراعلیٰ کرناٹکا ایڈی یورپا کو تنبیہ کرتے ہوئے کہا ہے کہ وزارتی قملدانوں سے متعلق الجھن اور وزارت سے محروم اراکین اسمبلی کے خلفشار کو جلد سے جلد دور کرلیں ورنہ پھر اسمبلی کو تحلیل کرتے ہوئے از سرِ نو انتخابات کا سامنا ...

اے پی سی آر نے داخل کی انسداددہشت گردی قانون میں ترمیم کے خلاف سپریم کورٹ میں اپیل

مرکزی حکومت نے انسداد دہشت گردی قانون یو اے پی اے میں جو حالیہ ترمیم کی ہے اور کسی بھی فرد کو محض شبہات کی بنیاد پر دہشت گرد قرار دینے کے لئے تحقیقاتی ایجنسیوں کو جو کھلی چھوٹ دی ہے اسے چیلنج کرتے ہوئے ایسوسی ایشن فار  پروٹیکشن آف سوِل رائٹس (اے پی سی آر) نے سپریم کورٹ میں اپیل ...

ریاستی حکومت نے آئی ایم اے فراڈ کیس کی جانچ سی بی آئی کے حوالے کیا

ریاست کی سابقہ کانگریس جے ڈی ایس حکومت کے دور میں کی گئی مبینہ ٹیلی فون ٹیپنگ کی سی بی آئی جانچ کے ا حکامات صادر کرنے کے دودن بعد ہی آج ریاستی حکومت نے کروڑوں روپیوں کے آئی ایم اے فراڈ کیس کی جانچ سی بی آئی کے سپرد کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔