شاہین باغ مظاہرہ: خواتین کو ملی خوشخبری، مظاہرہ ہٹانے کی عرضی ہائی کورٹ سے خارج

Source: S.O. News Service | Published on 11th January 2020, 12:44 AM | ملکی خبریں | ان خبروں کو پڑھنا مت بھولئے |

نئی دہلی،10/جنوری(ایس او نیوز/ایجنسی) دہلی ہائی کورٹ نے جمعہ کے روز شہریت ترمیمی قانون (سی اے اے) کے خلاف احتجاج و مظاہرہ کر رہے مظاہرین، جن میں ایک بڑی تعداد خواتین کی شامل ہے، کو شاہین باغ سے کسی دوسرے مقام پر منتقل کرنے کی عرضی کو خارج کر دیا۔ علاوہ ازیں عرضی میں ڈی این ڈی فلائی وے سمیت تمام علاقہ میں ٹریفک کو صحیح طریقہ سے چلانے کے مقصاد سے لگائے گئے بیریکیڈس اور رکاوٹوں کو ہٹانے کا مطالبہ کیا تھا۔

اندرا گاندھی نیشنل اوپن یونیورسٹی (آئی جی این او یو) کے اسٹوڈنٹ تشار سچدیو کی طرف سے دائر کی گئی عرضی کو چیف جسٹس ڈی این پٹیل اور جسٹس ہری شنکر کی سربراہی والی بنچ نے خارج کر دیا۔

عرضی میں کہا گیا تھا، ’’لاکھوں لوگوں کو پریشانی کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے اور یہ صورت حال لوگوں کے لئے ایمرجنسی کے مترادف ہے۔ مظاہرین نے سڑکوں کے دونوں اطراف میں بیریکیڈس اور بھاری پتھر لگا دئے ہیں اور پیدل چلنے والوں کو بھی آنے جانے نہیں دیا جا رہا ہے۔ مظاہرین نے ڈیوائڈرس اور سرکاری خزانے سمیت دیگر عوامی املاک کو بھی نقصان پہنچایا ہے۔‘‘

واضح رہے کہ شہریت ترمیمی قانون (سی اے اے) اور قومی شہریت رجسٹر (این آر سی) کے خلاف تقریباً 25 دونوں سے دہلی کے شاہین باغ میں دھرنا جاری ہے اور اس میں بڑی تعداد میں خواتین شرکت کر رہی ہیں جوکہ سردی اور بارش کے باوجود اپنے ارادوں پر ڈٹ گئی ہیں۔ خاص بات یہ ہے کہ یہ دھرنا 24 گھنٹوں جاری رہتا ہے اور خواتین یہاں باری باری سے حاضری لگا رہی ہیں۔ اس دھرنے میں بچے اور بزرگ بھی شامل ہیں۔

شاہین باغ کے احتجاج کو اب جامعہ کے طلبہ کی بھی حمایت حاصل ہو رہی ہے۔ جامعہ ملیہ اسلامیہ کے مظاہرین کا کہنا ہے کہ شاہین باغ کا مظاہرہ کمزور نہ پڑ جائے لہذا وہ روزانہ یہاں حاضری لگاتے ہیں۔

ایک نظر اس پر بھی

کورونا ہندوستان کو تباہ کرنے کے درپے، ریکارڈ 27 ہزار نئے کیسز درج، مزید 519 ہلاکتیں

  ہندوستان میں کورونا وائرس کے یومیہ کیسز بہت تیزی کے ساتھ بڑھ رہے ہیں اور ایسا محسوس ہو رہا ہے جیسے کورونا نے ہندوستان کو تباہ کرنے کا عزم کر لیا ہے۔ گزشتہ 24 گھنٹوں کے دوران 27،114 نئے کیسزرپورٹ ہوئے ہیں جو ایک دن میں متاثرہ افراد کی سب سے زیادہ تعداد ہے اور اسی عرصہ میں 519 افراد ...

ایمبولینس نے کورونا مریض سے 7 کلومیٹر کے لئے وصول کئے 8 ہزار روپئے، معاملہ درج

مہاراشٹر میں کورونا وائرس کے انفیکشن کی صورت حال مسلسل بگڑتی جا رہی ہے۔ مریضوں کی تعداد بڑھنے کے ساتھ اسپتالوں میں بیڈ بھی کم پڑنے لگے ہیں۔ کورونا وبا کے اس بحران کی گھڑی میں بھی کچھ لوگ مریضوں کو لوٹنے سے باز نہیں آ رہے ہیں۔

اُڈپی میں کووڈ۔19 جانچ سنٹر قائم ، روزانہ 300 نمونوں کی جانچ ممکن

ساحلی کرناٹک کے اُڈپی شہر میں 45 لاکھ کی لاگت سے ہائی ٹیک مکمل ایئر کنڈیشنڈ کووڈ۔19 جانچ سنٹر قائم کردیا گیا ہے۔ اس لیب کیلئے ایک  مائکرو بیالوجسٹ اور 8 لیب ٹیکنیشن کا بھی تقرر کردیا گیا ہے۔ ان احباب نے بنگلورو کے نمہانس اسپتال میں تربیت حاصل کی ہے۔

گریجویٹ،پوسٹ گریجویٹ اورڈپلولہ کے سال آخرکے طلبہ کاامتحان ستمبرمیں ہوگا:اشوتھ نارائن

مہاماری کوروناوائرس کے پیش نظرطلبہ کومفادات کی حفاظت کی خاطرریاستی حکومت نے ایک اہم فیصلہ کیاہے۔ریاستی وزیربرائے اعلیٰ تعلیم ونائب وزیراعلیٰ ڈاکٹراشوتھ نارائن نے آج کہا کہ تعلیمی سال 2019-2020ء کے انجینئرنگ،گریجویٹ اورپوسٹ گریجویٹ سمیت ڈپلومہ میں زیرتعلیم انٹرمیڈیٹ سمسٹرکے ...

کیا بھٹکل میں کورونا کے معاملات قابو میں آگئے ؟ ضلع میں پھر آئے 33 پوزیٹیو

اللہ کا شکرہے کہ بھٹکل میں کورونا کے معاملات تھمتے نظر آرہے ہیں اور کورونا کے حالات قابو میں آنے کے امکانات نظر آرہے ہیں، یہی وجہ ہے کہ آج جمعہ کو بھٹکل میں کورونا کا کوئی پوزیٹیو معاملہ سامنے نہیں آیا، اسی طرح کل جمعرات بھی بھٹکل میں صرف ایک معاملہ کورونا پوزیٹیو کا ...

بھٹکل سے میڈیکل ضروریات کے تحت اُڈپی یا مینگلور جانے اور واپس آنے میں کوئی روک نہیں ؛ اسسٹنٹ کمشنر کا بیان

میڈیکل ضروریات کے تحت کوئی اگر بھٹکل سے کنداپور یا مینگلور جاتا ہے اور واپس بھٹکل آتا ہے تو اس کے لئے کسی قسم کی اجازت لینے کی ضرورت نہیں ہے،ایسے لوگ صبح جاکر شام کو  واپس لوٹ سکتے ہیں، اس بات کی اطلاع بھٹکل اسسٹنٹ کمشنر مسٹر بھرت نے دی۔