مسلمانوں میں نکاح معاہدہ ہے نہ کہ ہندو شادی کی طرح رسم، طلاق کے معاملے پرکرناٹک ہائی کورٹ کااہم تبصرہ

Source: S.O. News Service | Published on 21st October 2021, 9:04 AM | ریاستی خبریں |

بنگلورو،21؍اکتوبر(آئی این ایس انڈیا) کرناٹک ہائی کورٹ نے اہم تبصرہ کرتے ہوئے کہاہے کہ مسلمانوں کے یہاں نکاح ایک معاہدہ ہے جس کے کئی معنی ہیں ، یہ ہندو شادی کی طرح ایک رسم نہیں ہے اور اس کے تحلیل ہونے سے پیدا ہونے والے حقوق اور ذمہ داریوں سے دور نہیں کیا جاسکتا۔یہ معاملہ بھونیشوری نگر،بنگلورومیں اعجاز الرحمن(52)کی ایک درخواست سے متعلق ہے ، جس میں 12 اگست ، 2011 کو بنگلوروکی فیملی کورٹ کے پہلے ایڈیشنل پرنسپل جج کے حکم کو منسوخ کرنے کا مطالبہ کیا گیا تھا۔ رحمان نے اپنی اہلیہ سائرہ بانو کو 25 نومبر 1991 کو طلاق دے دی ۔اس طلاق کے بعد رحمان نے دوسری شادی کی ، ایک بچے کا باپ بنا۔ اس کے بعد بانو نے 24 اگست 2002 کو ایک سول مقدمہ دائر کیا جس میں دیکھ بھال کی درخواست کی گئی۔فیملی کورٹ نے حکم دیا تھا کہ مدعی مقدمے کی تاریخ سے لے کر اس کی موت تک یا اس کی دوبارہ شادی یا مدعا علیہ کی موت تک ماہانہ 3000 روپے کے حساب سے حقدار ہے۔

25000 روپے جرمانہ کے ساتھ پٹیشن کو مستردکرتے ہوئے جسٹس کرشنا ایس دکشت نے 7 اکتوبر کو اپنے حکم میں کہا ہے کہ نکاح ایک معاہدہ ہے جس کے کئی معنی ہیں ، یہ ہندو شادی کی طرح ایک رسم نہیں ہے۔ یہ حقیقت ہے۔جسٹس دکشت نے وضاحت کی کہ مسلم شادی کوئی رسم نہیں ہے اور یہ اس کے خاتمے کے بعد پیدا ہونے والی بعض ذمہ داریوں اور حقوق سے بھاگ نہیں سکتی۔بنچ نے کہاہے کہ طلاق کے ذریعے شادی کے بندھن کے ٹوٹنے کے بعد بھی ، حقیقت میں فریقین کی تمام ذمہ داریاں اور فرائض مکمل طور پر ختم نہیں ہوتے ہیں۔انہوں نے کہاہے کہ مسلمانوں میں نکاح ایک معاہدے کے ساتھ ہوتا ہے اور یہ بالآخر وہ درجہ حاصل کر لیتا ہے جو عام طور پر دوسری برادریوں میں ہوتا ہے۔عدالت نے کہا ہے کہ یہ صورتحال بعض جائز ذمہ داریوں کو جنم دیتی ہے۔

وہ معاہدے سے پیدا ہونے والی ذمہ داریاں ہیں۔عدالت نے کہاہے کہ قانون کے تحت نئی ذمہ داریاں بھی پیدا ہو سکتی ہیں۔ ان میں سے ایک یہ ہے کہ کسی شخص کا حالات کا فرض ہے کہ وہ اپنی سابقہ بیوی کی دیکھ بھال کرے جو کہ طلاق کی وجہ سے خود کو سنبھالنے سے قاصر ہے۔جسٹس دکشٹ نے قرآن میں سورہ البقرہ کی آیات کا حوالہ دیتے ہوئے کہاہے کہ یہ ایک سچے مسلمان کا اخلاقی اور مذہبی فریضہ ہے کہ وہ اپنی بے سہارا سابقہ بیوی کی کفالت کرے۔عدالت نے کہاہے کہ ایک مسلمان سابق بیوی کو کچھ شرائط کی تکمیل کے ساتھ دیکھ بھال کا حق حاصل ہے اور یہ ناقابل تردیدہے۔جسٹس دکشت نے مشاہدہ کیاہے کہ مہر ناکافی طور پر طے شدہ ہے۔

ایک نظر اس پر بھی

میسورو: محبت کی راہ میں ملازمت رکاوٹ بن گئی ، نوکری نہ ملنے سے دلبرداشتہ دوپریمی پھانسی کے پھندے سے لٹک گئے

دو پیار کرنے والوں کی زندگی کے درمیان نوکری رکاوٹ بن گئی۔نوکری نہ ملنے سے دلبرداشتہ چامراج نگرضلع کے گنڈل پیٹ تعلقہ کے بوملاپورگرام کے رہنے والے پریمیوں نے میسورمیں انتہائی قدم اٹھاتے ہوئے خودکشی کرلی۔

اسمبلی چناؤ میں جے ڈی ایس اور پارلیمانی الیکشن میں بی جے پی کی تائید کرنے والے مطلب پرست: ریاستی وزیر ڈاکٹر سدھاکر

کولار چکبالاپورحلقہ سے اسی ماہ 10دسمبر کو ہونے جارہے کونسل چناؤ کی انتخابی مہم چلانے کیلئے آئے ہوئے ریاستی وزراء چکبالاپور کے نگران کار وزیر اور ریاستی وزیر برائے ہیلتھ ڈاکٹر سدھاکر کولار ضلع نگراں کار وزیر منی رتنا اور پارٹی لیڈروں نے آج کولار کے پریس بھون میں ایک اخباری ...

بنگلورو کے آنیکل میں کووڈ کے معا ملات میں اضافہ ، اسکول اور نرسنگ کالج کے12طلبہ سمیت27افراد کو کورونا

بنگلورو کے آنیکل تعلقہ میں کووڈ کے نئے معا ملات درج ہو نے سے مقامی لوگوں میں دہشت کا ماحول پایا جا رہا ہے۔ وہاں کے ایک اسکول اور نرسنگ کالج کے12طلبہ سمیت جملہ27افراد کو کووڈ کی تصدیق ہو ئی ہے۔

بنگلورو میں ویکسین کے دونوں ٹیکے لینے والوں کو ہی داخلہ کی اجازت ، کووڈ ضوابط کے خلاف ورزی پر سخت کارروائی،مالس،شاپنگ اور کمرشیل کامپلکس کے مالکان کو بی بی ایم پی کا انتباہ

بنگلورو  شہر میں کووڈ کی نئی قسم اومیکرون کے معا ملات کا پتا لگنے کے بعد ریاستی حکومت اور بروہت بنگلورو مہا نگر پالیکے(بی بی ایم پی) نے احتیاطی اقدامات کئے ہیں۔ اس کے پیش نظر شہر کے تمام کمرشیل کامپلکس،مالس،سنیما گھروں اور عوامی تقریبات میں شرکت کرنے والے افراد کا کووڈ کے ...