مسلسل بارش سے مشرقی اترپردیش سمیت ریاست کے کئی اضلاع بری طرح متاثر

Source: S.O. News Service | Published on 20th September 2019, 9:42 PM | ملکی خبریں |

لکھنؤ،20؍ستمبر(ایس او نیوز؍ یو این آئی) اتر پردیش میں مانسون کے دوبارہ فعال ہونے اور گزشتہ دو دن سے مسلسل ہو رہی بارش سے مشرقی اترپردیش سمیت ریاست کے کئی اضلاع میں لوگوں کی معمولات زندگی بری طرح متاثر ہوئی ہے اور سیکڑوں ایکڑ میں پھیلی ہوئی فصل برباد ہو گئی ہے۔ بارش ، بجلی گرنے اور سیلاب سے اب تک 20 سے زیادہ لوگوں کی موت ہو چکی ہے۔

محکمہ موسمیات کے مطابق بارش کا دور اگلے دو دن اور جاری رہ سکتا ہے راجدھاني لکھنؤ سے ملحق بارہ بنکی ضلع کے رام نگر اور گوسپور تحصیل میں کل دیر رات سیلاب کا پانی گھس گیا جس سے لوگوں نے مویشیوں سمیت محفوظ مقامات پر پناہ لی۔ بارہ بنکی میں گھاگھرا ندی خطرے کے نشان سے 40 سینٹی میٹر اوپر بہہ رہی ہے جبکہ مسولي ڈیم کٹنے سے 100 بیگھہ میں پھیلی فصل برباد ہو گئی ہے۔

بارہ بنکی سے ہائی وے پر جانے والے اہم شاہراہ پر پانی بھرا ہوا ہے ۔سڑکوں پر پانی بھر جانے سے اب لوگ آنے جانے کے لئے کشتی کی مدد لے رہے ہیں۔ پرياگراج میں گنگا اور جمنا ندی میں سیلاب سے لوگوں کے بے گھر ہونے کا سلسلہ جاری ہے۔ سیلاب سے 5 لاکھ سے زائد آبادی متاثرہوئی ہے۔

الہ آباد میں شہر سے لے کر گاؤں پانی میں ڈوبے ہوئے ہیں - فائربریگیڈ کی ٹیمیں گزشتہ چھ دن سے مورچہ سنبھالے ہوئے ہے۔ سیلاب سے نمٹنے کے لئے فوج کی مدد طلب کی گئی ہے۔ 12 ویں تک سبھی اسکول اگلے چار دنوں کے لئے بند کر دیئے گئے ہیں۔ کانپور کے گھاٹمپور تحصیل کے کئی گاووں میں سیلاب کا پانی جمع ہو گیا ہے۔ ضلع انتظامیہ نے سیلاب میں پھنسے لوگوں کو محفوظ مقامات پر پہنچایا ہے۔

وارانسی میں آج گنگا کی آبی سطح 35 سینٹی میٹر بڑھ گئی ہے۔ تقریبا 60 گاؤں اس کی زد میں آ گئے ہیں اور سیکڑوں ایکڑ میں پھیلی فصل برباد ہو گئی ہے۔ راحت اور بچاو کے لئے 160 کشتیاں لگائی گئی ہیں۔ گزشتہ روز وارانسی میں متاثرین کے بیچ امدادی سامان تقسیم کرتے وقت ضلع مجسٹریٹ سریندر سنگھ گر گئے تھے۔بلیا میں دوبے چھپرا ڈیم ٹوٹنے سے ہائی وے 31 پر بھی پانی بھر گیا ہے۔

غازی پور میں گنگا نصف سینٹی میٹر فی گھنٹے کی رفتار سے بڑھ رہی ہے۔ گنگاکی آبی سطح خطرے کے نشان سے اب بھی ایک میٹر اوپر ہے۔ جمانيا کوتوالی کی دیوریا پولیس چوکی سیلاب کے پانی میں ڈوب گئی ہے۔ پولیس چوکی کو ایک اسکول میں شفٹ کیا گیا ہے۔

گونڈا میں گھاگھرا کی آبی سطح خطرے کے نشان سے 42 سینٹی میٹر اوپر ہے۔ کل جمعرات کو 2 لاکھ 30 ہزار کیوسک پانی مختلف بیراجوں سے گھاگھرا میں چھوڑا گیا۔ بڑھی ہوئی آبی سطح سے باندھ کو نقصان پہنچا رہا ہے جس سے اس کے ٹوٹنے کا خطرہ پیدا ہو گیا ہے۔ مرزاپور میں 220 گاوں میں ایک لاکھ سے زیادہ کی آبادی سیلاب سے متاثر ہوئی جبكہ بھدوہی میں 600 بیگھے میں لگی فصل برباد ہو گئی ہے۔

ایک نظر اس پر بھی

خود ساختہ گرو ’کلکی بھگوان‘ کے ٹھاکانوں پر چھاپے، 500 کروڑ کی غیرمعلنہ جائداد کا انکشاف

  محکمہ انکم ٹیکس نے تمل ناڈو، کرناٹک، آندھرپردیش اور تلنگانہ میں ایک خود ساختہ روحانی گرو کلکی بھگوان کی جانب سے ویل نیس (تندرست بنے رہنے) کا پروگرام چلانے والے اداروں اور کمپنیوں کے 40 مقامات پر چھاپہ ماری کی ہے جن میں اس گروپ کے 500 کروڑ روپیے کی غیرمعلنہ جائداد کا انکشاف ہوا ...

گزشتہ پانچ سالوں میں مہاراشٹر میں ہر دن7کسانوں نے کی خودکشی:ایک حیران کن رپورٹ

مہارشٹرا میں ووٹ کےلیے صرف دو دن باقی ہیں، سیاست گرم ہے، اور سبھی سیاسی پارٹیاں مصروف ہیں، شیوسینا سمیت بی جے پی پھر سے عوام کو جھوٹے خواب دکھا رہی ہے، اس میں کسانوں کو لے بھی کئی بڑی بڑی باتیں کی گئی ہے۔

وادی کشمیر میں غیر اعلانیہ ہڑتال کے 2.5 ماہ مکمل، تاریخی جامع مسجد کے محراب و منبر مسلسل خاموش

 وادی کشمیر میں جہاں جمعہ کے روز غیر اعلانیہ ہڑتال کے ڈھائی ماہ پورے ہوئے تو وہیں پائین شہر کے نوہٹہ میں واقع 6 سو سالہ قدیم اور وادی کی سب سے بڑی عبادت گاہ کی حیثیت رکھنے والی تاریخی جامع مسجد کے منبر ومحراب مسلسل ڈھائی ماہ سے خاموش ہیں

پورے ملک میں این آرسی لازمی طورپر نافذ کی جائے گی : بنگلوروکے قریب نیل منگلا میں حراستی کیمپ کی تعمیر ، این آر سی کے پیشگی کارروائیاں :وزیر داخلہ امیت شاہ

قومی شہریت رجسٹریشن (این آر سی ) کو لے کر وزیر داخلہ امیت شاہ نے دوبارہ بیان دیا ہے کہ وہ آسام کی طرح پورے ملک میں اس کو نافذ کریں گے۔ دراصل مہاراشٹرا اور کرناٹکا میں تعمیر کئے جارہے حراستی کیمپ کے متعلق سوشیل میڈیا پر چلنےوالی خبروں پر انہوں نے وضاحت کی ہے۔

اپنے معاملات شرعی ضابطے کے مطابق حل کروائیں، راجستھان میں منعقدہ اجلاس میں آل انڈیا مسلم پرسنل لاء بورڈ کے جنرل سکریٹری مولانا محمد ولی رحمانی کا خطاب

  شریعت اسلامی پر عمل مسلمانوں کیلئے لازمی اور ضروری ہے، من چاہی زندگی اور نفس و شیطان کی غلامی اور اخلاق کا بگاڑ ہمیں تباہی سے دو چار کردے گا۔ اپنے اخلاق کی پختگی اور اعمال کی درستگی پر پوری توجہ دینی چاہیے اور اپنے معاملات کو شرعی ضابطے کے مطابق حل کرنا چاہیے۔مذکورہ بالا ...