کسان تحریک: تجربہ کار کسان لیڈروں نے بدلی پالیسی، نوجوانوں کو بھیجا جا رہا گھر

Source: S.O. News Service | Published on 23rd February 2021, 1:48 PM | ملکی خبریں |

نئی دہلی،23؍فروری(ایس او نیوز؍ایجنسی) متنازعہ زرعی قوانین کے خلاف احتجاجی مظاہرہ میں نوجوانوں کا بھی بہت بڑا کردار رہا ہے۔ دہلی بارڈرس پر سیکورٹی انتظامات کو دیکھنا ہو یا لنگروں میں خدمت پیش کرنا، ان سبھی جگہوں پر نوجوانوں کے تجربے اور جوش کی ضرورت پڑی۔ لیکن نوجوانوں کا استعمال اب گاؤں میں زیادہ کیا جا رہا ہے۔ لہٰذا بارڈرس سے نوجوانوں کو گھر یا گاؤں بھیجنے کا سلسلہ تیز ہو رہا ہے۔ کچھ وقت تک دوسری جگہ رہنے کے بعد انھیں پھر بلائے جانے کی پالیسی پر کام کیا جا رہا ہے۔

موصولہ اطلاعات کے مطابق لگاتار بارڈر پر بیٹھے رہنے سے نوجوانوں کی ذہنی حالت پر اثر پڑ رہا تھا۔ مظاہرین کسانوں کی مانیں تو طویل مدت سے زیادہ کچھ نہ کرنے سے نوجوانوں میں غصہ پیدا ہو رہا تھا جس کا اثر ان کے چہروں بھی ظاہر ہو رہا تھا۔ وہ اپنے لیڈروں سے بار بار کہتے تھے کہ ہم کچھ کرتے کیوں نہیں، کچھ کرنا چاہیے۔ بارڈر پر بیٹھے کسان لیڈروں کے مطابق نوجوانوں کی توانائی کو صحیح جگہ استعمال کرنے کے لیے ہم نے انھیں بارڈر سے دوسری جگہوں پر بھیجا ہے تاکہ ان کی دماغی حالت معمول پر رہے۔

دہلی بارڈر پر بیٹھے کسان لیڈر جگتار سنگھ باجوا کا کہنا ہے کہ ’’نوجوان طویل مدت سے اس تحریک میں شامل ہیں۔ اب ہم کوشش کر رہے ہیں کہ نوجوانوں کا استعمال گاؤں میں کیا جائے۔ گاؤں میں ہو رہی مہاپنچایتوں میں نوجوانوں کا استعمال ہو، جن لوگوں کو تحریک کے بارے میں جانکاری نہیں ہے ان تک نوجوانوں کے ذریعہ باتیں پہنچائی جائیں،اور اچھی بات یہ ہے کہ مہاپنچایتوں کی تیاریوں میں نوجوان پیش پیش ہیں۔‘‘

جگتار سنگھ نے مزید بتایا کہ ’’نوجوانوں کی توانائی کو مثبت جگہ پر استعمال کیا جا رہا ہے۔ کئی بار ایسا ہوا ہے جب نوجوان اکٹھا ہو کر ہم سے کہتے تھے کہ ہم سوتے ہیں، کھانا کھاتے ہیں، تقریر سنتے ہیں، اور پھر سو جاتے ہیں۔ ہمیں کچھ کرنا بھی چاہیے۔ کئی بار آپس میں ہی نوجوان الجھ جاتے تھے جس کی وجہ سے ہم لوگوں نے انھیں گاؤں میں کام پر لگایا ہے۔ حالانکہ بارڈر پر نوجوانوں کی ہمیشہ ضرورت ہے۔‘‘

ایک نظر اس پر بھی

کورونا کا خاتمہ جولائی تک نہیں ہوگا: ایکسپرٹ

جس طرح کورونا کے نئے معاملوں کی تعداد میں کمی درج ہو رہی ہے اس سے یہ امید بنی ہے کہ ہندوستان میں کورونا کی دوسری لہر کا خاتمہ جلد ہو جائے گا لیکن وبائی بیماریوں کے ماہر شاہد جمیل کا کہنا ہے کہ بھلے ہی ابھی کچھ ریاستوں میں کورونا کے کیس کم ہوتے نظر آ رہے ہوں لیکن دوسری لہر کا ...

سادگی کے ساتھ عید منائیں اور چھوٹی جماعت کے ساتھ عید کی نماز ادا کریں ، سرکردہ مسلم رہنماوں کی مسلمانوں سے اپیل

آل انڈیا مسلم پرسنل لاء بورڈ کے صدر مولانا رابع حسنی ندوی ۔ جمعیت علماءہند کے صدر مولانا ارشد مدنی ۔ جماعت اسلامی ہند کے امیر سید سعادت اللہ حسینی سمیت دیگر سرکردہ علماء اور مسلم قائدین مسلمانوں نے اپیل کی ہے کہ وہ کرونا کے بڑھتے خطرات کے پیش نظر احتیاط کریں اور مختصر جماعت ...

لاک ڈاؤن پر ہو سختی سے عمل: اشوک گہلوت

راجستھان میں عالمی وبا کورونا کی دوسری لہر کی چین توڑنے کے لئے آج صبح 5بجے سے لے کر 24 مئی تک سخت لاک ڈاؤن نافذ ہوگیا ہے۔ اس مدت کے دوران، ہنگامی اور ضروری خدمات، میڈیکل، دودھ اور دیگر ضروری خدمات کے لئے رعایت رہے گی۔