بھٹکل میں ہیسکام کے بجلی بل کی ادائیگی کو لے کر تذبذب : حساب صحیح ہے، میٹر چک کرلیں؛افسران کی گاہکوں کو صلاح

Source: S.O. News Service | By Abu Aisha | Published on 16th June 2020, 11:36 PM | ساحلی خبریں | اسپیشل رپورٹس |

بھٹکل:16؍جون (ایس اؤ نیوز) تعلقہ میں لاک ڈاؤن کے بعد  ہیسکام محکمہ کی طرف سے جاری کردہ بجلی بلوں  کو لے کر عوام تذبذب کا شکار ہیں۔ ہاتھوں میں بل لئے ہیسکام دفتر کاچکر کاٹنے پر مجبور ہیں، زیادہ تر لوگ بے اطمینانی کا اظہار کرتے ہوئے پلٹ رہاہے۔ بجلی بل ایک  معمہ بن گیا ہے نہ سمجھ میں آر ہاہے نہ سلجھ پارہاہے۔

ماہانہ ادا کئے جانے والے بجلی بل کا لاک ڈاؤن کے بعد دئیے گئے تین ماہ پر مشتمل بل سے موازنہ کرنے پر کافی فرق نظر آنے کی شکایتیں موصول ہورہی ہیں۔ حکومت کا کہنا ہے کہ بجلی ادا کرنے میں گاہکوں کو کوئی پریشانی یا مشکلات نہیں ہونی چاہئے ، لیکن جو بل گھروں  میں دیاگیا ہے اس میں کافی فرق دیکھا گیا ہے۔ لاک ڈاؤن کی مدت کے دوران میں دکانیں اور چند گھر بند رہنے پر بھی 10-10ہزار روپیوں کا بل آیاہے۔ اسی کو لے کر عوام کافی تشویش کا اظہار کررہے ہیں۔ اور الزام لگارہے ہیں کہ ہیسکام محکمہ گاہکوں کو پریشان کررہاہے۔

حساب صحیح ہے ، دفتر سے مسئلہ حل کرلیں :بجلی بل ادائیگی کو لے کر جاری کشمکش پر ہیسکام افسران نے وضاحت کرتے ہوئے کہاکہ بل بالکل صحیح حساب سے دیا گیا ہے۔ بل میں کہیں بھی اضافہ نہیں کیاگیا ہے۔ عام طورپر ہرسال اپریل ، مئی کے مہینوں میں بجلی کا زیادہ استعمال ہوتاہےاگر عوام گزشتہ سال کے انہی مہینوں کے بجلی بل کے ساتھ موازنہ کریں گے تو انہیں بات سمجھ میں آئے گی۔ اسی طرح رمضان میں بھی زیادہ بجلی استعمال ہوتے دیکھاگیا ہے۔ اب دو تین مہینوں کا بل بیک وقت ہاتھ میں تھماتے ہی آنکھیں چار ہوگئی  ہیں، رقم زیادہ لگتی ہے، جو بھی بجلی بل دیا گیا ہے وہ سب کمپیوٹرائز ہونے سے کہیں بھی زیادہ فیس کو شامل کرنا ممکن نہیں ہے۔ اسی طرح چند جگہوں پر بجلی کا استعمال نہ ہونے کے باوجود ہزاروں روپئے کا بل آیا ہے تو بجلی میٹر کی خرابی ہوسکتی ہے، ایسے موقعوں پر میٹرکی درستی لازمی ہوجاتی ہے۔ افسران نے کہاکہ کوئی بھی ہو ، بجلی بل کی ادائیگی سے پہلے اپنی پیچیدگیوں کو حل کرلینا بہتر ہے۔ جس کے لئے ہیسکام افسران اور عملہ تعاون کرنے کے لئے بالکل تیار ہے۔

بھٹکل ہیسکام انجنئیر منجوناتھ نے عوامی تشویش کو دور کرتے ہوئے کہاکہ بجلی بل میں جس کسی کو شبہ یا پیچیدگی نظر آتی ہے وہ اپنے بل کے ساتھ ہیسکام دفتر پہنچ کر مسئلہ کو حل کرسکتےہیں۔ اس میں کوئی زور زبردستی نہیں کی جائے گی اورنہ  اس کی ضرورت ہے۔

 

ایک نظر اس پر بھی

کاروار: سائنس اور انجنئیرنگ میں پی ایچ ڈی کےلئے کرناٹک حکومت کی طرف سے اسکالرشپ

حکومت کرناٹکا کے محکمہ سائنس اور ٹکنالوجی کے ڈی ایس ٹی سائنس اور انجنئیرنگ میں پی ایچ ڈی (تحقیق) کے لئے ڈی ایس ٹی ۔پی ایچ ڈی  اسکالرشپ نامی پروگرام خود مختار ادارے کرناٹکا سائنس اور ٹکنالوجی ترغیب سوسائٹی کے ذریعے نافذ کیا جارہاہے۔

منگلورو میں پولیس فائرنگ کےردعمل میں نوجوانوں نے کیا تھا ہیڈ کانسٹیبل پر حملہ ۔ پولیس کمشنر کا بیان

سٹی پولیس کمشنر این ششی کمار نے ایک پریس کانفرنس کے دوران بتایا کہ گزشتہ سال دسمبر میں چترا ٹاکیز کےقریب پولیس ہیڈ کانسٹیبل پر جو حملہ کیا گیا تھا وہ دراصل شہریت ترمیمی قانون کے خلاف احتجاج کے دوران منگلورو میں پھوٹ پڑنے والے فساد کے بعد پولیس کی فائرنگ سے جو دو ہلاکتیں ہوئی ...

منگلورو: گئو رکھشکوں پر دائر مقدمات واپس لیے جائیں گے۔ وزیر مویشی پالن کی یقین دہانی

وزیر برائے مویشی پالن پربھو چوہان نے ضلع انتظامیہ کےساتھ جائزاتی میٹنگ کےبعد پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ گئو رکھشکوں کے خلاف جو مقدمات درج کیے گئے ہیں، ریاستی حکومت کی طرف سے وہ مقدمات واپس لیے جائیں گے۔

کاروار: صحافی شیشگیری نے کیا سمندر میں 12کلو میٹر تک ڈونگی پر تنہا سفر؛ موبائل پر وقت گذاری کے بجائے کھیل کود اورایڈوینچر اسپورٹس کی طرف توجہ دینے نوجوانوں سے کی اپیل

 کاروار سے دگ وجئے نیوز کی رپورٹنگ کرنے والے بھٹکل سے تعلق رکھنے والے صحافی شیشگیری منڈلی نے کیاک پر بحیرہ عرب میں تقریباً 12کلومیٹر تک تنہا سفر کرتے ہوئے ایڈوینچر اسپورٹس میں اپنی دلچسپی کا کامیاب مظاہرہ کیا۔

مرڈیشور میں سیاحوں کی آمد ورفت میں اضافہ :افسران کی غفلت سے مین روڈ کا تعمیری کام برسوں سے  تعطل کا شکار

مرڈیشور ایک سیاحتی مرکز کے طور پر بہت مشہور ہے ،ملک و بیرونی ملک اور ریاستوں کے سیاح جب مرڈیشور کے مین روڈ سے گزرتے ہیں تو خستہ سڑک کی بدولت سر شرم سے جھک جاتاہے۔ مرڈیشورکے عوام اس حالت کے لئ ے  افسران کی لاپرواہی  کو ذمہ دار مانتے ہیں اور کہتے ہیں کہ  مشہور سیاحتی مقام کی اہم ...

رام مندر کی بنیادیں کیوں لرز رہی ہیں؟ ... معصوم مرادآبادی

یہ بات کسی سے پوشیدہ نہیں ہے کہ اجودھیا میں بابری مسجد کے مقام پر جس ’ عظیم الشان‘رام مندر کی تعمیر ہورہی ہے ، اس کا خمیر ظلم اور ناانصافی سے تیار ہوا ہے۔یہی وجہ ہے کہ اس کی تعمیرمیں ایسی دشواریاں حائل ہورہی ہیں ، جن کا تصور بھی مندر تعمیر کرنے والوں نے نہیں کیا ...

گرام پنچایت انتخابات  کے نتائج: ریاست کے مختلف مقامات سےکچھ اہم اور دلچسپ جھلکیاں

ریاست کرناٹک  میں گرام پنچایت انتخابات کے نتائج کا اعلان ہوچکا ہے جس میں ایک طرف بی جےپی حمایت یافتہ امیدوار وں نے سبقت حاصل کی ہے تو دوسری طرف کچھ اہم اور دلچسپ قسم کے نتائج بھی سامنے آئے ہیں۔ کچھ حلقوں میں ساس نے بہو کو ہرایا ہے، کچھ میں شوہر کو جیت اور بیوی کو شکست ہوئی ہے تو ...

کیا سی آر زیڈ قانون کا نفاذ نہ ہونے سے اترکنڑا میں سیاحت کی ترقی رُکی ہوئی ہے ؟

اترکنڑا ضلع میں سیاحت کی ترقی کے بے شمار مواقع و وسائل میسر ہیں، لیکن ماہرین کی مانیں تو  ضلع کی سیاحت کی ترقی اس وجہ سے رُکی ہوئی ہے کہ  سی آر زیڈ ترمیمی قانون جاری ہونے کے باوجود اس قانون کو   ابھی تک ضلع میں  نافذ نہیں کیا گیا ہے۔ ضلع کی ترقی نہ ہونے سے نوجوانوں کی بے روزگاری ...

ہوناور میں پریش میستا کی موت کو تین سال مکمل: کیا یہ معاملہ بھی  بے نتیجہ معاملات کی طرح ہوجائے گا ؟ ابھی تک سچ کا پتہ کیوں نہیں چلا ؟

ہوناور میں  پریش میستا نامی نوجوان مشتبہ طورپر ہلاک ہوکر تین برس بیت چکے ہیں،ہلاکت کو لےکر سی بی آئی کی جانچ  ہونے کے باوجود  ہلاکت معاملے کے  سچ کا پتہ نہیں چلا ہے۔ ضلعی عوام میں چہ میگوئیاں چل رہی ہیں کہ کہیں یہ معاملہ بھی نتیجہ بر آمد نہ ہونے والے معاملات کی طرح  نہ ہوجائے۔