بی جے پی رکن پارلیمان آننت کمار ہیگڈے پر برسے بارش سے متاثرہ عوام؛ جگہ جگہ احتجاج؛ ہیگڈے کی بولتی بند ؛ ہنگامے کی ریکارڈنگ کرنے پر موبائل چھیننے کی کوشش

Source: S.O. News Service | By I.G. Bhatkali | Published on 14th August 2019, 4:46 PM | ساحلی خبریں | ریاستی خبریں |

بھٹکل  14/اگست (ایس او نیوز) اُترکنڑا کے بی جے پی کی ٹکٹ  سے جیت درج کرنے والے  رکن پارلیمان اننت کمار ہیگڈے کو منڈگوڈ تعلقہ کے دو قصبوں میں برسات اور سیلاب سے متاثرہ کسانوں نے بری طرح آڑے ہاتھوں لیتے ہوئے ان کی بولتی  منگل کے روز   بند کردی۔

 بارش اور سیلاب سے فصلوں کو پہنچنے والے نقصان کا جائزہ لینے کے لئے اننت کمار ہیگڈے سرسی سے ہوتے ہوئے منڈگوڈ کے لئے روانہ ہوئے تھے۔ منڈگوڈ کے راستے میں موڈسالی کراس پر کسانوں نے خبر گیری کے لئے اتنے دنوں بعد پہنچنے اور کسانوں کے نقصانات کا جائزہ لینے کے بجائے ان کی درخواست کو نظر انداز کرنے پر اننت کمار ہیگڈے کے خلاف اپنی سخت برہمی ظاہر کی اوران کی باتیں سننے کے بجائے ان کا گھیراؤ کرتے ہوئے زبردست   ہنگامہ کھڑا کردیا۔

 رکن پارلیمان کا راستہ روکا گیا:    کہاجاتا ہے کہ کسانوں نے اننت کمار ہیگڈے سے درخواست کی تھی کہ چیگلّی ڈیم  ٹوٹنے کی وجہ سے ان کی فصلوں کو بہت ہی زیادہ نقصان پہنچا ہے۔ اس لئے رکن پارلیمان خودچل کر ان کھیتوں اور فصلوں کا معائنہ کریں۔اس کے جواب میں اننت کمار ہیگڈے نے بے پروائی کا مظاہرہ کرتے ہوئے کہا کہ مجھے ان مقامات کے دورے پر جاناہے،جہاں تم لوگوں سے زیادہ نقصان پہنچا ہے۔اس لئے اس وقت تمہارے ساتھ چل کر جائزہ لینا میرے لئے ممکن نہیں ہے۔اور یہ کہتے ہوئے اپنی کار پر سوار ہوگئے کہ جائزے کا کام افسران کرلیں گے۔ 

 کسانوں نے لیا آڑے ہاتھ :    رکن پارلیمان کے اس رویے پر کسان بھڑک گئے اور انہوں نے اننت کمار ہیگڈے کی کار کا راستہ روک لیا۔اور ہنگامہ کھڑا کرتے ہوئے اننت کمار سے پوچھا کہ جب الیکشن کا وقت ہوتا ہے تو تمہیں ہم سے ملنے اور ملاقاتیں کرکے ووٹ مانگنے کے لئے وقت رہتا ہے۔اب جب ہم کسان مصیبتوں کا شکارہو گئے ہیں تو ہماری خبر لینے کے لئے کوئی نہیں آتا۔اننت کمارے نے بھی پلٹ کر غصے سے پوچھا کہ”تو کیامیں تم کو اپنے ساتھ سوار ی پر بٹھا کر لے جاؤں؟“ اس پر کسانوں نے خوب شور شرابہ کرتے ہوئے ہنگامہ برپا کیا   اور اننت کمار ہیگڈے کو کسی طرح وہاں سے چپ چاپ نکلنا پڑا۔

 چیگلّی میں ہیگڈے کا گھیراؤ:     جب اننت کمار ہیگڈے چیگلّی دیہات میں پہنچے تو وہاں بھی مصیبت زدہ کسانوں نے ان کا گھیراؤ کیا۔یہاں پر کسانوں نے رکن پارلیمان پر سوالات کی بوچھار کردی۔اور پوچھا کہ ہم لوگوں کی فصلیں تباہ ہوگئی ہیں۔اور تم اتنے دنوں بعد خبر گیری کے لئے آئے ہو۔تم  انتخاب کے وقت تو گھر گھر پہنچ کرہم لوگوں سے ووٹ مانگتے ہو۔لیکن اب تم کو کسانوں کی یاد نہیں آتی ہے۔یہاں کی ہنگامہ آرائی اور شور شرابہ دیکھتے ہوئے اننت کمار ہیگڈے کی بولتی بند ہوگئی۔اور خود ہی تماشائی بن کر چپ چاپ کھڑے رہ گئے۔کسانوں کی برہمی دیکھتے ہوئے پولیس افسران اور بی جے پی کے لیڈران نے کسانوں کو سمجھانے اور ان کے جذبات کوٹھنڈا کرنے کی لگاتارکوشش کی۔لیکن اننت کمار نے اس ہنگامہ آرائی کو کوئی اہمیت نہیں دی اور کسانوں کے سوالات کو نظر انداز کرتے ہوئے وہاں سے نکل گئے۔

 دور سے ہی نقصان کا جائزہ لیا:    اننت کمار ہیگڈے نے ٹوٹے ہوئے چیگلّی ڈیم پر خود جاکر معائنہ کرنے کے بجائے دور سڑک پرکھڑے ہوکر کھیتوں کا معائنہ کیااور وہاں سے سنولّی ڈیم کی طرف جانے کی بات کہہ کر آگے نکل گئے۔

 منڈگوڈ جانے کے راستے میں کسانوں کی جانب سے مزید احتجاج اور گھیراؤ کا اندیشہ محسوس کرتے ہوئے رکن پارلیمان اننت کمار ہیگڈے نے اپنا طے شدہ راستہ بدل دیا اور چیگلّی سے سالگاؤں ہوتے ہوئے اندرونی راستے سے گزرکر منڈگوڈ پہنچ گئے۔

 بیلگام میں بھی احتجاج موبائل فون چھیننے کی کوشش:    اننت کمار ہیگڈے سیلاب زدہ علاقوں کا دورہ کرنے کے لئے جب بیلگاوی میں نیگین ہالاگاؤں کے ریلیف سینٹر میں پہنچے تو وہاں بھی مصیبت زدہ افراد ان سے سخت ناراض دکھائی دئے۔ وہاں بھی لوگوں نے یہی بات کہی کہ انہیں اور ان جیسے دیگر سیاسی لیڈران کو صرف انتخابات میں ووٹ مانگنے میں دلچسپی ہوتی ہے۔اور جب عوام مصیبتوں کا شکارہوتے ہیں تو ان کا دکھڑا سننے کے لئے ان لیڈران کے پاس وقت نہیں ہوتا۔ ایک مقامی صحافی نے موصوف کو  بتایا کہ  نیگین ہالا ڈیم میں شگاف کی وجہ سے سیلاب آیا تھا اور اسی کے نتیجے میں  پورا دیہات پانی میں ڈوب گیا ہے اور عوام کو بہت ہی زیادہ نقصان پہنچا ہے۔صحافی نے بتایا کہ 400 سے زیادہ مکانات کو نقصان پہنچا ہے۔اس لئے رکن پارلیمان پورے تعلقہ کو سیلاب زدہ علاقہ قرار دیں۔اور پانی میں ڈوبے ہوئے گاؤں کے لوگوں کے لئے کسی دوسری جگہ رہائش کا انتظام کردیں۔

 جب بحث تیز ہوگئی اور عوام کے جذبات مشتعل ہونے لگے تورکن پارلیمان نے اس ہنگامے کی ویڈیو ریکارڈنگ کے خلاف  اعتراض جتایا اور ایک نوجوان کی موبائل فون چھیننے کی کوشش کی، اس بات پر برہم عوام نے ہیگڈے کی اس حرکت پر مزید مشتعل ہوگئے۔ بتایا گیا ہے کہ  تکرار کا منظر ریکارڈ کرنے والوں کے موبائل فون اور کیمرے چھیننے کی کوشش جب ناکام ہوئی تو  اننت کمار ہیگڈے اور کِتّور کے رکن اسمبلی مہانتیش ڈوڈاگوڈا دونوں نے ویڈیو ریکارڈنگ بند نہ کرنے پر اعتراض کرتے ہوئے میٹنگ ادھوری چھوڑدی اورموقع پر سے نکل گئے۔

منڈگوڈ میں آننت کمار ہیگڈے پر کسان کس طرح بھڑک اُٹھے، اُس کی وڈیو ریکارڈنگ

 

ایک نظر اس پر بھی

بھٹکل: مرڈیشور میں راہ چلتی خاتون کو اغوا کرنے کی کوشش ہوگئی ناکام؛ علاقہ میں تشویش کی لہر

تعلقہ کے مرڈیشور میں ایک خاتون کو اغوا کرنے کی کوشش اُس وقت  ناکام ہوگئی جب اُس نے ہاتھ پکڑ کھینچتے وقت چلانا اور مدد کے لئے پکارنا شروع کردیا،  وارات  منگل کی شب قریب نو بجے مرڈیشور کے نیشنل کالونی میں پیش آئی۔واقعے کے بعد بعد نہ صرف مرڈیشور بلکہ بھٹکل میں بھی تشویش کی لہر ...

کیا شمالی کینرا سے شیورام ہیبار کے لئے وزارت کا قلمدان محفوظ رکھا گیا ہے؟

کرناٹکاکے وزیراعلیٰ  ایڈی یورپا نے دو دن پہلے اپنی کابینہ کی جو تشکیل کی ہے اس میں ریاست کے 13اضلاع کو اہمیت دیتے ہوئے وہاں کے نمائندوں کو وزارتی قلمدان سے نوازا گیا ہے۔اور بقیہ 17اضلاع کو ابھی کابینہ میں نمائندگی نہیں دی گئی ہے۔

ساگر مالا منصوبہ: انکولہ سے بیلے کیری تک ریلوے لائن بچھانے کے لئے خاموشی کے ساتھ کیاجارہا ہے سروے۔ سیکڑوں لوگوں کی زمینیں منصوبے کی زد میں آنے کا خدشہ 

انکولہ کونکن ریلوے اسٹیشن سے بیلے کیری بندرگاہ تک ’ساگر مالا‘ منصوبے کے تحت ریلوے رابطے کے لئے لائن بچھانے کا پلان بنایا گیا اور خاموشی کے ساتھ اس علاقے کا سروے کیا جارہا ہے۔

ماڈرن زندگی کا المیہ: انسانوں میں خودکشی کا بڑھتا ہوا رجحان۔ ضلع شمالی کینرا میں درج ہوئے ڈھائی سال میں 641معاملات!

جدید تہذیب اور مادی ترقی نے جہاں انسانوں کو بہت ساری سہولتیں اور آسانیاں فراہم کی ہیں، وہیں پر زندگی جینا بھی اتنا ہی مشکل کردیا ہے۔ جس کے نتیجے میں عام لوگوں اور خاص کرکے نوجوانوں میں خودکشی کا رجحان بڑھتا جارہا ہے۔

منگلورو پولیس نے ایک اور مشکوک کار کو پکڑا؛ پنجاب نمبر پلیٹ والی کار کے تعلق سے پولس کو شکوک و شبہات

دو دن دن پہلے لٹیروں اور جعلسازوں کی ایک ٹولی کے قبضے سے منگلورو پولیس نے ایسی کار ضبط کی تھی جس پر نیشنل کرائم انویسٹی گیشن بیوریو، گورنمنٹ آف انڈیا لکھا ہوا تھا۔اب مزید ایک مشکوک کار کو پولیس نے اپنے قبضے میں لیا ہے۔ جس پر بھی گورنمینٹ آف انڈیا لکھا ہوا ہے۔

ریاستی حکومت نے آئی ایم اے فراڈ کیس کی جانچ سی بی آئی کے حوالے کیا

ریاست کی سابقہ کانگریس جے ڈی ایس حکومت کے دور میں کی گئی مبینہ ٹیلی فون ٹیپنگ کی سی بی آئی جانچ کے ا حکامات صادر کرنے کے دودن بعد ہی آج ریاستی حکومت نے کروڑوں روپیوں کے آئی ایم اے فراڈ کیس کی جانچ سی بی آئی کے سپرد کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔

کیا شمالی کینرا سے شیورام ہیبار کے لئے وزارت کا قلمدان محفوظ رکھا گیا ہے؟

کرناٹکاکے وزیراعلیٰ  ایڈی یورپا نے دو دن پہلے اپنی کابینہ کی جو تشکیل کی ہے اس میں ریاست کے 13اضلاع کو اہمیت دیتے ہوئے وہاں کے نمائندوں کو وزارتی قلمدان سے نوازا گیا ہے۔اور بقیہ 17اضلاع کو ابھی کابینہ میں نمائندگی نہیں دی گئی ہے۔

بنگلورو: نشے میں دھت شخص نے فٹ پاتھ پر 7 لوگوں کو کچل دیا

شراب کے نشے میں دھت ایک شخص نے بہت تیز رفتار کار فٹ پاتھ پر چڑھا دی اور فٹ پاتھ پر چل رہے 7 افراد اس کار کی زد میں آ گئے۔ زخمیوں کو فوراً اسپتال پہنچایا گیا اور خبر لکھے جانے تک ان لوگوں کی حلات نازک بنی ہوئی ہے۔ یہ واقعہ بینگلورو کے ایچ ایس آر لے آؤٹ علاقے کا ہے۔