اردغان کی معاہدے کی خلاف ورزی، ترک فوجیوں کی لیبیا آمد جاری

Source: S.O. News Service | By INS India | Published on 25th January 2020, 8:01 PM | عالمی خبریں |

انقرہ،25جنوری(آئی این ایس انڈیا)ترکی کے صدر رجب طیب ایردوآن کی طرف سے لیبیا میں عدم مداخلت سے متعلق طے پائے برلن معاہدے کی خلاف ورزیاں بدستور جاری ہیں۔ ترکی کی طرف سے لیبیا میں قومی وفاق حکومت کی مدد کے لیے مسلسل فوجی بھیجے جا رہے ہیں۔کل جمعہ کو ترک صدر نے ایک بیان میں کہا کہ لیبیا میں فائز السراج کی قیادت میں قائم قومی وفاق حکومت کی معاونت کے لیے ترک فوج کی تعیناتی جاری رہے گی۔ ان کا کہنا تھا کہ ترک فوجی افسران لیبیا میں قومی وفاق کی وفادار فورسز کو عسکری تربیت فراہم کررہے ہیں اور یہ سلسلہ جاری رہے گا۔

خیال رہے کہ حال ہی میں برلن میں ہونے والی امن کانفرنس میں یہ طے کیا گیا تھا کہ کوئی دوسرا ملک لیبیا میں عسکری مداخلت نہیں کرے گا۔ ترکی نے اس معاہدے کے آرٹیکل پانچ سے اتفاق کیا تھا جس میں قومی وفاق حکومت کے لیے کسی قسم کی فوجی کمک نہ بھیجنے کا مطالبہ کیا گیا تھا۔ایردوآن نے جرمن چانسلر نجیلا میرکل سے بات چیت کے بعد استنبول میں خطاب کرتے ہوئے کہا کہ جن ممالک نے اتوار کے روز لیبیا میں برلن سربراہی اجلاس میں شرکت کی وہ لیبیا کے نیشنل آرمی کے سربراہ خلیفہ حفتر کی مدد بند کریں۔روسی انفارمیشن ایجنسی نے ترک وزیر خارجہ کے حوالے سے نقل کیا ہے کہ جب تک لیبیا میں جنگ بندی برقرار ہے اس وقت تک ان کا ملک مزید فوجی مشیروں کو لیبیا بھیجنے کا ارادہ نہیں رکھتا۔خیال رہے کہ لیبیا میں اقوام متحدہ کے مندوب غسان سلامہ نے ایک ٹی وی چینل کو انٹرویو دیتے ہوئے اس بات کی تصدیق کی ہے کہ ترک صدر نے دوسروں کی طرح برلن کانفرنس کے بیان کے پانچویں آئٹم میں بھی وعدہ کیا تھا کہ وہ لیبیا میں مداخلت نہیں کریں گے اور نہ ہی فوج بھیجیں گے۔جب ان سے پوچھا گیا کہ آیا وہ لیبیا بھیجے گئے 2000 شامی جنگجوؤں کی واپسی کے لیے اقدامات کریں گے؟۔ توان کا کہنا تھا کہ 2000 شامی جنگجو بلکہ ہزاروں دوسرے غیرملکی جنگجوؤں کو لیبیا سے باہر نکالنا ہوگا۔قابل ذکر ہے کہ ترکی نے شام کے علاقوں سے لائے گئے دوہزار کے قریب جنگجو قومی وفاق حکومت کی مدد کے لیے لیبیا بھیجے۔

ایک نظر اس پر بھی

شہریت قوانین میں تبدیلی کے بعد شہریت ختم ہونے کے خطرے پر روک ضروری: اقوام متحدہ سربراہ

ہندوستان کے شہریت ترمیمی قانون (سی اے اے) اور مجوزہ قومی شہری رجسٹر (این آرسی) پر خدشات کے درمیان اقوام متحدہ سربراہ ایتونیو گتاریس نے کہا کہ جب کسی شہریت قانون میں تبدیلی ہوتی ہے تو کسی کی شہریت نہ جائے، اس کے لئے سب کچھ کرنا ضروری ہے-

فوری جنگ بندی ہی شام کو مکمل تباہی سے بچا سکتی ہے: اقوام متحدہ

جنگ اور خانہ جنگی کے نتیجے میں بدترین تباہی کے دہانے سے گزرتے شام کو اب صرف فوری جنگ بندی ہی دنیا کے نقشے سے مٹنے سے بچا سکتی ہے جہاں ابتک کوئی نو لاکھ لوگ بے گھر ہو چکے ہیں۔ ان خانما برباد لوگوں میں اکثریت خواتین و بچوں کی ہے، جن کی حالت غیر بتائی جاتی ہے۔

ہندوستان دورہ سے پہلے ہی ڈونالڈ ٹرمپ نے مودی حکومت کو دیا جھٹکا

امریکی صدر ڈونالڈ ٹرمپ 24 فروری کو بھارت   کے دو روزہ دورہ پر آرہے ہیں، ان کی آمد پر ایسی امیدیں لگائی جا رہی تھیں کہ ٹرمپ اس دورہ کے دوران ہندوستان کے ساتھ کچھ بڑے تجارتی معاہدے کریں گے، لیکن امریکی میڈیا سے گفتگو  کرتے ہوئے انھوں نے ایسی تمام  امیدوں پر پانی پھیر دیا ہے۔ ...