تبلیغی جماعت: دہلی کی عدالت سے 122 ملائشیائی شہریوں کی درخواست ضمانت منظور

Source: S.O. News Service | Published on 8th July 2020, 10:10 PM | ملکی خبریں |

نئی دہلی،8؍جولائی(ایس و نیوز؍ایجنسی) دہلی کی ساکیت کورٹ تبلیغی جماعت سے وابستہ 122 ملائشیائی شہریوں کی درخواست ضمانت منظور کر لی ہے۔ ’لائیو لا ڈاٹ اِن‘ کی رپورٹ کے مطابق ان تمام 122 افراد پر تبلیغی جماعت کے اجتماع میں شامل ہو کر ویزا کی شرائط اور حکومت کے ان ضوابط کی خلاف ورزی کا الزام ہے، جو حکومت نے کووڈ-19 کے پیش نظر نافذ کیے تھے۔

چیف میٹروپالیٹن مجسٹریٹ (سی ایم ایم) گرموہنا کور نے ملائشیا کے تمام شہریوں کی درخواست ضمانت 10-10 ہزار کے مچلکہ پر منظور کرتے ہوئے، بات چیت کے ذریعے معاملہ کا تصفیہ کرنے کے مقصد سے ان کی ’پلی بارگیننگ‘ کی درخواست کو سی ایم ایم سدھارتھ ملک کے ہاں سماعت کے لئے بھیج دیا۔

ملائشیا کے ان تمام 122 شہریوں پر وبائی امراض قانون کی دفعہ 3، آفات انتظامی قانون کی دفعہ 51 و 58 اور تعزرات ہند کی دفعہ 188، 269، 270، 271 اور 120 بی کے تحت الزامات عائد کیے گئے تھے۔ نیز، تفتیش کے دوران غیر ملکیوں سے متعلق قانون کی دفعہ 14 بی اور تعزرات ہند کی دفعہ 304، 308 اور 336 کو بھی فرد میں شامل کر دیا گیا تھا۔

گزشتہ سماعت کے دوران عدالت نے فرد جرم کا مشاہدہ کرتے ہوئے کہا تھا کہ غیر ملکی شہریوں پر جو الزامات عائد کیے گئے ہیں ان کی بنا پر مقدمہ چلایا جا سکتا ہے۔ ویڈیو کانفرنسنگ کے ذریعے کی گئی سماعت کے دوران عدالت نے مشاہدہ کرتے ہوئے کہا تھا، ’’موجودہ ایف آئی آر کی بنا پر تفتیش کار کی جانب سے تاحال ملک بھر میں ملزمان کی شہریت کو مد نظر رکھتے ہوئے 48 فرد جرم اور 11 اضافی فرد جرم دائر کی جا چکی ہیں۔ نیز، دہلی ہائی کورٹ کے یکم جولائی 2020 کو کیے گئے فیصلے میں جو رہنما ہدایات جاری کی گئی ہیں ان کے مطابق ہی ملزمان کے خلاف سمن جاری کیے جانے چاہییں۔ یہ تمام غیر ملی شہری اپنی مرضی کے مقام پر اور اپنے خرچ پر قیام کر رہے ہیں۔

ایک نظر اس پر بھی

بے لگام میڈیا پر جمعیۃ کی عرضی: جب تک عدالت حکم نہیں دیتی حکومت خود سے کچھ نہیں کرتی: چیف جسٹس

مسلسل زہر افشانی کرکے اور جھوٹی خبریں چلاکر مسلمانوں کی شبیہ کوداغدار اور ہندوؤں اورمسلمانوں کے درمیان نفرت کی دیوارکھڑی کرنے کی دانستہ سازش کرنے والے ٹی وی چینلوں کے خلاف داخل کی گئی

دہلی فسادات: پروفیسر اپوروانند کی حمایت میں سامنے آئے ملک و بیرون ملک کے دانشوران

 ملک اور بیرون ملک کے ایک ہزار سے زائد معروف دانشوروں، نوکر شاہوں، صحافیوں، مصنفوں، ٹیچروں او اسٹوڈنٹس نے دہلی یونیورسٹی کے پروفیسر اپوروانند سے مشرقی دہلی میں فسادات کے معاملے میں پوچھ گچھ کئے جانے اور انکا موبائل فون ضبط کرنے کے واقعہ کی شدید مذمت کی ہے اور پولیس کے ذریعہ ...

کالعدم چینی کمپنیوں سے بی جے پی کے گہرے رشتے ہیں: کانگریس

 کانگریس نے الزام عائد کیا ہے کہ حکومت نے قومی سلامتی کے لیے خطرہ بتاتے ہوئے جن چینی کمپنیوں پر پابندی لگائی ہے ان میں سے کئی کے بھارتیہ جنتا پارٹی (بی جے پی) سے گہرے رشتے ہیں اور گزشتہ عام انتخابات میں ان کمپنیوں نے اس کے لیے تشہیری مہم کا کام کیا تھا۔

ریا چکرورتی کا سوشانت کے ساتھ جڑنے کا واحد مقصد ان کی جائیداد ہڑپنا تھا: بہار پولیس کا حلف نامہ

 بہار پولیس نے اداکار سوشانت سنگھ راجپوت کی مبینہ خودکشی کے معاملے میں سپریم کورٹ میں دائر حلف نامے میں کہا کہ کلیدی ملزمہ ریا چکرورتی اور اس کے اہل خانہ کا اداکار کے ساتھ جڑنے کا واحد مقصد اس کی جائیداد ہڑپنا تھا۔