کرناٹک کابینہ میں مسلمانوں کودی جائے نمائندگی : کرناٹک بی جے پی اقلیتی مورچہ

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 3rd August 2019, 11:23 AM | ریاستی خبریں |

بنگلورو،3؍اگست (ایس او نیوز؍ایجنسی) کرناٹک کابینہ میں مسلمانوں کو نمائندگی دینے کا مطالبہ کیاجارہاہے۔ ریاستی بی جے پی اقلیتی مورچہ نے عبدالعظیم کو ریاستی کابینہ میں شامل کرنے کا مطالبہ کیاہے۔ بنگلورو میں اقلیتی مورچہ کے نمائندوں نے کہاکہ عبدالعظیم گزشتہ کئی سالوں سے ریاستی اقلیتی مورچہ کے صدر ہیں۔ سابق پولیس افسر رہ چکے ہیں۔ لہذا پارٹی عبدالعظیم کی خدمات کا اعتراف کرتے ہوئے انہیں کابینہ وزیربنائے۔

اس سلسلے میں بی جے پی لیڈروں کے وفد نے وزیراعلی بی ایس یڈیورپا سے بھی ملاقات کی ہے۔ اقلیتی مورچہ کے نمائندوں نے کہا کہ یڈیورپا نے اُن کی مانگ کو پورا کرنے کا بھروسہ دیاہے۔ واضح رہےکہ کرناٹک میں بی جے پی حکومت کے قیام کے بعد کابینہ کی تشکیل کیلئے تیاریاں جاری ہیں۔یادررہے کہ جے ڈی ایس۔ کانگریس اتحاد کی حکومت گرنے کے بعد وزیراعلیٰ بی ایس یڈیورپا نے حلف لیاہے۔ اور جلدہی وہ اپنی کابینہ تشکیل دینے والے ہیں۔

ایک نظر اس پر بھی

  مسلم متحدہ محاذ، جماعت اسلامی ہند اور کئی تنظیموں کے ایک نمائندہ وفدکا سابق وزیر اعظم ایچ ڈی دیوے گوڈا سے ملاقات اور شہریت ترمیمی بل   کی مخالفت اور دستور کے تحفظ میں تعاون کرنے کی اپیل

مسلم متحدہ محاذ، جما عت اسلامی ہند، سدبھاؤ نا منچ بورڈ آف اسلامک ایجوکیشن کرناٹک، ایف ڈی سی اے، ایس آئی او، اے پی سی آر  اور مومنٹ فار جسٹس جیسے ہم خیال تنظیموں کی قیادت میں مسلم نمائندوں کا ایک وفد 7 / دسمبر 2019  ء  بروز سنیچر، سابق وزیر اعظم شری ایچ ڈی دیوے گوڈا سے ملاقات کرتے ...

ہوناورمیں پریش میستا کی مشتبہ موت کوگزرگئے2سال۔ سی بی آئی کی تحقیقات کے باوجود نہیں کھل رہا ہے راز۔ اشتعال انگیزی کرنے والے ہیگڈے اور کرندلاجے کے منھ پر کیوں پڑا ہے تالا؟

اب سے دو سال قبل 6دسمبر کو ہوناور میں دو فریقوں کے درمیان معمولی بات پر شرو ع ہونے والا جھگڑا باقاعدہ فرقہ وارانہ فساد کا روپ اختیار کرگیا تھا جس کے بعد پریش میستا نامی ایک نوجوان کی لاش شنی مندر کے قریب واقع تالاب سے برآمد ہوئی تھی۔     اس مشکوک موت کو فرقہ وارانہ رنگ دے کر پورے ...

کاروار:ہائی وے توسیع کے لئے سرکاری زمین تحویل میں لینے پرمعاوضہ کی ادا ئیگی۔ ملک میں قانون وضع کرنے کے لئے ضلع شمالی کینرا بنا ماڈل

نیشنل ہائی وے66 توسیعی منصوبے کے لئے سرکاری زمینات کو تحویل میں لینے کے بعد خیر سگالی کے طورمعاوضہ ادا کرنے کی پہل ضلع شمالی کینرا میں ہوئی جس کی بنیاد پر نیشنل ہائی وے ایکٹ 1956میں ترمیم کرتے ہوئے ملک بھر میں تحویل اراضی پرمعاوضہ ادائیگی کا نیا قانون2017میں وضع کیا گیا ہے۔