نئے اے آئی سی سی سربراہ کھرگے کے شاندار استقبال کی تیاری، کانگریس کو ترقی پسند اداروں کی تائید۔ پچھڑے طبقات کو متاثر کرنے کی کوشش جاری

Source: S.O. News Service | Published on 5th November 2022, 12:22 PM | ریاستی خبریں |

بنگلورو،5؍ نومبر(ایس او نیوز) بزرگ سیاستدان ملیکارجن کھرگے آل انڈیا کانگریس کمیٹی (اے آئی سی سی) صدر منتخب ہونے کے بعد پہلی بار 6نومبر کو کرناٹک آرہے ہیں۔ریاستی کانگریس یونٹ و دیگر اداروں کی جانب سے ان کا شاندار استقبال کرنے کے لئے تیاریاں شروع کردی گئی ہیں۔

پارٹی کے اندرونی ذرائع کے مطابق پارٹی اس تقریب کو ایک شاندار تقریب بنانا چاہتی ہے، تاکہ پچھڑے ہوئے طبقات میں ایک اچھا پیغام جائے اوران طبقات کو پارٹی سے قریب لایا جائے۔کھرگے کا تعلق ریاست کرناٹک سے ہے۔ وہ اے آئی سی سی صدر کے عہدہ کا جائزہ لینے کے بعد6نومبر کو پہلی بار کرناٹک آرہے ہیں۔انہیں تہنیت پیش کرنے کیلئے پارٹی کی ریاستی یونٹ بنگلور پیالیس گراؤنڈ میں شاندار تقریب منعقد کرنا چاہتی ہے۔

کے پی سی سی صدر ڈی کے شیوکمار نے کہا ہے کہ پارٹی اس تقریب کو میگا تقریب بنائے گی۔ اس تقریب میں پارٹی کے ہزارو ں ورکرس اور کھرگے کے طرفدار شرکت کریں گے۔اس پروگرام کیلئے ریاست بھر سے کئی ترقی پسند اداروں نے تائید کا تیقن دیا ہے۔کثیر تعداد میں لوگوں کو اکٹھا کرنے کا بھی وعدہ کیا ہے۔انہو ں نے بتایا کہ کسی بھی دیگر ریاست کا دورہ کرنے سے پہلے کرناٹک کے دورہ پر آنے کے لئے پارٹی کی ریاستی یونٹ نے کھرگے سے درخواست کی ہے۔کہا جارہا ہے کہ ریاست میں اسمبلی انتخابات سے قریب کھرگے کا اے آئی سی سی صدر منتخب ہونے سے ریاست کرناٹک کی سیاست میں کئی مثبت تبدیلیاں رونما ہوئی ہیں۔کھرگے پچھڑے طبقات کو پارٹی کی جانب راغب کرنے میں اہم کردار ادا کرسکتے ہیں۔ شمالی کرناٹک میں بھی وہ پسماندہ اور پچھڑے طبقات کو کانگریس کی جانب راغب کرنے میں اہم کردار ادا کرسکتے ہیں۔ایس سی اور ایس ٹی کے لئے ریزرویشن میں توسیع کروانے کا دعویٰ کانگریس کررہی ہے۔

سدارامیا کی قیادت والی کانگریس حکومت نے اس سلسلہ میں جسٹس ناگ موہن داس کی قیادت میں کمیٹی تشکیل دی تھی۔ اس کمیٹی کی سفارشات کو حکمران بی جے پی نے نافذ کرتے ہوئے نوٹی فکیشن جاری کیا۔ اس معاملے کی آڑ میں دوونوں پارٹیاں پسماندہ طبقات، دلت اور اقلیتوں کے بڑے ووٹ بینک کو متاثر کرنے کی کوشش کررہی ہیں۔کہا جارہا ہے کہ پچھلے انتخابات میں پچھڑے طبقات کے ووٹرس نے بی جے پی کی تائید کی تھی، لیکن آئندہ ہونے والے انتخابات میں یہ ووٹرس بی جے پی کی تائید نہیں کریں گے۔اسی وجہ سے بی جے پی ہر سطح پر پسماندہ طبقات کو لبھانے کی ہر ممکن کوشش کررہی ہے۔

ایک نظر اس پر بھی

کرناٹک میں بی جے پی حکومت کے دوران ہندوؤں کا سب سے زیادہ قتل ہوا، یہی ان کا اصلی چہرہ ہے: سابق وزیر اعلیٰ سدارامیا

کرناٹک کے سابق وزیر اعلیٰ اور کانگریس لیڈر ایس سدارامیا نے منگل کے روز ریاست میں برسراقتدار بی جے پی پر زوردار حملہ کیا۔ انھوں نے بی جے پی پر الزام عائد کرتے ہوئے کہا کہ ریاست میں بی جے پی حکومت میں سب سے زیادہ ہندوؤں کا قتل کیا گیا۔ انھوں نے کہا کہ ہمارے دور میں نہ صرف ہندو، ...

بی جے پی کے ریاستی صدر نلین کمار کٹیل کی بھٹکل آمد؛ آنے والے انتخابات کو لے کر کٹیل نے کہا؛ ساورکر اور ٹیپو نظریات کے درمیان ہوگا الیکشن

اس بار ریاستی انتخابات کانگریس اور بی جے پی کے بجائے ساورکر اور ٹیپو  نظریات کے درمیان ہوں گے۔ یہ بات  بی جے پی ریاستی یونٹ کے صدر نلین کمار کٹیل نے کہی۔ شرالی میں منعقدہ بی جے پی پروگرام میں شریک ہوتے ہوئے  کٹیل نے سوال کیا کہ آپ کو محب وطن ساورکرچاہئے  یا جنونی ٹیپو  چاہئے ...

 اڈانی کمپنی کے خُرد بُرد معاملہ پر کانگریس کا بنگلورو میں احتجاج

ریاست کرناٹک کے دارلحکومت بنگلورو کے میسور بینک سرکل پر کانگریس کی جانب سے اڈانی کمپنی سے جڑے معاملات پراحتتجاج کیاگیا جس میں پارٹی کے رہنما و کارکنان شریک تھے۔ احتجاج کے دوران کانگریس کے رہنماؤں نے کہا کہ راہل گاندھی نے پہلے ہی اس معاملہ سے متعلق پیشن گوئی کی تھی۔

منگلورو: نیشنل ایجوکیشن پالیسی 'ہندوتوا راشٹرا' بنانے کا ٹوُل کِٹ ہے؛ ماہر تعلیم ڈاکٹر نرنجنارادھیا 

کمیونسٹ پارٹی آف انڈیا کی آل انڈیا یوتھ فیڈریشن (اے آئی وائی ایف) جنوبی کینرا و اڈپی، سمدرشی ویدیکے منگلورو، کرناٹکا تھیولوجیکل ریسرچ انسٹی ٹیوٹ منگلورو کے اشتراک سے 'نیشنل ایجوکیشن پالیسی (این ای پی) اور اسکولی تعلیم' کے عنوان پر شہر میں منعقدہ  سیمینار میں اپنے خیالات کا ...

پتور: آپسی اختلافات بھول کر بی جے پی کو شکست دینے کے لئے متحد ہوجائیں - کانگریس پارٹی کارکنان سے لیڈروں کی اپیل 

کانگریس پارٹی لیڈران نے  پتور کے نیلیاڈی سے  ملناڈ اور ساحلی علاقے کے لئے اپنی 'پرجا دھونی یاترا' کا دوسرا مرحلہ شروع کرتے ہوئے اپنی کارکنان کو آواز دی کہ وہ آپسی اختلافات بھول کر بی جے پی کی  "بد عنوان، غیر فعال، غیر مخلص، غیر موثر اور عوام سے دور" حکومت کو ہٹانے کے لئے متحد ...