ریاستی حکومت کا استحکام خطرے میں نہیں:پرمیشور

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 28th August 2018, 10:39 PM | ریاستی خبریں |

بنگلورو،28؍اگست(ایس او نیوز) نائب وزیر اعلیٰ ڈاکٹر جی پرمیشور نے ریاستی حکومت کے استحکام کے متعلق قیاس آرائیوں کو مسترد کرتے ہوئے کہا ہے کہ حکومت مستحکم ہے، اور اس کے گر جانے کے متعلق جو بھی قیاس آرائی کی جارہی ہے وہ فضول ہے۔

اخباری نمائندوں سے بات چیت کرتے ہوئے انہوں نے کہاکہ بعض حلقوں میں کہاجارہاہے کہ یہ حکومت اگلے ماہ کی ابتدا ء میں گر جائے گی، لیکن وہ واضح کردینا چاہتے ہیں کہ اگلے ماہ ، اس کے بعد کے مہینے ، اور پھر کئی مہینوں تک یہ حکومت برقرار رہے گی۔

انہوں نے کہاکہ اے آئی سی سی جنرل سکریٹری انچارج برائے کرناٹک کے سی وینو گوپال یکم اور 2؍ ستمبر کو میٹنگ میں پچھلے تین ماہ کے دوران ریاستی حکومت خاص طور پر کانگریس کے وزراء کی کارکردگی کا جائزہ لیا جائے گا۔ انہوں نے کہاکہ پہلے ہی داخلی سطح پر کارکردگی کا جائزہ لینے کے بعد انہوں نے اعلیٰ کمان کو رپورٹ روانہ کردی ہے۔

انہوں نے کہاکہ وینو گوپال کی دوروزہ میٹنگ کے دوران لوک سبھا انتخابات کے لئے پارٹی کی تیاریوں کا جائزہ لیا جائے گا۔ صحافی گوری لنکیش کے قتل کے ملزمین کا ہندو بنیاد پرست تنظیم سناتھن سنستھا سے تعلق کے بارے میں کئے گئے سوال پر ڈاکٹر پرمیشور نے دبے الفاظ میں اس تنظیم کی حمایت کرتے ہوئے کہاکہ اس سلسلے میں اب تک پولیس کو کوئی پختہ ثبوت نہیں ملے ہیں۔

اگر پختہ ثبوت برآمد ہوئے تو اس پر پابندی کی سفارش کی جائے گی۔ ڈاکٹر پرمیشور نے بتایاکہ بلدی انتخابات کے بعد ریاست کی مخلوط حکومت کی رابطہ کمیٹی کا اجلاس منعقد ہوگا۔ جس میں مختلف امور زیر بحث آئیں گے۔ وزیر اعلیٰ ایچ ڈی کمار سوامی اور رابطہ کمیٹی کے چیرمین سدرامیا آپسی تبادلۂ خیال کے بعد میٹنگ کی تاریخ کا تعین کریں گے۔

ایک نظر اس پر بھی

مفرورمنصورخان کاایک اورویڈیو 24 گھنٹے میں ہندوستان واپسی کاوعدہ!

لوگوں کو کروڑوں روپئے کا دھوکہ دینے والی پونزی کمپنی آئی ایم اے کے بانی وایم ڈی محمد منصور خان کیا واقعی 24 گھنٹوں میں ہندوستان واپس لوٹ آئیں گے؟ جبکہ اس گھپلے کی جانچ کررہی ایس آئی ٹی نے یہ دعویٰ کیا ہے کہ منورخان کا پاسپورٹ انٹرپول کے ذریعہ کالعدم قرار دیا گیا ہے -