شیوسینا کے اُدھو گروپ کو ملی شیواجی پارک میں دسہرا ریلی کرنے کی اجازت، بامبے ہائی کورٹ نے صادر کیا حکم

Source: S.O. News Service | Published on 23rd September 2022, 11:36 PM | ملکی خبریں |

ممبئی،23؍ستمبر (ایس او نیوز؍ایجنسی) مہاراشٹر میں شیوسینا کے ادھو ٹھاکرے اور ایکناتھ شندے گروپ کے درمیان ممبئی واقع شیواجی پارک میں دسہرا ریلی کو لے کر چل رہی رسہ کشی کا کافی حد تک خاتمہ ہو گیا ہے۔ بامبے ہائی کورٹ نے ادھو گروپ کو شیواجی پارک میں 2 اکتوبر سے 6 اکتوبر کے درمیان دسہرا ریلی منعقد کرنے کی اجازت دے دی ہے۔ حالانکہ بتایا جا رہا ہے کہ شندے گروپ اس فیصلے کے خلاف اب سپریم کورٹ جائے گا۔

شیو سینا اپنے قیام کے بعد سے ہی ہر سال شیواجی پارک میں دسہرا ریلی منعقد کرتی آئی ہے۔ گزشتہ دو سال کورونا کے سبب یہ ریلی نہیں ہوئی تھی۔ رواں سال مہاراشٹر کی سیاست میں آئے بھوچال اور شیوسینا میں ہوئی تقسیم کے بعد اپنی زمین مضبوط کرنے میں مصروف ادھو ٹھاکرے گروپ نے 5 اکتوبر کو شیواجی پارک میں دسہرا ریلی کرنے کا اعلان کیا تھا۔ لیکن اسی درمیان شیوسینا کے شندے گروپ نے بھی اس بار وہیں ریلی کرنے کا اعلان کر دیا۔ اس وجہ سے دونوں فریقین آمنے سامنے آ گئے اور بی ایم سی کے سامنے عجیب و غریب حالات کھڑے ہو گئے۔

تنازعہ اور ٹکراؤ کی حالت کو دیکھتے ہوئے ایک دن پہلے بی ایم سی نے شیوسینا کے دونوں گروپ کو شیواجی پارک مین ریلی کرنے کی اجازت دینے سے انکار کر دیا تھا۔ اسی فیصلے کے خلاف ٹھاکرے گروپ بامبے ہائی کورٹ پہنچ گیا تھا۔ جمعرات کو معاملے کی سماعت کرتے ہوئے ہائی کورٹ نے عرضی دہندہ سے 2 سے 6 اکتوبر کے درمیان شیواجی پارک میں ریلی کرنے کی اجازت دے دی۔ اس کے بعد شیوسینا کا ادھو ٹھاکرے گروپ ہی اب شیواجی پارک میں ہی 5 اکتوبر کو دسہرا ریلی کا انعقاد کرے گا۔

حالانکہ ادھو گروپ کے حق میں فیصلہ سنانے کے ساتھ ہی ہائی کورٹ نے ریلی کو لے کر کئی شرائط بھی رکھی ہیں۔ عدالت نے ٹھاکرے گروپ سے نظامِ قانون بنائے رکھنے کو کہا ہے۔ ساتھ ہی پولیس کو ریلی کے دوران ویڈیو ریکارڈنگ کرنے کا بھی حکم دیا ہے۔ عدالت نے کہا کہ اگر ریلی میں کچھ غلط ہوتا ہے تو بعد میں پروگرام کو جاری رکھنے کی اجازت نہیں دی جائے گی۔

بہر حال، بامبے ہائی کورٹ کے فیصلے کے بعد جہاں ٹھاکرے گروپ میں خوشی کی لہر ہے اور اس کےلیڈران اسے اپنی بڑی جیت قرار دے رہے ہیں، وہیں ایکناتھ شندے گروپ کو بڑا جھٹکا لگا ہے۔ مہاراشٹر میں برسراقتدار ہونے کے باوجود ریلی کے لیے اجازت نہیں ملنا وزیر اعلیٰ شندے کے لیے بڑا جھٹکا تصور کیا جا رہا ہے۔

ایک نظر اس پر بھی

نوٹ بندی کی آئینی درستگی کو چیلنج کرنے والی 59 عرضیوں پر سپریم کورٹ میں 12 اکتوبر کو ہوگی سماعت

مودی حکومت کی جانب سے 2016 میں نافذ کی گئی نوٹ بندی کے آئینی جواز کے خلاف دائر کی گئی عرضیوں پر سپریم کورٹ میں پانچ ججوں کی آئینی بنچ میں 12 اکتوبر کو سماعت ہوگی۔ نوٹ بندی کے خلاف عرضیوں پر سپریم کورٹ نے سوال کیا ہے کہ اب اس معاملے میں کیا باقی ہے؟ کیا اس معاملے کی جانچ کرنے کی ضرورت ...

یوپی: لکھیم پور کھیری میں دلخراش سڑک حادثہ، بس اور ٹرک کے تصادم میں 8 افراد ہلاک، 25 سے زائد زخمی

 اتر پردیش کے لکھیم پور کھیری میں آج صبح ایک بڑا حادثہ پیش آیا۔ معلومات کے مطابق بس اور ٹرک کے درمیان تصادم میں 8 افراد جاں بحق، جب کہ 25 زخمی ہوئے ہیں۔ بتایا جا رہا ہے کہ لکھیم پور کھیری ضلع کے عیسی نگر تھانہ علاقے کی کھماریا پولیس چوکی کے نزدیک شاردا ندی کے پل پر درجنوں مسافروں ...

بی جے پی کے رکن پارلیمنٹ روی کشن کو لگا چونا! کاروباری پر عائد کیا 3.25 کروڑ کی ٹھگی کرنے کا الزام، پولیس میں درج کرائی شکایت

 بی جے پی کے رکن پارلیمنٹ اور اداکار روی کشن مبینہ طور پر 3.25 کروڑ روپے کی ٹھگی کا شکار ہو گئے ہیں، اس واقعہ کی اطلاع پولیس نے دی ہے۔ گورکھپور صدر سے رکن پارلیمنٹ روی کشن نے گورکھپور کینٹ تھانہ میں ایک بلڈر کے خلاف 3.25 کروڑ کی ٹھگی کا الزام عائد کرتے ہوئے مقدمہ درج کرایا ہے۔

مرکزی حکومت کے ملازمین کو ملی سوغات، مہنگائی بھتہ میں 4 فیصد کا اضافہ

مرکزی حکومت نے ایک کروڑ سے زیادہ سرکاری ملازمین اور پنشن حاصل کرنے والے افراد کو تہواروں کے موقع پر سوغات پیش کی ہے۔ وزیر اعظم نریندر مودی کی سربراہی میں منعقد ہونے والے کابینہ کے اجلاس میں مہنگائی بھتہ میں اضافہ کا فیصلہ کیا گیا ہے۔

نیشنل اسٹاک ایکسچینج کو-لوکیشن گھوٹالہ معاملہ میں چترا رام کرشن اور آنند سبرامنیم کو دہلی ہائی کورٹ سے ملی ضمانت

دہلی ہائی کورٹ نے نیشنل اسٹاک ایکسچینج (این ایس ای) کو-لوکیشن گھوٹالہ معاملے میں گرفتار سابق چیف ایگزیکٹیو افسر چترا رام کرشن اور سابق گروپ آپریٹنگ افسر آنند سبرامنیم کو ضمانت دے دی ہے۔ اس گھوٹالے کی سی بی آئی کے ذریعہ جانچ کی جا رہی ہے۔

’کانگریس ہمیشہ سے فرقہ پرستی کے خلاف رہی ہے‘، پی ایف آئی پر پابندی کے بعد جئے رام رمیش کا رد عمل

مرکزی حکومت کے ذریعہ پی ایف آئی پر پانچ سال کی پابندی عائد کیے جانے کے بعد کانگریس جنرل سکریٹری جئے رام رمیش کا رد عمل سامنے آیا ہے۔ انھوں نے کہا کہ کانگریس پارٹی ہمیشہ سے سبھی طرح کی فرقہ پرستی کے خلاف رہی ہے۔ انھوں نے کہا کہ ہم اکثریت یا اقلیت کی بنیاد پر مذہبی تشدد میں فرق ...