مودی سرکار کی ہٹ دھرمی کے بعد پیگاسس پر فیصلہ محفوظ

Source: S.O. News Service | Published on 14th September 2021, 10:52 AM | ملکی خبریں |

نئی دہلی، 14؍ستمبر (ایس او نیوز؍ایجنسی)  پیگاسس جاسوسی معاملہ مرکزی حکومت کی ہٹ دھرمی اور سپریم کورٹ کے اصرار کے باوجود تفصیلی حلف نامہ داخل کرنے سے انکار کے بعد عدالت نے پیر کو اپنافیصلہ محفوظ کر لیا۔ چیف جسٹس این وی رامنا نے ۲؍ سے ۳؍ دن میں فیصلہ سنانے کا اعلان کیا ہے۔  انہوں  نے تفصیلی حلف نامہ داخل کرنے سے مرکز کے انکار پر ناراضگی کااظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ ’’ہمیں  تفصیلی حلف نامہ درکارہے اوراسی لئے آپ کو وقت دیاگیاتھا اور اب آپ یہ کہہ رہے ہیں۔‘‘ مودی حکومت کی جانب سے قومی سلامتی کے عذر پر کورٹ نے کہا کہ ’’ہمیں قومی سلامتی سے متعلق کچھ نہیںجاننا،مسئلہ یہ ہے کہ کچھ شہری  یہ الزام لگارہے ہیں کہ ان کے فون ٹیپ ہوئے ہیں۔‘‘

 اس کے بعد بھی  جب سالیسٹر جنرل  تشار مہتا نے  تفصیلی حلف نامہ داخل کرنے سے انکار کیا اور مودی حکومت کے موقف   پر اڑے رہے تو  چیف جسٹس نے ناراضگی  سے کہا کہ’’ہمیں تو کچھ کرنا ہی پڑےگا، کیا آپ کو اور کچھ کہناہے؟‘‘ مہتا کی جانب  سے نفی میں جواب پر کورٹ نے کہا کہ ’’مسٹر مہتا بات کو گھمانے سے مسئلہ حل نہیں ہوگا۔  ہم دیکھتے ہیں کہ کیا حکم جاری کیا جاسکتاہے۔‘‘  اس کے ساتھ ہی چیف جسٹس این وی رامنا، جسٹس سوریہ کانت اور جسٹس ہیما کوہلی  پر مشتمل بنچ نے اپنافیصلہ محفوظ کرنے کا اعلان کرتے ہوئے کہا کہ’’ہم اسے محفوظ کئے لیتے ہیں، ہم عبوری فیصلہ سنائیں گے۔اس میں ۲؍ سے ۳؍ دن لگ سکتے ہیں۔‘‘  چیف جسٹس نے حکومت کے رویے پر افسوس کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ ’’ہم سمجھ رہے تھے کہ حکومت جوابی حلف نامہ داخل کریگی جس کے بعد ہم اگلے قدم  کے بارے میں سوچیں گے مگر اب صرف عبوری فیصلہ سنانے کا معاملہ ہی رہ گیاہے۔‘‘ جوابی حلف نامہ داخل کرنے سے مرکز کے انکار کے باوجود کورٹ  نے اسے ایک اور موقع دیتے ہوئے کہا ہے کہ عدالت ۲؍ سے ۳؍دن میں اپنا عبوری   فیصلہ سنائے گی،اس بیچ اگر حکومت کا ’’ذہن بدل ‘‘ جائے تو سالیسٹر جنرل کورٹ کوبتاسکتے ہیں۔ 

  اس سے قبل سالیسٹرجنرل تشار مہتا نے   اضافی حلف نامہ داخل نہ کرنے کے مودی سرکار کے فیصلے سے آگاہ کرتے ہوئے کورٹ کو بتایا کہ ’’ہمارے پاس چھپانے کو کچھ نہیں ہے۔مگر کچھ ایسے سنگین معاملات ہیں جن کی وجہ سے کچھ چیزیں حلف نامہ کی شکل میں عوامی  سطح پر ظاہر نہیں کی جاسکتیں۔‘‘ 

 اس کے ساتھ ہی انہوں نے ماہرین کمیٹی کی تشکیل کی حکومت کی پیشکش کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ ’’ مگر شہریوں کی پرائیویسی کا احترام کرتے ہوئے حکومت اپنی طرف  سے پیشکش کررہی کہ اس معاملے کو دیکھتے ہیں اور پھر جو رپورٹ عدالت کے سامنے پیش ہوگی وہ قابل اعتبار ہوگی۔ (ماہرین کی) کمیٹی عدالت کو جوابدہ ہوگی۔‘‘

ایک نظر اس پر بھی

سول سروسز امتحان میں 27 مسلم امیدوار کامیاب، صدف چودھری کو ملک بھر میں 23 واں مقام حاصل

  ملک کے سب سے اہم قرار دیئے جانے والے یو پی ایس سی کے سول سروسز امتحان کے نتائج جاری کر دیئے گئے ہیں۔ اس مرتبہ مسلم طبقہ سے تعلق رکھنے والے کل 27 امیدواروں نے کامیابی حاصل کی ہے، جن میں سے 7 خواتین شامل ہیں۔

سول سروسز امتحان 2020 کے حتمی نتائج کا اعلان، بہار کے شبھم کمار کو اول مقام حاصل

  یونین پبلک سروس کمیشن (یو پی ایس سی) کی جانب سے جنوری 2021 میں منعقدہ سول سروسز امتحان 2020 کے تحریری حصے اور اگست-ستمبر 2021 میں منعقد پرسنالٹی ٹیسٹ (شخصیت) کے لیے انٹرویو کے نتائج کی بنیاد پر انڈین سول سروسز، انڈین فارن سروسز، انڈین پولیس سروسز اور سینٹرل سروسز میں تقرری کے لیے ...

راکیش ٹکیت کاامریکی صدرجوبائیڈن کو ٹیوٹ 11مہینے میں 700کسانوں کی موت، مانگی مدد

وزیر اعظم نریندر مودی اپنے امریکی دورے پر ہیں، جہاں انہوں نے امریکی نائب صدر کملا ہیرس سے ملاقات کی- اب پی ایم مودی صدر جو بائیڈن کے ساتھ اپنی پہلی ملاقات کرنے والے ہیں، جس میں کئی امور پر بات چیت ہونی ہے- لیکن اس دوران کسان رہنما اور بی کے یو کے ترجمان راکیش ٹکیت نے امریکی صدر جو ...

پسماند ہ طبقہ سے اتنی نفرت کیوں؟ ذات پرمبنی مردم شماری سے مرکزکے انکارپرلالویادوکاحملہ

بہارمیں ذات کی مردم شماری کے معاملے پر سیاست جاری ہے۔ آر جے ڈی کے سربراہ لالو پرساد یادو نے مرکزی حکومت کو نشانہ بنایا ہے کہ اس نے سپریم کورٹ میں حلف نامہ داخل کر کے 2021 میں ذات پرمبنی مردم شماری سے انکار کیا۔