دہلی میں ای-گاڑی پالیسی کا اعلان، الیکٹرک گاڑیوں کی خریداری پر رعایت ملے گی

Source: S.O. News Service | Published on 8th August 2020, 11:13 AM | ملکی خبریں |

نئی دہلی،8؍اگست (ایس او نیوز؍ایجنسی)  دہلی کی اروند کیجریوال حکومت نے دارالحکومت کو آلودگی سے پاک کرنے کے منصوبے کے تحت جمعہ کے روز ای- گاڑی پالیسی کو نافذ کرنے کا اعلان کیا، جس میں مختلف زمروں کی الیکٹرک گاڑیاں خریدنے کے لئے 30 ہزار سے لے کر 1.5 لاکھ روپے تک رعایت دی جائے گی۔

اس پالیسی کا اعلان کرتے ہوئے وزیر اعلی نے کہا کہ حکومت الیکٹرک وہیکل پالیسی کے تحت اس طرح کی گاڑیاں خریدنے والوں کو مالی مدد فراہم کرے گی۔ دو پہیہ پر 30،000 روپے، کار پر 1.5 لاکھ روپے، آٹو رکشہ اور ای- رکشہ پر 30،000 روپے کی رعایت دی جائے گی۔ انہوں نے کہا کہ دہلی حکومت نے الیکٹرک وہیکل پالیسی کو نوٹیفائی کردیا ہے۔ پانچ سال بعد جب برقی گاڑیوں پر گفتگو ہوگي، تو دہلی کا نام دنیا میں سرفہرست ہوگا۔

وزیر اعلی نے میڈیا کو بتایا کہ اس پالیسی کے دو مقاصد ہیں: آلودگی کو کم کرنا اور معیشت کو تیزکرنا۔ دہلی کی اس پالیسی کا آئندہ پانچ برسوں میں دنیا بھر میں تذکرہ ہوگا۔ انہوں نے کہا کہ اس وقت یہ پالیسی تین سال کی ہے۔ تین سال بعد اس پر نظر ثانی کی جائے گی۔ اگر اس سے پہلے بھی ضرورت پیش آتی ہے تو اس پر غور وخوض کیا جائے گا۔ گزشتہ ڈھائی برسوں میں یہ پالیسی کافی غورو فکر کے بعد تیار کی گئی ہے۔

کیجریوال نے کہا کہ 2024 تک دہلی میں رجسٹرڈ تمام نئی گاڑیوں میں سے کم از کم 25 فیصد بجلی کی گاڑیاں ہونی چاہئیں۔ فی الحال یہ محض 0.2 فیصد ہے۔ انہوں نے کہا کہ بجلی کی گاڑیاں چارج کرنے کے لئے آئندہ ایک سال میں 200 اسٹیشن بنائے جائیں گے۔ الیکٹرک گاڑی کی خریداری پر روڈ ٹیکس اور چنگی نہیں ہوگی۔

ایک نظر اس پر بھی

اپوزیشن کے 8ممبران پارلیمنٹ کی معطلی مرکزی حکومت کا اختلاف رائے سے عدم راوداری کا نمونہ۔ ایس ڈی پی آئی

 سوشیل ڈیموکریٹک پارٹی آف انڈیا (ایس ڈی پی آئی) کے قومی صدر ایم کے فیضی نے اپنے جاری کردہ اخباری بیان میں زرعی بل منطور کئے جانے کی مخالفت کرنے پر اپوزیشن کے 8اراکین پارلیمنٹ کو ایک ہفتہ کیلئے پارلیمنٹ کے مانسون اجلاس میں شرکت سے معطل کرنے کے اقدام کو جمہوریت مخالف قرار دیتے ...

بینکنگ ریگولیشن بل پر پارلیمنٹ کی مہر

 کوآپریٹو بینکوں کی بحالی اور نگرانی کے لئے ریزرو بینک آف انڈیا (آر بی آئی) کو زیادہ اختیارات دینے والے بینکنگ ریگولیشنز (ترمیمی) بل 2020 کو منگل کو راجیہ سبھا میں صوتی ووٹوں سے منظور کر لیا گیا۔