ریاست میں ڈینگو بخار سے عوام پریشان : جنوری سے ابھی تک 14757افراد ڈینگو میں مبتلا

Source: S.O. News Service | By Abu Aisha | Published on 16th November 2019, 5:57 PM | ساحلی خبریں | ریاستی خبریں |

بنگلورو:16؍نومبر(ایس اؤ نیوز) ریاست میں ڈینگو بخار کا ہنگامہ جاری ہے، محکمہ صحت اور خاندانی فلاح وبہبودی کے مطابق یکم جنوری سے ابھی تک 14757افراد ڈینگو میں مبتلا پائے گئے ہیں، جس سے پچھلے ایک دہے میں سب سے زیادہ ڈینگو معاملات امسال درج کئے گئے ہیں۔

گزشتہ برس اسی وقت 3357ڈینگو معاملات کا پتہ چلا تھا، بنگلورو کے بی بی ایم پی حدود میں ہی 698معاملات درج ہوئے تھے تو امسال ڈینگو کیسس میں چار گنا اضافہ ہواہے۔ بی بی ایم پی حدود میں امسال 8483افراد ڈینگو بخار سے جھوجھ رہے ہیں۔ سال 2014سے ڈینگو بخار میں مبتلا ہونےو الوں کی تعداد میں لگاتار اضافہ ہوتارہا، 2018میں کچھ حد تک اس پر روک لگائی گئی تھی لیکن امسال جنوری سے ہی ڈینگو عوام کے لئے پریشانی کا باعث بنی ہوئی ہے۔

گزشتہ ایک مہینےمیں ڈینگو بخار سے 5لوگوں کی موت واقع ہوئی ہے، 2476افراد بخار کا علاج کروائے ہیں، ہرسال بارش کم ہوتے ہی ڈینگو بخار بھی کم ہوجاتی تھی لیکن امسال وقفے وقفے سے بارش ہونے کےنتیجےمیں ڈینگو بخار سال بھر پریشان کرتی رہی ہے۔ اب یہ کنٹرول میں ہونے کی محکمہ کے افسران نے جانکاری دی ۔

ریاست میں سب سے زیادہ جن اضلاع میں ڈینگو بخار کاپتہ چلا ہے ان کی تفصیل کچھ اس طرح ہے۔ دکشن کنڑا -1425(4ہلاک )۔شیموگہ 545(1ہلاک )۔ ہاویری 358۔ چتردرگہ 278(1ہلاک )۔چامراج نگر 271۔ ڈاونگیرہ 266۔اُڈپی 249۔ رائچور 235۔کلبرگی 229۔کولار 212(ایک ہلاک )۔ یادگیری 196۔ چک مگلورو 190۔ دھارواڑ 188۔ ہاسن 189اورچک بلاپور میں 183 معاملات کا پتہ چلاہے۔ بنگلورو شہر میں دو افراد، رام نگر، وجئے پور، گدگ،منڈیا میں ایک ایک فرد ڈینگو بخار سے ہلاک ہوئے ہیں۔

ایک نظر اس پر بھی

بھٹکل کے عبدالباقی صدیقہ کرناٹکا لاء یونیورسٹی بنگلورو کبڈی ٹیم کے لئے منتخب : یونیورسٹی بلیو کا خطاب

بنگلورو کی شیشا دری پورم لاء کالج میں ایل ایل بی کے  تیسرے سال میں  زیر تعلیم  بھٹکل کے عبدالباقی ابن عبدالقادر جیلانی  نے کبڈی میں بہترین کھیل کا مظاہرہ پیش کرتے ہوئے صدیقہ کرناٹکا اسٹیٹ لاء یونیورسٹی(کے ایس ایل یو)  کی کبڈی ٹیم(مین) کے لئے منتخب  ہوتے ہوئے یونیورسٹی بلیو کا ...

مینگلور میں بھی بھٹکلی طالب علم کا شاندار پرفارمینس؛ تیسری بارلگاتار یونیورسٹی بلیو کا خطاب

 مینگلور کی ایس ڈی ایم لاء کالج میں زیر تعلیم  بھٹکل کا فٹ بال کھلاڑی محمد رائف گنگاولی نے اپنی کالج کی نمائندگی کرتے ہوئے پھر ایک باربہترین پرفارمینس پیش کرکے یونیورسٹی بلیو کا خطاب جیتنے میں کامیاب ہوگیا ہے جس کے ساتھ ہی وہ اب کرناٹکا اسٹیٹ لاء یونیورسٹی ہبلی کی نمائندگی ...

یلاپور ضمنی انتخاب میں بی جے پی کے شیورام ہیبار نے درج کی زبردست جیت

ضلع اُترکنڑا کے یلاپور منڈگوڈ اسمبلی حلقے سے ضمنی انتخاب میں بی جے پی کے امیدوار شیورام ہیبار نے 31,406ووٹوں کی اکثریت سے زبردست جیت درج کرتے ہوئے اپنے قریبی حریف کا نگریسی امیدوار بھیمنّا نائک کو شکست دے دی ہے۔

مینگلور کے قریب اپن انگڈی میں بیف سے بھرا کنٹینر ضبط۔، ڈرائیورگرفتار

یہاں سے قریب 55 کلو میٹر دور اپن انگڈی میں مصدقہ اطلاع کی بنیاد پر گاڑیوں کی چیکنگ کے دوران پولس نے ایک بیف سے بھرا کنٹینر ضبط کرلیا اور رضوان نامی ڈرائیور کو گرفتار کرلیا جس کے تعلق سے پولس کا کہنا ہے کہ یہ گوشت غیرقانونی طور پر لے جایا جارہا تھا۔

  مسلم متحدہ محاذ، جماعت اسلامی ہند اور کئی تنظیموں کے ایک نمائندہ وفدکا سابق وزیر اعظم ایچ ڈی دیوے گوڈا سے ملاقات اور شہریت ترمیمی بل   کی مخالفت اور دستور کے تحفظ میں تعاون کرنے کی اپیل

مسلم متحدہ محاذ، جما عت اسلامی ہند، سدبھاؤ نا منچ بورڈ آف اسلامک ایجوکیشن کرناٹک، ایف ڈی سی اے، ایس آئی او، اے پی سی آر  اور مومنٹ فار جسٹس جیسے ہم خیال تنظیموں کی قیادت میں مسلم نمائندوں کا ایک وفد 7 / دسمبر 2019  ء  بروز سنیچر، سابق وزیر اعظم شری ایچ ڈی دیوے گوڈا سے ملاقات کرتے ...

ہوناورمیں پریش میستا کی مشتبہ موت کوگزرگئے2سال۔ سی بی آئی کی تحقیقات کے باوجود نہیں کھل رہا ہے راز۔ اشتعال انگیزی کرنے والے ہیگڈے اور کرندلاجے کے منھ پر کیوں پڑا ہے تالا؟

اب سے دو سال قبل 6دسمبر کو ہوناور میں دو فریقوں کے درمیان معمولی بات پر شرو ع ہونے والا جھگڑا باقاعدہ فرقہ وارانہ فساد کا روپ اختیار کرگیا تھا جس کے بعد پریش میستا نامی ایک نوجوان کی لاش شنی مندر کے قریب واقع تالاب سے برآمد ہوئی تھی۔     اس مشکوک موت کو فرقہ وارانہ رنگ دے کر پورے ...

کاروار:ہائی وے توسیع کے لئے سرکاری زمین تحویل میں لینے پرمعاوضہ کی ادا ئیگی۔ ملک میں قانون وضع کرنے کے لئے ضلع شمالی کینرا بنا ماڈل

نیشنل ہائی وے66 توسیعی منصوبے کے لئے سرکاری زمینات کو تحویل میں لینے کے بعد خیر سگالی کے طورمعاوضہ ادا کرنے کی پہل ضلع شمالی کینرا میں ہوئی جس کی بنیاد پر نیشنل ہائی وے ایکٹ 1956میں ترمیم کرتے ہوئے ملک بھر میں تحویل اراضی پرمعاوضہ ادائیگی کا نیا قانون2017میں وضع کیا گیا ہے۔