خلیجی ریاستوں میں یہودی ثقافت کے لیے دروازے کھل رہے ہیں

Source: S.O. News Service | Published on 10th March 2021, 7:45 PM | عالمی خبریں | خلیجی خبریں |

دبئی، 10مارچ (آئی این ایس انڈیا)عرب خلیجی ملک متحدہ عرب امارات اور بحرین کے ساتھ اسرائیل کے سفارتی تعلقات قائم ہونے کے بعد ان ریاستوں میں اب یہودی کمیونٹی زندگی کے مختلف شعبوں میں نظر آنا شروع ہو گئی ہے، جب کہ اس سے پہلے وہ خود کو ظاہر کرنے میں اجتناب کرتی تھی۔

خبر رساں ادارے ایسو سی ایٹڈ پریس کی ایک رپورٹ کے مطابق اب ان ریاستوں میں کوشر فوڈ ملنا شروع ہو گیا ہے۔ یہودی تہوار بھی کھلے عام منائے جارہے ہیں۔ یہودیوں کی شادی بیاہ اور طلاق کے فیصلوں کے لیے ان کی مذہبی عدالت نے بھی کام شروع کر دیا ہے۔

بحرین میں حال ہی میں یہودیوں کے ایک تہوار کی ورچوئل تقریب کی میزبانی کرنے والے ہہودی کمیونٹی کے ایک رہنما ابرہیم نورو نے اے پی سے بات کرتے ہوئے کہا ہے کہ حالات آہستہ آہستہ بہتر ہو رہے ہیں۔

نورو خلیجی ریاستوں میں یہودی کمیونٹی کی ایسوسی ایشن کے بانی ارکان میں شامل ہیں۔ اس تنظیم کے قیام کا مقصد خلیجی علاقے میں یہودی کمیونٹی کی قبولیت کے فروغ کے لیے کام کرنا ہے۔

نورو جو بحرین کی پارلیمنٹ کے ایک رکن بھی رہ چکے ہیں، کہتے ہیں کہ آپ کچھ عرصے کے بعد خلیجی ریاستوں میں یہودی یا کوشر ریستوران بھی دیکھیں گے۔

یہودیوں کے ایک مذہبی رہنما ایلی عبادی جو ایک سینئر ربائی بھی ہیں، کہتے ہیں کہ ان کےخیال میں اس علاقے میں یہودیوں کے لیے مزید دروازے کھلیں گے اور یہودی کمیونٹی اور ان کی ثقافت کی موجودگی کو قبول کیا جائے گا۔

یہودیوں کی ایسوسی ایشن کا کہنا ہے کہ وہ کویت، اومان، بحرین، سعودی عرب، قطر اور متحدہ عرب امارات میں موجود یہودیوں کی چھوٹی چھوٹی کمیونٹیز کو رہنمائی، مدد اور خدمات فراہم کرے گی، جس میں، مذہی تقریبات و تہوار کا انتظام و بندوبست اور ہوٹلوں، گراسری اسٹوروں اور ریستورانوں کے لیے کوشر کے سرٹیفیکٹ جاری کرنا بھی شامل ہے۔

خلیجی ریاستوں میں سب سے زیادہ یہودی کمیونٹی متحدہ عرب امارات میں ہے، جس کی تعداد ایک ہزار کے لگ بھگ ہے۔ یہ اس علاقے کی سب سے نئی کمیونٹی ہے۔ ربائی ایلی کہتے ہیں کہ اس کمیونٹی کے تقریباً 200 کے لگ بھگ ارکان متحرک ہیں۔ جب کہ باقی منظر عام پر آنے سے گریز کرتے ہیں۔

عرب ریاستوں میں اس وقت مصریوں، فلسطینیوں، لبنانیوں اور پاکستانیوں کی اکثریت ہے۔ ماضی میں اسرائیل کے ساتھ کشیدہ تعلقات کی وجہ سے یہاں یہودیوں کے لئے گنجائش کم رہی ہے۔ حتیٰ کہ یہاں سرکاری دستاویزات کے مذہب کے خانے میں یہودی مذہب کا اندراج ہی نہیں ہے۔

تاہم حالیہ مہینوں میں اسرائیل کو تسلیم کرنے، اس کے ساتھ سفارتی رابطوں کی بحالی اور عرب رہنماؤں کی سوچ میں تبدیلی کے باعث صورت حال رفتہ رفتہ یہودی کمیونٹی کے حق میں بہتر ہو رہی ہے۔

نیویارک کی ایک ٹی وی ڈائریکٹر جین کینڈیاٹ جو کئی سال دبئی میں گزار چکی ہیں، کہتی ہیں کہ جب میں دبئی میں تھی تو ہم اپنی مذہبی شناخت کو پوشیدہ رکھتے تھے۔ ہم اس بارے میں بہت حساس تھے کہ ہم ایک مسلم اکثریتی علاقے میں رہ رہے ہیں اور یہ کہ کیا دوسرے لوگ ہمیں قبول کرنے کے لیے تیار ہیں۔

وہ کہتی ہیں کہ اب حالات ماضی سے مختلف ہیں۔ اب ہم یہاں کسی قدر آزادی سے اپنی تقریبات منعقد کر سکتے ہیں، ان میں شریک ہو سکتے ہیں۔ اب یہاں بھی یہودی اپنے روایتی انداز میں زندگی گزار سکتے ہیں۔

تاہم ابھی حالات پوری طرح ساز گار نہیں ہوئے۔ کچھ پڑوسی ملکوں میں سوچ کی تبدیلی کی رفتار بہت سست ہے۔. سعودی عرب اور قطر پر ایک طویل عرصے تک نصابی کتب میں اینٹی سمیٹک، یا یہودیت مخالف مواد شامل کرنے کے لئے تنقید کی جاتی رہی۔

سیکیورٹی خدشات بھی بدستور موجود ہیں۔ حالیہ عرصے میں خلیج فارس میں اسرائیل کے ایک بحری جہاز پر حملہ ہوا تھا جس کا الزام اسرائیل نے ایران پر لگایا تھا۔ مگر ایران نے یہ الزام مسترد کر دیا۔

لیکن ان خدشات کے باوجود حالات میں تبدیلی آ رہی ہے اگرچہ اس کی رفتار سست ہے۔

ایک نظر اس پر بھی

اقوام متحدہ جنرل اسمبلی سے وزیراعظم مودی کا خطاب، دہشت گردی پوری انسانیت کیلئے خطرہ

وزیر اعظم مودی نے اقوام متحدہ جنرل اسمبلی سے خطاب کرتے ہوئے پاکستان اور چین کا نام لئے بغیر جم کر نشانہ سادھا۔ وزیر اعظم نے پاکستان کا نام لئے بغیر کہا کہ جو ملک دہشت گردی کو سیاسی آلے کے طور پر استعمال کررہے ہیں، انہیں یہ سمجھنا ہوگا کہ دہشت گردی ان کیلئے بھی اتنا ہی بڑا خطرہ ...

صنعتی ممالک پر ماحولیاتی تحفظ کی زیادہ ذمہ داری عائد ہوتی ہے: گوٹیرش

اقوام متحدہ کے سیکرٹری جنرل انتونیو گوٹیرش نے ایک مرتبہ پھر عالمی برادری پر زور دیا ہے کہ وہ ماحول کو بچانے کے لیے اپنا کردار ادا کریں۔ نیو یارک میں سربراہان حکومت اور مملکت کے ساتھ ملاقات کے دوران گوٹیرش نے کہا کہ کرہ ارض کے خلاف جنگ‘ ختم ہونی چاہیے اور ماحولیاتی تبدیلیوں کے ...

امریکہ نومبر سے غیر ملکی مسافروں کے لیے پابندیاں نرم کر رہا ہے

امریکہ نے پیر کے روز کہا ہے کہ نومبر کے اوائل سے ملک میں آنے والے غیر ملکی مسافروں کے لیے وہ اپنی کرونا وائرس کی پابندیوں میں نرمی کر دے گا۔18 ماہ قبل کرونا وائرس کی وبا کے آغاز کے بعد امریکہ نے بیرونی ملکوں سے آنے والے مسافروں پر بڑی حد تک پابندی لگا دی تھی۔

سہیل شاہین اقوام متحدہ میں افغانستان کی طالبان حکومت کے سفیر نامزد

  عالمی میڈیا سے ملنے والی خبروں کے مطابق افغانستان کے وزیر خارجہ مولوی امیر خان متقی نے اقوام متحدہ کے سکریٹری جنرل انٹونیو گوٹریس کوخط لکھتے ہوئے اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی سے خطاب کرنے دینے کا مطالبہ کیا اور ترجمان سہیل شاہین کو افغانستان کا سفیرنامزد کر دیا۔

بھٹکل مسلم اسوسی ایشن ریاض کے لئے عہدیداران کا انتخاب؛ عمار قاضیا صدر اور ذُھیب پیشمام جنرل سکریٹری منتخب

بھٹکل مسلم اسوسی ایشن ریاض (سعودی عربیہ )  کے  لئے  عمار قاضیا صدر اور ذُھیب پیشمام جنرل سکریٹری  کے عہدہ پر منتخب ہوگئے، جبکہ  عقبہ لنکا نائب صدر، ارشاد احمد شیخ  نائب سکریٹری، سید فہد لنکا محاسب و خازن اور  نصیف ائیکری  کو جماعت کے  ترجمان کے طور پر منتخب کیا گیا۔ عہدیداران ...

محفوظ عمرہ ماڈل کے نفاذ کے بعد 1 کروڑ افراد عمرہ ادا کر چکے ہیں : وزارت حج وعمرہ

سعودی وزارت حج و عمرہ کے اعلان کے مطابق محفوظ عمرہ ماڈل کے نفاذ اور عمرہ، نماز اور زیارت کی بتدریج واپسی کے بعد سے اب تک 1 کروڑ افراد کے لیے عمرے کی ادائیگی کو ممکن بنایا گیا۔ سال 1443 ہجری کے عمرہ سیزن کے آغاز کے ساتھ ہی مختلف ممالک کے لیے جاری عمرہ ویزوں کی تعداد 12 ہزار سے تجاوز کر ...

بھٹکل کمیونٹی جدہ کا سالانہ اجلاس؛ پروگرام میں "مرحوم زاہد رکن الدین ، ایک فرد ایک انجمن " کتاب کا بھی اجراء

بھٹکل مسلم کمیونٹی جدہ کا سالانہ اجلاس جمعرات مورخہ  26 اگست کو  جدہ کے گرین لینڈ  ہوٹل میں منعقد ہوا جس میں  جدہ جماعت سمیت بھٹکل مسلم خلیج کونسل کے سابق صدر مرحوم  سی اے زاہد رکن الدین صاحب کے  تعلق سے موصولہ تعزیتی قرار دادوں  اور تعزیتی خطوط پر مشتمل ایک کتاب "مرحوم زاہد ...