بھٹکل میں انتخابی مہم کے دوران آنند اسنوٹیکر نے لگائے اننت کمار ہیگڈے پر سنگین الزامات

Source: S.O. News Service | By I.G. Bhatkali | Published on 14th April 2019, 1:49 PM | ساحلی خبریں |

بھٹکل 14؍اپریل (ایس او نیوز)جنتادل اور کانگریس کے مشترکہ پارلیمانی امیدوار آنند اسنوٹیکر نے بھٹکل کے اطراف میں اپنی انتخابی مہم کے دوران موجودہ رکن پارلیمان اور مرکزی وزیر اننت کمار ہیگڈے پر سنگین الزامات لگاتے ہوئے کہا کہ ہندو دھرم کے ساتھ خود اننت کمار ہیگڈے کی وجہ سے ناانصافی ہورہی ہے۔اس تعلق سے ہندو دھرم کے ماننے کو چوکنّا ہوجانا چاہیے۔

سنیچر کے اسنوٹیکر نے بینگرے، مرڈیشور اور کنٹوانی علاقے میں اپنی انتخابی مہم کے دوران اسنوٹیکر نے کہا کہ سناتن دھرم میں موجود ذات پات کے نظام سے ہندوؤں کا نقصان ہورہا ہے۔ہندوؤں میں3تا4فیصد تبدیلئ مذہب کے جو واقعات ہورہے ہیں وہ ذات پات کے نظام کی وجہ سے ہی ہورہے ہیں۔ اننت کمار ہیگڈے کو صیغۂ واحد میں مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ اگر اس کے اندر ہمت ہے تو پھر اسے کاشی میں سنتوں کا اجلاس منعقد کرکے ہندودھرم سے ذات پات کے نظام کو ختم کرنا چاہیے۔اسنوٹیکر نے کہا کہ گزشتہ 25برسوں سے اننت کمار محض زبان درازیاں کرتا آیا ہے۔ اس نے ہندوؤں کے لئے کچھ بھی نہیں کیا۔ علاقے کی ترقی پر اس نے دھیان نہیں دیا۔ عوام اپنے مسائل لے کر اس کے پاس جاتے ہیں وہ کہتا ہے کہ میں سماجی خدمت کے لئے نہیں بلکہ سیاست کرنے کے لئے آیا ہوں۔اننت کمار دلت اور جین وغیرہ طبقات کے خلاف بدزبانی کرتا ہے۔ انتخابات کا موقع آتے ہی شیواجی کا نام لینا شروع کرتا ہے۔

اسنوٹیکر کا کہنا تھا کہ پچھڑے طبقات سے تعلق رکھنے والے نوجوانوں کو اننت کمار ہیگڈے ہندوتوا کا افیون کھلاکرفسادات میں استعمال کرتا ہے۔اوروہ خود اپنے چہرے پر ہندودھرم کے رکھشک کا نقاب چڑھائے پھرتا ہے۔جبکہ اس کا اصلی چہرا کچھ اور ہے۔پسماندہ ہندو نوجوانوں کو زعفرانی شال اور کُم کُم کے ٹیکے لگواکر جیل میں لے جانے والے راستے پر چلاتا ہے ۔اس لئے ایک مرتبہ اسے شکست دے کر مجھے عوام کی خدمت کرنے کا موقع دیا جائے، تو میں کسانوں، ماہی گیروں ، اتی کرم داروں اور غریبوں کی آواز بن کر کھڑا ہوجاؤں گا۔ 
اسنوٹیکرنے یہ بھی کہا کہ ڈاکٹر چترنجن کے نام سے انتخاب جیتنے والے اننت کمار ہیگڈے نے سابقہ اسمبلی الیکشن میں مقتول پریش میستا کے اہل خانہ کو انتخابی مقاصد کے لئے استعمال کیا۔ اب کی بار بی جے پی والے فوجیوں کے نام پر الیکشن جیتنے کی مہم چلارہے ہیں۔حالانکہ ماضی میں کانگریس کے زمانے میں ہمارے ملک نے دو جنگیں جیتی ہیں۔

اسنوٹیکر نے اپنی بات جاری رکھتے ہوئے کہا کہ ریاست میں کمار سوامی نے کسانوں کا فی کس ایک لاکھ روپیہ قرضہ معاف کیا ہے۔ جبکہ سدارامیا کی حکومت کے دوران فی کس پچاس ہزار روپے معاف کیے گئے تھے۔ بی جے پی کی حکومت نے کسانوں کے لئے کچھ بھی نہیں کیا ہے۔یہ بات رائے دہندگان کے علم لائی جانی چاہیے۔

بھٹکل اور اطراف کے علاقے میں اسنوٹیکر کی انتخابی مہم کی خاص بات یہ رہی کہ یہاں پر کانگریس اور جے ڈی ایس کے لیڈران اور کارکنان ایک ساتھ مہم چلاتے ہوئے نظر آئے۔ عوامی اجلاس کے موقع پر سابق اراکین اسمبلی منکال وئیدیا، جے ڈی نائک، آر این نائک کے علاوہ ضلع پنچایت صدر جئے شری موگیر، بھٹکل تعلقہ پنچایت صدر ایشور نائک، سورج نائک سونی،ونیتا نائک،گنپیا گوڈا، بھٹکل جے ڈی ایس صدر عنایت اللہ شاہ بندری، بھٹکل کانگریس صدر سنتوش نائک، ضلع پنچایت رکن البرٹ ڈی کوستا، پشپا نائک، سندھو بھاسکر نائک، ایل ایس نائک ، وینکیا بائیرامنے وغیر ہ موجود تھے۔

ایک نظر اس پر بھی

بھٹکل: نوجوان اپنی ذمہ داریوں کو سمجھیں اور وقت کا صحیح استعمال کریں : ڈاکٹر سریش نایک

دی نیوانگلش پی یو کالج میں منعقدہ پارلیمنٹ نامی ایک پروگرام کا افتتاح کرتے  ہوئے بھٹکل ایجوکیشن  کے صدر ڈاکٹر سریش نایک نے نوجوانوں سے اپیل کی کہ وہ اپنی ذمہ داریوں کا شعور رکھتے ہوئے اوقات کا صحیح استعمال کریں اور  ملک کی تعمیر اور اس کی ترقی میں  اپنا رول ادا کریں۔  انہوں نے ...

اترکنڑا ضلع کے سبھی پولس تھانوں میں ہر ماہ کی دوسری اتوار کو ’یوم دلت‘ منایاجائے : ڈی سی ہریش کمار

پسماندہ طبقات وذات والوں کے مسائل اور شکایات کو حل کرنے کے لئے ہر ماہ  کی دوسری اتوار کو سبھی پولس تھانوں میں ’’ یومِ دلت ‘‘ منانے کے لئے منصوبہ تشکیل دینے اترکنڑاڈی سی ڈاکٹر ہریش کمار نے پولس محکمہ کو  ہدایات جاری کی ہیں۔

کاسرگوڈ میں جانور لے جانے کے الزام میں دو لوگوں پر حملہ؛ بجرنگ دل کارکنوں کے خلاف معاملات درج کرنے پر مینگلور کے قریب وٹلا اور بنٹوال میں بسوں پر پتھراو

پڑوسی ریاست کیرالہ کے  کاسرگوڈ میں جانور لے جانے کے الزام میں دو لوگوں پر حملہ اور لوٹ مار کی وارداتوں کے بعد پولس نے جب  بجرنگ دل کارکنوں کے خلاف معاملات درج کئے  تو  مینگلور کے قریب  وٹلا اور بنٹوال  میں  بسوں پر پتھراو اور توڑ پھوڑ کی واردات پیش آئی ہے۔ پتھراو میں   نو ...