جرمنی چینی فوج کی امداد بند کرے، ایمنسٹی انٹرنیشنل کا مطالبہ

Source: S.O. News Service | Published on 19th November 2019, 8:14 PM | عالمی خبریں |

برلن،19/نومبر (آئی این ایس انڈیا) وفاقی جرمن فوج آئندہ برس چینی فوجیوں کے لیے ایک تربیتی پروگرام کا منصوبہ بنا رہی ہے۔ ہانگ کانگ میں جمہوریت نواز مظاہروں کے تناظر میں ایمنسٹی انٹرنیشنل نے مطالبہ کیا ہے کہ برلن حکومت بیجنگ کے خلاف سخت موقف اپنائے۔جرمن اخبار ’بلڈ ام زونٹاگ‘ نے اتوار کے روز جرمن وزارت دفاع کی دستاویزات کا حوالہ دیتے ہوئے بتایا تھا کہ وفاقی جرمن فوج کی جانب سے گیارہ چینی فوجیوں کو ’اعلیٰ تربیت‘ یا پھر ’فوجی انتظامی تربیت‘ دی جائے گی۔ اس کے علاوہ ایک چینی فوجی کو ’ذرائع ابلاغ اور تعلقات عامہ‘ کے شعبے میں بھی خصوصی تربیت دی جائیگی۔جرمن وزارت دفاع کے ایک ترجمان کے مطابق چینی فوجی عموماً جرمن آرمی کے تعلیمی پروگراموں میں شرکت کرتے ہیں۔ ان میں بین الاقوامی افسران کے لیے تربیتی پروگرام بھی شامل ہوتے ہیں، جن کا انعقاد مختلف یونیورسٹیوں اور فوجی اکیڈمیوں میں کیا جاتا ہے۔ وزارت دفاع کے ترجمان کے بقول ہمارا مقصد دیگر ممالک کے ساتھ اپنی جمہوری اقدار بانٹنا ہے۔ماحول پسندوں کی جرمن سیاسی جماعت گرین پارٹی کے سیاستدانوں اور انسانی حقوق کے سرگرم کارکنان نے بھی برلن حکومت سے چینی فوجیوں کی تربیت روک دینے کا مطالبہ کیا ہے۔ گرین پارٹی کے پارلیمانی حزب کے انسانی حقوق اور سکیورٹی امور کے ترجمان ٹوبیاس لِنڈنر اور مارگریٹے باؤزے کے مطابق چین میں انسانی حقوق کی صورت حال انتہائی ناقص ہے۔ ان کے بقول چینی صوبے سنکیانگ میں لاکھوں شہریوں کو مکمل نگرانی اور جبر کا نشانہ بنایا جا رہا ہے، جو اگر نسل کشی نہیں تو انسانیت کے خلاف مبینہ جرائم ضرور ہیں۔ایمنسٹی انٹرنیشنل سے منسلک اسلحے اور انسانی حقوق سے متعلقہ امور کے ماہر ماتھیاس جان نے کہا کہ:’جرمنی کے لیے چینی فوجیوں کی تربیت میں مدد کے تسلسل کا کوئی معقول جواز باقی نہیں رہا‘۔

ایک نظر اس پر بھی

خطرے میں اسپین، 95 فیصد آبادی ہو سکتی ہے کورونا کا شکار: تحقیق

کورونا وائرس یعنی کووڈ-19 کے حوالہ سے اسپین میں کی گئی اسٹڈی میں یہ بات سامنے آئی ہے کہ اسپین کی آبادی کا صرف 5فیصد ہی اینٹی باڈیز تیار کرسکا ہے، جس سے یہ بات ثابت ہوتی ہے کہ کورونا سے بچاؤ کے لیے ’ہرڈ امیونٹی‘ حاصل نہیں کی جاسکتی۔