خواب وخیال میں بھی نہیں تھا کہ لوک سبھا انتخابات کے نتائج کانگریس کے حق میں اتنے مایوس کن ہوں گے:دنیش گنڈو راؤ

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 27th May 2019, 10:45 AM | ریاستی خبریں |

بنگلورو،27؍مئی (ایس او نیوز) لوک سبھا انتخابات میں کانگریس پارٹی کی شکست کی ذمہ داری میں اپنے سر لیتا ہوں۔ میرے خواب و خیال میں بھی نہیں تھا کہ ہم ریاست میں صرف ایک سیٹ پرکامیابی حاصل کریں گے۔ ایسے نتائج کاسان و گمان میں بھی احساس نہیں ہوا تھا۔ انتہائی مایوس نتائج پر رد عمل ظاہر کرتے ہوئے کے پی سی سی کے صدر دنیش گنڈو راؤ نے مذکورہ باتیں کہیں۔ بروز ہفتہ کو ئنس روڈ پر واقع کے پی سی سی دفتر میں اخباری کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ لوک سبھا انتخابات میں کانگریس پارٹی کی کراری شکست کی ذمہ داری بطور کے پی سی سی صدر مجھے اخلاقی طور پر لینا ہوگا۔ سیاسی میدان میں ہار جیت ہوتی رہتی ہے۔ جب ہمارا رخ شکست کی طرف ہو تو ہم کو پوری ہمت و ذمہ داری کے ساتھ سامنا کرنا ہوگا۔ انہوں نے مزید کہا کہ لوک سبھا انتخابات کے نتائج آنے کے بعد کئی مسائل سے متعلق بات چیت کی گئی ہے۔ اس الیکشن کا رزلٹ ہماری تشہیری طریقہ کار سمیت شکست کیلئے دیگر وجوہات ہیں۔ ہماری رپورٹ اے آئی سی سی کے صدر کو پہنچائیں گے۔ بعد ازاں راہل گاندھی کے فیصلہ کے مطابق آئندہ اقدام کریں گے۔ چندہ ماہ قبل ہوئے ضمنی انتخابات میں بلاری لوک سبھا حلقہ،رام نگر اورجمکھنڈی اسمبلی حلقوں میں کانگریس کی جیت ہوئی تھی۔ لیکن لوک سبھا انتخابات میں نتائج مختلف ہوگئے۔ گزشتہ 5برسوں کے دوران کارنامہ انجام نہیں دیا۔ عوام سے کئے گئے وعدے وفا نہیں ہوئے۔ معاسی و اقتصادی حالت میں سدھار،بے روز گار ی اور کسانوں کے مسائل سمیت دیگر بہت سارے مسائل حل کرنے میں مودی حکومت ناکام رہی ہے۔ اس کے باوجودعوام نے مودی کو ایک اور موقع دینے کافیصلہ کیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ لوک سبھا انتخابات کے نتائج کامنفی اثر مخلوط حکومت پر پڑنے والا نہیں ہے۔ وزیر اعلیٰ کمار سوامی اور کو آرڈی نیشن کمیٹی کے صدر سدارامیا دونوں نے کل ملاقات کی ہے۔ اورحکومت کومزید متاثر کن طور پر آگے چلانے کے سلسلہ میں بات چیت کی ہے۔ انہوں نے کہا کہ 29مئی کو کانگریس لجس لیٹر س پارٹی (سی ایل پی) اجلاس طلب کیا گیا ہے۔ اس میں کے پی سی سی کی کار گزار کمیٹی کے اراکین حصہ لیں گے۔ مخلوط حکومت کو کس طرح کام کرنا ہوگا۔ کس طرح کا پروگرام ترتیب دینا ہوگا اورپارٹی کی مضبوطی کیلئے بلاک اور ضلع سطح پر کیا کچھ کرنا ہے۔اس بارے میں تفصیلی طور پر تبادلہ خیال ہوگا۔ انہوں نے کہا کہ چند مسائل ایسے بھی ہوتے ہیں جو کھلے عام بیان نہیں کئے جاسکتے۔ میرے لئے اقتدار اہم نہیں۔ جب وزیر تھا پارٹی کی تنظیم کاری کیلئے وزارت سے استعفیٰ دیا تھا۔ انہوں نے کہا کہ کانگریس پارٹی کے لئے ملک بھر میں ایک بڑا چیلنج درپیش ہے۔ اس کا سامنا کرنے کیلئے ہم کو مزید مضبوطی، یکجہتی اور متحدہ طو رپر کام کرنے کی ضرورت ہے۔ کانگریس، جے ڈی ایس اتحاد کے ذریعہ انتخابات کا سامنا کرنے کے باوجود توقع کے مطابق نتائج نہیں آئے۔ یہ ہمارے بیداری کی گھنٹی ہے۔ ہمارے اندر موجود نقائص کو دور کرنا ہوگا۔ سدارامیا حکومت کی ریڑھ کی ہڈی بن کرر ہیں گے۔ اور کمار سوامی سے مزید قوت و توانائی کے ساتھ حکومت چلانے کی گنڈو راؤ نے امید ظاہر کی۔

ایک نظر اس پر بھی

بنگلورو تشدد : علما نے دلت ایم ایل اے کے گھر کو از سر نو تعمیر کرنے کی پیشکش کی

نگلورو کے تشدد زدہ علاقوں میں امن و اتحاد برقرار رکھنے کیلئے علما کرام نے ایک بڑا قدم اٹھایا ہے۔ کرناٹک کے امیر شریعت مولانا صغیر احمد رشادی کی قیادت میں علما کرام کے وفد نے آج شہر کے متاثرہ علاقے ڈی جے ہلی اور کاول بیسندرا کا دورہ کیا ۔ سب سے پہلے علما کرام نے ڈی جے ہلی پولیس ...

بنگلورو تشدد : 175 ملزمین گرفتار ، احتیاطی طور پر ان علاقوں میں حفاظتی انتظامات، 15 اگست تک دفعہ 144 نافذ

 11 اگست کی رات پیش آئے تشدد کے واقعات کے بعد شہر کے ڈی جے ہلی ، کے جی ہلی اور کاول بیسندرا علاقوں میں حالات پوری طرح قابو میں آچکے ہیں ۔ احتیاطی طور پر ان علاقوں میں حفاظتی انتظامات مزید پختہ کردئے گئے ہیں ۔

چکمنگلورو میں شنکراچاریہ کے مجسمہ پر ’میلاد کا جھنڈا‘ ملنے سے حالات کشیدہ، ملند نامی شخص نکلا قصوروار!

کرناٹک کی راجدھانی بنگلورو میں ہونے والے فرقہ وارانہ تشدد کی آگ ابھی ٹھنڈی بھی نہیں ہوئی کہ ریاست کے چکمنگلورو میں آدی شنکراچاریہ کے مجسمہ کی چھت پر عید میلاد النبی کا جھنڈا پائے جانے سے علاقہ میں کشیدگی پھیل گئی۔ یہ جھنڈا بارش کی وجہ سے بھیگا ہوا تھا اور اسے جمعرات کے روز ...

دبئی میں ایک سواری نے ایک شخص کو رونڈ ڈالا؛ مہلوک ایشیائی شخص کی شناخت ہنوز نہیں ہوپائی؛ پولس نے عوام سے کی تعاون کی اپیل

یہاں ایک سواری کی ٹکر میں ایک شخص ہلاک ہوگیا مگر اُس شخص کی شناخت ابھی تک معمہ بنی ہوئی ہے اور یہ کون ہے، کس ملک یا کس  شہر سے ہے کچھ پتہ نہیں چل پایا ہے۔ پولس کا کہنا ہے کہ یہ ایشیاء کے  کسی ملک سے تعلق رکھتا ہے۔

توہین آمیز فیس بک پوسٹ اور اس پر تشدد دونوں قابل مذمت

شان رسالتﷺ میں گستاخی کرتے ہوئے کئے گئے ایک فیس بک پوسٹ اور اس کے نتیجے میں شہر بنگلورو میں گزشتہ روز پیش آنے والے پر تشدد واقعات کی مذمت کے لئے چہار شنبہ کی صبح ممتاز علمائے کرام وقائدین کی زوم کانفرنس کے ذریعے ایک میٹنگ ہوئی